گلگت بلتستان قانون ساز اسمبلی کے بیشتر ارکان اور علاقے کے سیاسی و سماجی رہنماؤں نے اصلاحاتی پیکج کا خیرمقدم کرتے ہوئے اسے اہم پیشرفت قرار دیا ہے۔جبکہ منتخب نمائندوں نے اپنے ملے جلے ردعمل میں کہا ہے کہ پیکج کے تحت بھی اختیارات وفاق کے پاس ہی ہیں، انہوں نے شکوہ کیا کہ ہم پر اعتبار نہیں کیاجاتا، چند دیگر رہنماؤں نے فیصلے کو جرات مندانہ قرار دیتے ہوئے امید ظاہر کی ہے کہ اس سے علاقے میں خوشحالی و مثبت تبدیلی آئیگی۔ مسلم لیگ (ق) کے رکن اسمبلی و سابق مشیر اطلاعات سکندر علی نے جنگ سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ علاقے کے عوام 62 سال سے بنیادی انسانی و آئینی حقوق سے محروم چلے آ رہے تھے موجودہ اصلاحاتی عمل ایک پیشرفت ہے۔ امید ہے وزیراعلیٰ کو اختیارات دیئے جائینگے اور ماضی کے عمل کو نہیں دہرایا جائے گا۔ پیپلزپارٹی گلگت بلتستان خواتین ونگ کی صوبائی صدر سعدیہ دانش نے گلگت بلتستان کو دیئے گئے اصلاحاتی پیکج کو گلگت بلتستان کی 62 سالہ محرومیوں کا خاتمہ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان پیپلزپارٹی نے پہلی مرتبہ ذوالفقار علی بھٹو کے دور حکومت میں اس خطے سے ایف سی آر اور راجگی نظام کا خاتمہ کیا اور علاقے کو جمہوری راہ پر گامزن کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہم صدر پاکستان آصف علی زرداری‘ وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی اور چیئرمین گلگت بلتستان قمرالزمان کائرہ کا شکریہ ادا کرتے ہیں ۔ مسلم لیگ (ن) گلگت بلتستان کے صدر و ممبر قانون ساز اسمبلی حافظ حفیظ الرحمان نے کہا ہے کہ گلگت بلتستان کے عوام یہ سمجھنے سے قاصر ہیں کہ آخر ہم پر کیوں اعتبار نہیں کیا جاتا۔ وزیر امور کشمیر کو گورنر بنانا پیکج کو تباہ کرنے کے مترادف ہے۔ اختیارات ایک بار پھر وفاق کے پاس رکھے گئے ہیں۔ پی پی پی ضلع گلگت کے صدر و سابق ممبر قانون ساز کونسل محمد موسیٰ نے شمالی علاقہ جات کے نام کی تبدیلی اور علاقے کو صوبائی درجہ دینے کے حکومتی اعلان کو ایک جرات مندانہ اور انقلابی قدم قرار دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ شہید ذوالفقار علی بھٹو اور بعدازاں محترمہ بے نظیر بھٹو شہید سے لے کر اب تک پیپلزپارٹی کی ہر حکومت نے انقلابی اقدامات اور تاریخ ساز عوامی فیصلوں کے ذریعے ان علاقوں کے عوام کے دل جیت لئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اصلاحات کے پیکج کا اعلان کر کے صدر آصف علی زرداری‘ وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی اور پیپلزپارٹی کی حکومت نے گلگت بلتستان کے عوام کے ساتھ کئے گئے اپنے وعدے کو پورا کر دیا ہے۔ ممبر قانون ساز اسمبلی عمران ندیم نے کہا کہ مقامی اچھے سیاستدان یا ریٹائرڈ بیوروکریٹ کو گورنر تعینات کیا جائے اور وزیراعلیٰ کو بااختیار بنا کر بہتر نتائج حاصل کر سکتے ہیں۔ ڈپٹی سپیکر قانون ساز اسمبلی نے کہا کہ حکومت کی جانب سے اسمبلی کو مالی اختیارات دینے اور آزاد الیکشن کمیشن کے قیام کے فیصلے سمیت پورا پیکج ماضی سے بہت بہتر ہے۔ ممبر قانون ساز اسمبلی حاجی فدا محمد ناشاد نے کہا کہ یہ اچھی پیشرفت ہے۔ڈاکٹر مبشر حسن نے کہا کہ ہمارے آباؤ اجداد نے پاکستان میں شمولیت کے لئے قربانیاں دی ہیں اور ہمارے تمام تر مسائل اور محرومیوں کا حل قومی اسمبلی اور سینیٹ میں باقاعدہ نمائندگی اور آئین پاکستان کا حصہ بتاتے ہیں۔  

موضوعات مرتبط: اخبار بلتستان

تاريخ : Sun 30 Aug 2009 | 12 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |
"علی شیر حیدری " رهبر مركزی گروهك تروریستی وهابی موسوم به "سپاه صحابه " همراه با "امتیاز پهلپوتو " دستیار اصلی وی در شهر "خیر پور " در ایالت سند این كشور به هلاكت رسید.
بر اساس این گزارش، "پیر محمد شاه " رئیس پلیس شهر خیر پور ضمن تایید هلاكت وی در گفتگو با خبر نگاران اعلام كرد كه رهبر سازمان منحله سپاه صحابه كه امروز به عنوان سازمان منحله " ملت اسلامیه " معروف است، از دهكده "دوست محمد ابرو " به شهرستان خود "پیر جو گوته " بر می‌گشت كه در حال حركت مورد حمله افراد ناشناس قرار گرفت و به همراه یكی از دستیاران اصلی خود به هلاكت رسید و شش تن دیگر نیز زخمی شدند.
رئیس پلیس افزود: در نتیجه تیراندازی محافظان وی یكی از حمله كنندگان نیز كشته شد كه تاكنون جسد وی شناخته نشده است.
پلیس در اسرع وقت به محل حادثه رسید و منطقه را در محاصره خود قرار داد و همه كشته ها و مجروحان را به بیمارستان منتقل و تحقیقات را شروع كرد اما تاكنون هیچ كس دستگیر نشده است. یكی از تحلیلگران پاكستانی در گفت‌وگو با خبرنگار فارس تأكید كرد كه امروزه اختلاف میان "محمد احمد لدهیانوی " رئیس سازمان منحله "ملت اسلامیه " و "علی شیرحیدری " به اوج رسیده بود و بسیاری از هوداران سپاه صحابه و ملت اسلامیه می خواستند "علی شیر حیدری " را جایگزین " محمد احمد لدهیانوی " كنند.

تاريخ : Mon 17 Aug 2009 | 11 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |
"احمد جاويد" سردبير روزنامه اردو زبان "هندوستان اکسپرس" روز دوشنبه در مصاحبه اختصاصي به خبرنگار ايرنا گفت: رهبراني همچون احمدي نژاد و ياران نزديک وي از طبقه متوسط و حتي عادي مردم و به ويژه از ميان گروه جامعه زحمتکشان و کارگران به حکومت رسيده اند.
وي معتقد است: نسل جديد رهبري ايران، نتيجه مثبت انقلاب اسلامي است که در سال 1979 ميلادي به رهبري امام خميني (ره) صورت گرفت. اين حکومت ثمره آن انقلابي است که يک نظام اسلامي را پايه گذاري و به اجرا در آورد.
اين روزنامه نگار هندي که تحولات سياسي جمهوري اسلامي ايران را از نزديک دنبال مي کند و تاکنون مقاله هاي زيادي در ارتباط با مسائل ايران به چاپ رسانده، در ادامه اين مصاحبه اظهار داشت: انقلاب اسلامي ايران باعث شد که مردم پايين جامعه در بخش فراگيري علم و دانش حضوري موفق داشته باشند و براي مساوات و برابري در جامعه صداي خود رااز طريق راي خود بلند کنند و اين دگرگوني را گروه هاي وابسته به طبقه بالاي جامعه جمهوري اسلامي ايران بر نمي تابند.
جاويد گفت: تقابل سياسي که اکنون در جمهوري اسلامي ايران جريان دارد، مبتني بر انديشه هاي عقلاني نيست بلکه از نوع برخوردهاي ناشي از قدرت طلبي و تسلط است که البته به نظر مي رسد، ريشه هاي اين برخورد و تضاد خيلي عميق است در حالي که اين تقابل ها و تضادها ،عادي به نظر نمي رسد.
اين مقاله نويس هندي افزود: در تاريخ 30 ساله جمهوري اسلامي ايران، احمدي نژاد براي اولين بار براي کشاورزان، صاحبان بنگاه هاي کوچک و نيز معلمان تسهيلات گسترده رفاهي و مالي و بانکي فراهم کرد و با اعطاي وام آسان وبا اقساط بلند مدت و کم بهره ، زمينه تحصيل فرزندان گروه عقب مانده جامعه را مهيا ساخت.
وي اضافه کرد: از سوي ديگر سياست هاي سرسختانه احمدي نژاد در قبال کشورهاي غربي به ويژه آمريکا به زيان سرمايه داران و بازرگانان بزرگ تمام شده و همين امر باعث گرديده که آنان در جبهه مخالفان رئيس جمهوري ايران قرار گيرند.
جاويد در ادامه مصاحبه گفت: احمدي نژاد براي اداره حکومت از نخبگان طبقه متوسط و پايين جامعه استفاده کرد که به رغم اهليت، صلاحيت و قابليت آنان گروه هاي منتسب به طبقه بالاي جامعه به مخالفت پرداختند چرا که آنان در حاشيه قرار گرفتند.
احمد جاويد در ارتباط با دخالت خارجي در امورد داخلي ايران گفت: شکي نيست که نيروهاي خارجي براي دخالت در امور داخلي ايران تلاش مي کنند در حالي که در اين مقطع از زمان نيز موفقيت هاي انقلاب اسلامي ايران ادامه مي يابد.
وي حوادث پس از انتخابات رياست جمهوري ايران را بحران سياسي و گسترده خواند و ابراز اميدواري کرد که اين بحران بزودي حل خواهد شد زيرا قواي سه گانه و ارتش و سپاه جمهوري اسلامي ايران که حاصل پيروزي انقلاب اسلامي است همچون نظام هاي سياسي آمريکا و هند، مستحکم ، نيرومند و ثابت است.

تاريخ : Mon 17 Aug 2009 | 11 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

به نقل از خبرگزاري داون پاكستان، بر اساس اين نظر سنجي كه توسط مركز تحقيقاتي «پيو» واشنگتن صورت گرفته، تنها پنج درصد از پاسخ دهندگان مسلمان بر اين باور بوده اند كه حملات انتحاري مي تواند در برخي موارد قابل توجيه باشد.
اين در حالي است كه در آخرين نظر سنجي انجام شده در سال 2004 ميلادي، 41 درصد از پاكستاني ها حملات انتحاري را قابل قبول دانستند.
طبق آمارهاي به دست آمده 87 درصد معتقدند اين نوع حملات به هيچ وجه قابل توجيه نيست.
نگراني هاي مردم پاكستان درمورد هندوستان نيز از ديگر سوالات مطرح شده در اين نظرسنجي بوده است. بيش از 88 درصد پاكستاني ها معتقد هستند كه درگيري بر سر مسئله كشمير مهمترين عامل اختلاف بين هند و پاكستان به شمار مي رود. نكته قابل توجه در نتايج به دست آمده از اين تحقيق اين است كه علي رغم اعتقاد مردم بر وجود تهديدات جدي از سوي طالبان (57 درصد) و القاعده (41 درصد)، مردم پاكستان بيشترين تهديد جدي را از سوي هندوستان (69 درصد) قلمداد مي كنند.
در اين راستا همچنين پاكستاني ها بر اين باورند كه آمريكا در مسئله هند و پاكستان با اختلاف 54 درصد به چهاردرصد ، جانب هندوستان را مي گيرد .
تحليل اطلاعات به دست آمده در اين نظرسنجي نوع ديدگاه هاي مردم پاكستان را در مورد القاعده و طالبان نيز بازگو كرده است:
طبق نتايج بدست آمده هر دو گروه ذكر شده در نظر مردم منفور هستند. در ميان ساير گروه هاي فعال و مهم ديگر در جامعه پاكستان، نقطه نظرات منفي درمورد طالبان و القاعده بسيار بيشتر از نظرات مثبت بوده است.
دومين نتيجه به دست آمده نشان داد كه حمايت از هر دو گروه حتي از سوي افرادي كه تنبيهات سخت و شديد تاييد شده توسط طالبان و القاعده را براي مجازات دزدان (قطع دست) يا فحشاگران (سنگسار) و يا اعدام افرادي كه اسلام را انكار مي كنند ؛ موجه مي دانستند، بسيار اندك است.
مقوله ديگري كه در بررسي نتايج ديده شد اين است كه طالبان و القاعده در مناطق مختلف در سطح پاكستان بدنام و منفور هستند. نمونه اي از آن، مناطق مرزي شمالغرب پاكستان است كه نيروهاي دولتي هم اكنون در حال جنگ با گروه هاي افراط گرا هستند.
در ارقام به دست آمده معلوم شده است كه منطقه «سيند» با 82 درصد بيشترين نظر منفي را نسبت به طالبان دارد، اين رقم در منطقه مرزي شمال غرب به 75 درصد و در «پنجاب» به 67 درصد مي رسد. بيش از نيمي از مردم منطقه «بلوچستان» از اظهارنظر درمورد طالبان و القاعده خودداري كردند.
از سوي ديگر نقطه نظرات مردم نسبت به طالبان به طور قابل توجهي با ميزان تهديدي كه مردم باور دارند اين گروه هاي افراط گرا بر كشور وارد مي كند، ارتباط داشته است. تحليل داده ها نشان داد كه مردمي كه فكر مي كردند گروه هاي افراط گرا مي توانند كنترل كشور را به دست گيرند، بيشترين نظرات منفي را نسبت به طالبان ابراز داشته اند.
در پايان اينكه تفكر عمومي پاكستاني ها در قبال مسئله تحصيل دختران و خشونت افراط گرايانه اعضاي طالبان مهمترين عامل وجود تنفر از طالبان به شمار مي رود؛ 87 درصد از مردم پاكستان معتقدند تحصيل بطور مساوي براي دختران و پسران اهميت دارد.



تاريخ : Mon 17 Aug 2009 | 11 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

در كراچي، به مناسبت مراسم بيست و يكمين سالروز شهادت رهبر شيعيان پاكستان وب سايت خصوصي اين شهيد به آدرس "www.arifhusaini.com " در پاكستان راه اندازي شد.
بر اساس اين گزارش، اولين وب سايت درباره زندگاني شهيد عارف حسين الحسيني به زبان اردو امروز در كراچي در جمع عاشقان ولايت و امامت با همت "عاشقان عارف حسين حسيني " گروهي از فارغ التحصيلان سازمان دانشجويان اماميه پاكستان راه اندازي شد و صدها نفر اين سايت را مشاهده و مورد تحسين و آفرين قرار دادند.
اين سايت كه زندگينامه و سيره و فرمايشات علامه عارف حسيني را در معرض ديد مخاطبان قرار داده، يكي از گام‌هاي مهم در جهت حفظ و گسترش افكار و آثار آن عارف خدا به شمار مي رود.
"نقوي " يكي از پيروان شهيد حسيني ضمن اشاره به ابعاد مختلف شخصيت اين شهيد گفت: علامه شهيد عالم با عمل، نماد زهد و تقوي، روحاني مبارز، عاشق ولايت و پيرو خط امام خميني (ره) بود.
وي ضمن قدرداني از زحمات آن شهيد بزرگوار خاطر نشان كرد: رهبر شهيد شيعيان پاكستان پرچمدار اخوت و وحدت اسلامي بود و هميشه از ملت غيور پاكستان سخن مي‌گفت و به تعبير زيباي امام راحل روحاني مبارز و فرزند راستين ايشان بود.
چنانچه امام راحل به مناسبت شهادت شكوهمند آن مرد بزرگ تاريخ تشيع در پاكستان گفت: "درد آشنايان جوامع اسلامي، هم آنان كه با محرومان و پا برهنگان ميثاق خون بسته‌اند بايد توجه كنند كه در آغاز راه مبارزه‌اند و براي شكستنن سدهاي استعمار و استثمار و رسيدن به اسلام ناب محمدي، راه طولاني در پيش دارند و براي مثال علامه عارف حسين حسيني، بشارتي بالاتر از اين نبوده كه از محراب عبادت حق, عروج خونين «ارجعي الي ربك» خويش را نظاره كند و جرعه وصل يار را از شهد شهادت بياشامد و شاهد وصول هزاران تشنه عدالت به سر چشمه نور گردد. "
امام راحل در پيامي فرمودند: اينجانب فرزند عزيزي را از دست داده‌ام، خداوند تعالي به همه ما توفيق تحمل مصائب و توان ادامه راه بر فروغ شهيدان را بيشتر از پيش، كرامت فرمايد و توطئه و مگر ستمگران را به خودشان برگرداند و ملت پر كرامت اسلام را در مسير جهاد و شهادت ، ثابت قدم نگهدارد.
در حاشيه افتتاح اين سايت، قرآن خواني و مجلس عزاي سيدالشهداء عليه السلام نيز برپا شد و حضار با شعارهاي گوناگون با روح شهيد حسيني تجديد بيعت كردند كه راهش را در هر حال ادامه خواهند داد.



تاريخ : Thu 6 Aug 2009 | 11 AM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

در بلتستان مؤسسه  "آسیای مرکزی" Central Asia ، با پشتیبانی آمریکا و اسرائیل توسط شخصی بنام « غلام محمد پاروی» فعالیت‏های فرهنگی، آموزشی می‏کند و در زمینه ایجاد تاسیسات و مدارس غیر انتفاعی فعال شده است. البته رابط اصلی بین آمریکا و غلام محمد پاروی (در شمال پاکستان) آقای دکتر گریک می‏باشد.
مادر دکتر گریک متولد آلمان و پدرش آمریکائی است و نیمی از زندگی‏اش را در اسرائیل گذرانده است. ورود دکتر گریک در ابتداء با استقبال سرد مردم شمال پاکستان مواجه شد؛ ولی آقای غلام محمد پاروی که دارای افکاری شیطانی است، زمینه‏هایی را برای فعالیت دکتر گریک فراهم ساخت.  علماء هم با ورود وی به مخالفت برخاستند ولی آقای پاروی بعلت ذهنیت یهودی که داشت، سیاستمدار و عالم معروف «سید عباس موسوی» را با هدیه بزرگ قانع ساخت و ایشان طی فتوایی فعالیت دکتر گریک را بدلیل وجود فقر در منطقه، جائز دانستند.
بعد از این ماجرا، دکتر گریک به منطقه شِگَر رفت تا فعالیتش را در آنجا آغاز کند، اما با مخالفت مردم روبرو شد. شخصی بنام اپو علی ایشان را به منزل راه داد و از ایشان پذیرایی گرمی بعمل آورد. وی به آقای دکتر گریک ۳ استکان چایی داد و بعد از آن دکتر گریک موفق به شروع فعالیت‏هایش شد. دکتر گریک پرسید فلسفه خوردن ۳ استکان چای چیست؟ اپو علی گفت: در فرهنگ ما اگر کسی یک استکان چای بدهد شما فکر کن که با هم دوست شده اید و اگر بار دیگر چای داد فکر کن که از افراد خانواده اش شده اید و بار سوم اگر این عمل تکرار شد فکر کن که با هم هم‏راز شده‏اید!
وی تا بحال در منطقه شگر ۳۵ مدرسه غیر انتفاعی احداث کرده. همچنین در شهر اسکردو هم آپارتمان سه طبقه‏ای برای دانشجویان ساخته شده که بعدا پنج طبقه خواهد شد.
دکتر گریک کتابی نوشته بنام "سه استکان چای" three cups of tea، که در حدود ۳۵۰.۰۰۰ نسخه آن را به فروش رسانده است. در آمریکا و انگلیس و بعبارتی در کشور‏های غربی مورد استقبال فراوانی قرار گرفته است و باید دانشجویان دانشگاه‏های غربی آن را بخوانند و امتحان بدهند.
ایشان چند روز پیش خواهان ترجمه فارسی این کتاب شده و هزینه ترجمه آن را تقبل کرده است.
خبری نیز در دست است مبنی بر این که، آقای غلام محمد پاروی یک مؤسسه بنامNGO ، تأسیس کرده و این مؤسسه با پشتیبانی مالی کشور آلمان فعالیت خواهد کرد.



تاريخ : Mon 20 Jul 2009 | 7 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |
پاکستان کےصدر آصف زرداري نے ايراني صدرڈاکٹر محمود احمدي نژاد کو ايران کا دوبارہ صدر منتخب ہونے پر مبارک باد پيش کي ہے پاکستان کے صدر آصف زرداري نے ايراني صدر احمدي نژاد کو ٹيلي فون کيا اور انہيں دوسري مرتبہ ايران کا صدر منتخب ہونے پر مبارکباد دي صدر زرداري نے اميد ظاہر کي کہ صدر احمدي نژاد کے دور صدارت ميں پاکستان اور ايران کے تعلقات مزيد مضبوط و مستحکم ہوں گے دونوں راہنماوں نے دوطرفہ تعلقات ، علاقائي اور بين الاقوامي امور پر بھي تبادلہ خيال کيا

تاريخ : Wed 8 Jul 2009 | 8 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

"ظفر بنگاش " اندیشمند پاکستانی در تحلیلی از انتخابات ایران، این انتخابات و جنجال پس از آن را فرصتی برای غربی‌ها دانست که علیه ایران جنجال بر پا کنند.
بنگاش نوشت: انتخابات ریاست‌جمهوری ایران که در 12 ژوئن [22 خرداد] برگزار شد و در آن محمود احمدی‌نژاد، با اختلافی بسیار از رقیب خود، "میر حسین موسوی "، پیشی گرفت
فرصتی برای اسلام‌ستیزان غربی فراهم ساخته است تا بار دیگر تیرهای زهرآلود حقد و کینه خود را علیه اسلام پرتاب کنند.
ظفر بنگاش افزود: رسانه‌ها و بوق‌های تبلیغاتی کشورهای غربی حتی پیش از آغاز رای‌گیری، در همه جا میرحسین موسوی را برنده این انتخابات اعلام کرده بودند ولی وقتی نتیجه انتخابات مطابق تصورات آنها نشد و آروزهایشان را محقق نکرد، بلافاصله به پخش شایعه "تقلب " اقدام کردند.
شواهد نشان می‌دهد که حتی میرحسین موسوی نیز در دام این تبلیغات دروغین و جنجالی غرب افتاد و به محض پایان ساعت اخذ رای، در یک کنفرانس مطبوعاتی، پیروزی خود را اعلام کرد. ولی وقتی هنوز هیچ رایی شمارش نشده است، او چگونه می‌تواند ادعای پیروزی کند؟
بنگاش نوشت: با شمارش آراء نخستین صندوق‌ها، همین که معلوم شد احمدی‌نژاد با اختلاف بسیار بالا از رقیبش جلو افتاده است، رسانه‌های غربی به سردمداری "بی.بی.سی. " القای تردید در سلامت و صحت انتخابات را آغاز کردند و رسانه‌های دیگر نیز همین خط را در پیش گرفتند.
چیزی نگذشت که سیل اتهامات در خصوص پیشتازی احمدی‌نژاد، در حجمی انبوه و به‌شکلی گسترده به سمت انتخابات ایران روانه شد. اما دامن‌زدن به این اتهامات همگی ناشی از تصورات جانب‌دارانه رسانه‌های غربی درباره پیروزی موسوی بوده است.
بنگاش ادامه داد که یکی از علل محاسبات غلط خبرنگاران غربی در تحلیل درست از روحیات مردم ایران ناشی از این است که آنان در هتل‌های پنج‌ستاره شمال شهر تهران، مانند استقلال، آزادی و ... مستقر می‌شوند.
وی افزود:
شاید جسم این قشر از جامعه ایرانی در منازل گران‌قیمت مناطق مرفه تهران باشد، ولی روح و ذهن‌شان در اروپا و آمریکای شمالی سیر می‌کند، یعنی همان کشورهایی که دائماً به آن‌ها سفر می‌کنند.
بنا بر این گزارش، خبرنگاران غربی از قبل به نحوی تربیت شده‌اند که به جمهوری اسلامی ایران دارای نوعی نگاه بغض‌آلود و بدبینانه هستند،
و تنها با یک بهانه ساده درباره قضایای ایران قضاوت می‌کنند و ساکنان مناطق مرفه تهران نیز با ارائه دیدگاه‌های غرض‌ورزانه خود به این خبرنگاران، در واقع خوراک رسانه‌های غربی را فراهم می‌کنند. آن وقت می‌بینیم که تصاویر کلیشه‌ای سیاهی از دریچه دوربین‌های آن‌ها به دنیا مخابره می‌شود.
بنگاش نوشت: شاید ذکر چند نمونه به روشن‌شدن مسئله کمک کند؛ چند هفته پیش از انتخابات ایران، رسانه‌های غربی به‌ شکلی هماهنگ چنین تحلیل می‌کردند که مردم ایران انتخابات را تحریم خواهند کرد زیرا به نظام کنونی ایران "اعتقاد " ندارند. ولی پس از آنکه مناظرات کاندیداها به گسترش شور و هیجان در میان مردم ایران منجر شد، آنها با ساز خود نوای دیگری نواختند و این بار دوربین‌های خود را روی پوشش جمعیت عظیمی که میرحسین موسوی به خود جلب کرد، زوم کردند و تعمداً از نشان دادن موج عظیم‌تری از مردم که به طرفداری از احمدی‌نژاد به‌راه می‌افتاد، خودداری کردند.
در خروجی‌های رسانه‌های غربی، از واژه "جمعیت اجاره‌ای " برای اشاره به طرفداران احمدی‌نژاد استفاده می‌کردند. عموم مردم غرب به هیچ‌وجه با این تفاوت‌ها آشنایی ندارند، ضمن آن‌که اصولاً علاقه چندانی به مسائل ایران از خود نشان نمی‌دهند. اطلاعات آنها درباره ایران صرفاً از طریق "چرندیاتی " است که رسانه‌ها به خوردشان می‌دهند و آن هم در یکی دو مورد خلاصه می‌شود که: ایران در حال ساخت بمب اتمی است و احمدی‌نژاد خواستار محو اسرائیل است.
وی نوشت: این پیش‌داوری‌ها در کنار حرف و حدیث‌های ایرانیانی که به آمریکا مهاجرت کرده و در کشورهای غربی ساکن شده‌اند و البته با جمهوری اسلامی ایران بشدت مخالفند، تشدید می‌شود.
رسانه‌های غربی با پیروی از همین خط شروع به گمانه‌زنی درباره پیروزی میرحسین موسوی کردند. علاوه بر این، نفرت آنها از احمدی‌نژاد -رئیس‌جمهور جسوری که با پاسخ‌‌های استادانه خود در مصاحبه‌های رسانه‌های غربی با وی در تنگنا قرار می‌گرفتند- مانع از دیدن این حقیقت می‌شد که احمدی‌نژاد از حمایت گسترده توده‌های مردم ایران برخوردار است.
سادگی و تواضع احمدی‌نژاد باعث شده است تا نه تنها ایرانیان، بلکه مسلمانان جهان به او احترام بگذارند. هر چه رسانه‌های غربی وی را دست می‌انداختند، محبوبیت او در میان مردم عادی ایران افزون‌تر می‌شد. ولی این محبوبیت صرفاً ناشی از هیجانات احساسی نبود. احمدی‌نژاد به شعارهای انتخاباتی خود در سال 2005 عمل کرد و با دیدار از مناطق روستایی و محروم که اکثریت جمعیت ایران را تشکیل می‌دهد، مسیر مصرف درآمدهای ایران را به نفع آن مناطق تغییر داد.
مردم این مناطق همان کسانی بودند که رهبران دوران سازندگی، اصلاحات و سایر شخصیت‌های غرب‌گرا از آن‌ها غفلت کرده بودند. اما خبرنگاران غربی در دام طفیلی‌های قشر طاغوتی در تهران افتادند. به‌رغم این واقعیت که مردم ایران از میرحسین موسوی به‌ دلیل رفتار و سلوک متواضعانه و همچنین توانمندی‌هایش در اداره اقتصاد در سال‌های جنگ تحمیلیِ عراق ضد ایران، خاطرات خوبی دارند، متاسفانه به نظر می‌آید که آن انگل‌ها حتی در تیم ستاد تبلیغاتی میرحسین موسوی نیز نفوذ کرده‌اند.
در این‌جا باید یادآوری کنیم که موسوی هرگز به هیچ مقام دولتی انتخاب نشده است؛ وی در زمان حیات حضرت امام‌ خمینی به امر ایشان به مقام نخست‌وزیری منصوب شد و تنها رئیس‌جمهور بود که با انتخابات به این مقام و جایگاه دست می‌یافت.
در سال 1989، در اصلاحیه‌ای که در قانون اساسی انجام شد، پست نخست‌وزیری حذف و کلیه اختیارات اجرایی به رئیس‌ جمهوری تفویض گردید.
برخی طرفداران موسوی به پیروزی احمدی‌نژاد با چنین اختلاف بالایی با شک می‌نگرند. آن‌ها فکر می‌کردند انتخابات به دور دوم برسد، زیرا هیچ‌یک از نامزدها نمی‌توانستند نصاب 50 به‌اضافه یک درصد آراء را که در قانون اساسی پیش‌بینی شده است کسب کنند. این تصور نیز بر اساس احساساتِ ناشی از مشاهده جمعیت کثیر هواداران موسوی در اذهان آنها شکل گرفته است. احمدی‌نژاد، دو روز پیش از انتخابات، از بیم اینکه مبادا جمعیت حاضر در محل برگزاری برنامه تبلیغاتی او در زیر دست و پا له شوند حضور خود در یکی از اجتماعات طرفدارانش در تهران را لغو کرد.
این خبر بر هیچ‌یک از خروجی‌های رسانه‌های خارجی قرار نگرفت و آنان اجتماع عظیم مردمی را که در روز 14 ژوئن به مناسبت پیروزی احمدی‌نژاد صورت گرفت نیز گزارش نکردند. در عوض، روی راهپیمایی طرفداران موسوی در روز 15 ژوئن که به‌ دلیل پخش شایعاتی مبنی بر بازداشت او به‌راه افتاده بود، متمرکز شدند.
البته وقتی کذب بودن این خبر ثابت شد، آنها ترفندی دیگر به‌ کار بستند و مدعی شدند که مقامات ایران هر گونه راهپیمایی را ممنوع اعلام کرده‌اند. آنگاه که کذب ‌بودن این ادعا نیز روشن شد، تاکتیک خود را عوض کردند و گفتند که هواداران موسوی ممنوعیت راهپیمایی را نادیده گرفته‌اند و دولت را وادار به "عقب‌نشینی " کرده‌اند.
با وجودی که مردم به آتش‌زدنِ اتوبوس‌ها و شکستن شیشه‌ها اقدام کردند و به اموال [عمومی] خسارت زدند، ولی مسئولان هیچ اقدامی در ممانعت از انجام راهپیمایی نکردند.
در پایان راهپیمایی، عده‌ای به مراکز بسیج حمله‌ور شدند و درست در همین التهابات بود که هفت نفر بر اثر تیراندازی کشته شدند. با تاریک ‌شدن هوا، آرامش به شهر بازگشت، ولی هر دو رقیب از طرفدارانشان خواستند روز 16 ژوئن در میدان ولی‌عصر تهران اجتماع کنند که حامیان احمدی‌نژاد کمی زودتر حاضر شدند و کنترل اوضاع را به ‌دست گرفتند.
شورای نگهبان نیز در همان روز اعلام کرد آراء صندوق‌هایی که به ادعای اوپوزیسیون [میر حسین موسوی]، در آن‌ها تقلب صورت گرفته است، بازشماری می‌کند. حامیان موسوی این امر را رد کرده و خواستار ابطال نتایج انتخابات 12 ژوئن و برگزاری دوباره انتخابات ریاست‌جمهوری شدند.
در میان قیل و قال‌هایی که بحث تقلب در انتخابات را در دهان‌ها انداخته است، باید به چند واقعیت اساسی بدقت توجه کرد. شاید احمدی‌نژاد به دلیل صراحت لهجه در بیان دیدگاه‌هایش در غرب محبوبیتی نداشته باشد، ولی در ایران از او حمایت گسترده‌ای می‌شود. حامیان او روستائیان و اقشار ضعیف و کم‌ درآمد شهرها و مذهبی‌ها هستند که قشری عظیم از جمعیت ایران هستند.
طبقه متوسطِ تحصیل‌کرده درواقع اقلیتی هستند که اکثراً در مناطق مرفه‌نشین تهران زندگی می‌کنند. فرزندان آنها به دانشگاه می‌روند، سوار اتوموبیل‌های گران‌قیمت می‌شوند و پاتوق‌های‌شان هتل‌های پنج‌ستاره است.
وی نوشت: اغلب همین تیپ آدم‌ها هستند که گرد موسوی را گرفتند. البته منصفانه نیست که بگوییم موسوی شخصاً آشوب‌گران را به ایجاد خشونت ترغیب کرده باشد، ولی شکی نیست که در حلقه اطرافیان او عوامل فتنه‌گری هستند که به آشوب‌ها دامن می‌زنند.

حامیان احمدی‌نژاد عموماً طبقات فقیر جامعه هستند. اکثر آنها زبان انگلیسی نمی‌دانند و شاید همین نیز باعث شده تا نتوانند احساسات و دیدگاه‌های‌شان را به خبرنگاران غربی منتقل کنند. هرچند آن خبرنگاران نیز برای مصاحبه‌های خود به‌سراغ این چنین مردمی نمی‌روند.
این مردم قاطعانه پشت سر انقلاب ایستاده‌اند و می‌دانند که منافعشان در کجاست. بیشترین فداکاری‌ها در جنگ هشت‌ ساله عراق علیه ایران را همین اقشار از ایرانیان به‌ منصه ظهور گذاشتند و از انقلاب دفاع کردند.
سخن ما نظریه‌پردازی و حدس و گمان واهی نیست. برای حرف خود دلیل مستند داریم. "کن بالن " (Ken Ballen) و "پاتریک دوهرتی " (Patrick Doherty) سه هفته پیش از انتخابات، یک افکارسنجی از مردم ایران به عمل آوردند که طبق آن ثابت شده بود مردم ایران به نسبتِ دو به یک به احمدی‌نژاد رای می‌دهند.
آنان نتایج تحقیقات خود را در مقاله مشترکی تدوین کردند و در شماره 15 ژوئن 2009 روزنامه واشنگتن‌پست به چاپ رساندند. در بخشی از مقاله آنان آمده است: "در حالی‌که گزارش‌های خبریِ رسانه‌های غربی از تهران در روزهای منتهی به رای‌گیری، تلاش کرده‌اند تا عموم مردم ایران را مشتاق انتخاب رقیب اصلی احمدی‌نژاد، یعنی میرحسین موسوی، نشان دهند، اما نمونه‌گیری علمی ما از تمام سی استان ایران نشان داد که احمدی‌نژاد پیشتاز است. "
دو سازمان غیر انتفاعی آمریکایی به نام‌های "آینده بدون ترور؛ مرکز افکار عمومی " و "برنامه راه‌برد آمریکایی در بنیاد آمریکا " از یازدهم تا بیستم ماه می، این نظرسنجی را انجام دادند که سومین مورد در نوع خود ظرف دو سال گدشته محسوب می‌شود. این نظرسنجی تلفنی از یکی از کشورهای همسایه ایران (احتمالاً از دبی) انجام شد و قسمت مربوط به تحقیقات میدانی نیز به زبان فارسی توسط یک شرکت افکارسنجی اجرا شد.
این شرکت به‌ دلیل همکاری با شبکه‌های ABC و BBC به دریافت جایزه EMMY موفق شده است. منابع مالی این نظرسنجی را صندوق برادران "راکفلر " تامین کرده است که به هیچ وجه ارتباطی با دولت ایران و احمدی‌نژاد ندارد.
در گزارش‌ها و تحلیل‌های اخیر رسانه‌ها، به این گمان بسیار دامن زده شد که همه جوانان ایرانی با حکومت اسلامی ایران مخالف هستند. ولی نتیجه پژوهشی که این موسسه آمریکایی انجام داد عکس قضیه را ثابت می‌کند. این تصور و تلقی غلط ناشی از این است که خبرنگاران غربی فقط با جوانان ساکن در مناطق شمالی شهر تهران و بخشی از اقشار تحصیل‌کرده صحبت می‌کنند. در حالی‌که این جوانان نازپرورده و ثروتمند، نماینده کل ملت ایران نیستند.
برخلاف گزارش‌های رسانه‌ها، اینترنت نیز منادی و یا مسبب تغییر نیست. تحقیقات "کن بالن " و "پاتریک دوهرتی " نشان داده است که "تنها یک‌سوم ایرانیان به اینترنت دسترسی دارند، در حالی‌که از میان گروه‌های سنی مختلفی که به احمدی‌نژاد رای داده‌اند، جوانان هجده تا بیست وچهار ساله بزرگ‌ترین بخش را تشکیل می‌دهند. "
از نتایج این نظرسنجی چیزهای شگفت‌انگیزتری نیز کشف شده است. برخی از گزارش‌ها درباره احراز رای بالای احمدی‌نژاد در مناطق آذری‌زبان تشکیک کرده‌اند. جواب نظرسنجی کن بالن و پارتیک دوهرتی چنین است: "گستره حامیان احمدی‌نژاد در تحقیقات ما پیش از انتخابات معلوم بود. مثلاً در مدت تبلیغات انتخاباتی، موسوی بر هویت آذری خود بسیار تاکید می‌کرد تا رای آن‌ها را به سوی خود جلب کند، زیرا آذری‌زبان‌ها دومین جمعیت قومی را بعد از فارس‌ها در ایران تشکیل می‌دهند. اما تحقیقات ما نشان می‌داد که محبوبیت احمدی‌نژاد در میان آذری‌ها در مقایسه با موسوی به نسبتِ دو به یک است. "
فهمیدن علت این امر دشوار نیست. احمدی‌نژاد برخلاف روش گذشتگان، به میان ضعفا و محرومین رفته است. آنان نیز با رای خود قاطعانه از او حمایت کردند. این تحقیق، نظریه ما را نیز که می‌گفتیم حامیان موسوی عمدتاً اقشار دانشگاهی و ایرانیان ثروتمند هستند، تایید کرد. این افراد دارای روابط خاصی هستند و می‌توانند دیدگاه‌‌های خود را به خبرنگاران غربی منتقل کنند و تصویری که آنان از ایران ساخته‌اند از دریچه دوربین‌های رسانه‌های غربی به دنیا نمایانده می‌شود.
نکته آخری که باید روشن شود این است که بعضی‌ها می‌گویند که ایرانیان دو هفته مانده به انتخابات، درباره فرد دلخواه خود تصمیم می‌گیرند. شاید این امر درباره خواص شهرنشین صادق باشد، اما جمعیت روستایی بخوبی حامی و دوست خود را می‌شناسد.
از آن گذشته ممکن است آراء مردم به هر طرفی متمایل شود، چه بسا به ضرر احمدی‌نژاد و به هیچ وجه نمی‌توان پیش‌بینی کرد که همه رای‌ها به نفع موسوی به صندوق‌ها انداخته شده باشد.
بالن و دوهرتی گزارش داده‌اند که در حین اجرای نظرسنجی تقریباً یک‌سوم ایرانیان هنوز درباره رای‌گیری به تصمیم قاطعی نرسیده بودند. ولی نظرسنجی ما نشان داد که گزارش مقامات ایرانی درباره نتایج رای‌گیری صحیح است، یعنی احتمال تقلب گسترده در انتخابات وجود نداشته است.
در اینجا باید مقایسه سریعی بین وقایع انتخابات لبنان در هفتم ژوئن 2009 کنیم. هزاران تن از لبنانی‌ها با هزینه عربستان از کشورهای خارجی به لبنان آورده شدند تا به سود گروه 14 مارس به رهبری "سعد الحریری " [برخوردار از حمایت آمریکا و غرب] رای دهند. سعودی‌ها حتی به هر یک از لبنانی‌ها 500 دلار پول تو جیبی دادند. به‌رغم این تقلب بزرگ، گروه سعد الحریری تنها به احراز 68 کرسی پارلمان لبنان موفق شد (که دو کرسی از دوره قبلی کم‌تر است)، در حالی‌که ائتلاف گروه‌های حزب‌الله موفق به کسب 58 کرسی مجلس شد (که فقط یک کرسی کم‌تر از دوره قبل است).
سه نامزد نیز مستقل شرکت کرده بودند. با وجود این، "سید حسن نصرالله " دبیرکل حزب‌الله به‌هیچ‌وجه درخصوص تقلب در انتخابات لب به شکایت نگشود و از حامیانش خواست نتیجه را پذیرفته و به زندگی خود ادامه دهند.
هیچ‌یک از رسانه‌های غربی به تقلب در انتخابات لبنان اشاره نکردند و فقط به ذکر این مطلب بسنده کردند که حزب‌الله شکست خورد.



تاريخ : Wed 1 Jul 2009 | 0 AM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |
ورلڈ ٹونٹی 20 کپ کے ہیرو شاہد آفریدی نے کہا ہے کہ ٹی ٹونٹی کپ میں فتح موجودہ حالات میں قوم کے لئے مسکراہٹوں کا تحفہ ہے۔ قومی ہیروز کا لندن سے کراچی پہنچنے پر پرجوش استقبال کیا گیا۔وزیراعظم پاکستانی فاتح ٹیم کو آج عشائیہ دیں گے۔ لندن سے کراچی پہنچنے پر اپنی رہائش گاہ کے باہر صحافیوں سے گفتگو میں انہوں نے کہا کہ جس طرح ٹیم متحد ہوکر کھیلی پاکستانی قوم کو بھی اس طرح متحد ہونا چاہئے۔ ورلڈ کپ سوات کے لوگوں کے نام کرتا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ ان کی عمدہ کارگردگی میں کپتان یونس خان کے اعتماد نے اہم کردار ادا کیا۔ یونس خان کو ابھی ٹونٹی 20 کرکٹ سے ریٹائرڈ نہیں ہونا چاہئے۔ ٹی ٹونٹی کے کپتان کا فیصلہ بورڈ کرے گا۔ اس سے قبل قومی ہیروز شاہد آفریدی ،شعیب ملک اور فواد عالم کا لندن سے وطن واپس پہنچنے پر کراچی ایئر پورٹ پر عوام کی بڑی تعداد نے پرتپاک استقبال کیا۔ کراچی ایئر پورٹ پر شائقین نے شاہد آفریدی بوم بوم کے نعرے لگائے اور جیسے ہی وہ طیارے سے ایئرپورٹ لاﺅنج پہنچے سیکڑوں کی تعداد میں موجود شائقین نے انہیں گھیرے میں لے لیا اور پاکستان زندہ باد شاہد آفریدی زندہ باد کے نعرے لگائے۔



تاريخ : Wed 24 Jun 2009 | 11 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |
پاکستان کرکٹ ٹیم کے کپتان یونس خان نے کہا ہے کہ مجھے خوشی ہے کہ میں ریٹائرمنٹ سے قبل قوم کو ٹونٹی 20 ورلڈ کپ میں کامیابی کا تحفہ دے کر جارہا ہوں۔ کامیابی ٹیم کی مشترکہ کوششوں کا نتیجہ ہے۔ ٹیم کی کامیابی کو آنجہانی کوچ باب وولمر کے نام کرتا ہوں' کپتان کو کامیابی کے لئے دلیرانہ فیصلے کرنے پڑتے ہیں' یہ کامیابی پاکستانی کرکٹ ٹیم کے مستقبل کیلئے بھی انتہائی شاندار ثابت ہوگی۔ اتوار کو سری لنکا کو فائنل میچ میں شکست دینے کے بعد میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ٹورنامنٹ کے آغاز سے قبل مجھے یقین تھا کہ اگر ہم چند ایک کامیابیاں حاصل کرنے میں کامیاب ہوگئے تو ورلڈ کپ جیت سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ٹورنامنٹ میں شاہد آفریدی' سعید اجمل ' عمر گل اور مصباح الحق نے بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کیا اور آخری میچز میں عبدالرزاق اور شاہ زیب کی شمولیت سے ٹیم مزید مضبوط ہوئی۔ انہوں نے کہا کہ پورے ٹورنامنٹ میں ہی دبائو تھا اور خاص طور پر فائنل میں۔ انہوں نے کہا کہ سری لنکا کی ٹیم بہت اچھی ٹیم ہے لیکن ہمارے بائولرز نے جیسے ہی ابتدائی وکٹیں حاصل کیں سری لنکا کو ایک سو سے زیادہ رنز نہیں کرنا چاہیے تھے۔ لیکن 150 رنز تک بھی باآسانی حاصل کر لیتے۔ اس سے قبل شاہد آفریدی نے کہا کہ میرے لئے یہ ایک بہترین ٹورنامنٹ تھا۔ سیمی فائنل اور فائنل میچ میں اپنی ٹیم کیلئے نمایاں کارکردگی پر خوشی ہوئی۔ یونس خان نے اعتماد دیا اور اوپر بیٹنگ کے لئے بلا کر رنز کرنے کا موقع فراہم کیا۔ بائولنگ کوچ عاقب جاوید کی ٹپس سے بائولنگ میں نمایاں بہتری آئی ہے۔ سری لنکا کے کپتان کمارا سنگاکارا نے کہا کہ ٹیم نے پورے ٹورنامنٹ میں بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کیا تاہم فائنل میں بدقسمت رہے۔ وکٹیں جلد گرنے کے باوجود بہتر سکور بنانے میں کامیاب ہوگئے تھے تاہم یہ ہدف سے 20 سے 25 رنز کم تھا' بائولرز کی کارکردگی بہتر تھی۔ انہوں نے اس موقع پر اپنی قومی زبان میں اپنے ہم وطنوں سے کہا کہ وہ ضرور عالمی کپ کو سری لنکا لائیں گے اور انہیں مایوس نہیں ہونے دیں گے۔ پاکستانی کرکٹ ٹیم کے کپتان یونس خان نے کہاکہ ٹونٹی 20 ورلڈ کپ ہماری طرف سے قوم کو سب سے بڑا تحفہ ہے اور یہ انکی کرکٹ کیریئرکی سب سے بڑی کامیابی ہے۔ قوم کی دعائیں اور کھلاڑیوں کی محنت کامیابی کی وجہ بن گئی انہوں نے کہاکہ شاہد آفریدی میچ ونر کھلاڑی ہیں اور انہیں ہمیشہ ٹاپ آرڈر پر کھلانا چاہتا ہوں انہوں نے کہاکہ قوم کو ورلڈ کپ تحفے میں دینا چاہتے تھے اور اس میں کامیاب ہونے پر بے حد خوشی ہے فائنل میں اچھے فیصلوں کے بارے میں انہوں نے کہاکہ انسان بعض اوقات غلط فیصلے بھی کرتا ہے لیکن کرکٹ میں بعض اوقات جرات مندانہ فیصلے کرنا ہوتے ہیں آج کے فیصلے درست ثابت ہوئے۔ انہوں نے آنجہانی باب وولمر کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہاکہ انہوں نے ہمیشہ ان کی حوصلہ افزائی کی اور وہ انہیں کپتان دیکھنا چاہتے تھے۔ پاکستان کرکٹ ٹیم کے آل رائونڈر شاہد خان آفریدی نے کہا ہے کہ یونس خان سے درخواست کی تھی کہ وہ انہیں فائنل میں ون یا ٹو ڈائون کھلائے ورلڈ کپ کے فائنل میں کامیابی کے بعد افتتاحی تقریب میں بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ ورلڈ کپ جیتنے کا کریڈٹ کپتان یونس خان کو جا تا ہے جنہوں نے نہ صرف کھلاڑیوں کو حوصلہ دیا بلکہ مثبت کردار ادا کیا انہوں نے کہاکہ تمام کھلاڑیوں نے کھیل میں اہم کردار ادا کیا شاہد آفریدی نے کہاکہ جیت کے قریب پہنچنے کیلئے سنبھل کر کھیلنا ضروری تھا اس لئے انہوں نے شعیب ملک کا بھرپور ساتھدیا اور فاضل جیت گئے

تاريخ : Wed 24 Jun 2009 | 11 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |
خبرگزاري "ريانوواستي "، "پرويز مشرف "، رئيس جمهور سابق پاكستان، كه طي يك سفر شخصي در مسكو به سر مي برد، امروز چهارشنبه اعلام كرد فعلا قصد بازگشت به سياست را ندارد.
مشرف در پاسخ به سوال خبرنگاران گفت: من چنين برنامه اي ندارم.
مشرف در سال 1999 و در نتيجه يك كودتاي نظامي بر سر كار آمد. وي با بركنار كردن "نواز شريف "، نخست وزير منتخب، بالاترين مقام اجرايي كشور پاكستان را در دست گرفت و اندكي پس از آن با برگزاري يك همه پرسي خود را رئيس جمهور كشور اعلام كرد. مدت حكومت وي 9 سال به طول انجاميد و 18 آگوست سال گذشته به دليل فشارها و تهديدهاي جناح هاي مخالف خود در پارلمان مبني بر استيضاح و بركناري وي، در نطقي تلويزيوني استعفاي خود را اعلام كرد.
بر اساس اظهارات رئيس جمهور سابق پاكستان، در حال حاضر وي نه يك شخصيت نظامي است و نه سياسي، بلكه يك شهروند عادي پاكستاني است.
پرويز مشرف افزود: اكنون من به عنوان يك استاد به كشورهاي مختلف سفر كرده و سخنراني مي كنم و دنيا را تماشا مي كنم.
علاوه بر اين مشرف اين امر را خارج از امكان ندانست كه پس از مدت زمان معيني طرح ها و برنامه هاي وي تغيير كند. وي اظهار داشت گذر زمان همه چيز را مشخص خواهد كرد.


تاريخ : Thu 28 May 2009 | 11 AM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |
در كراچي، "امان الله " عضو فعال سپاه صحابه توسط افراد ناشناس در منطقه "گلشن اقبال " كراچي كشته شد.
همچنين "سفيان " فرزند وي نيز در اين حمله شديداً زخمي شد كه مقامات بيمارستاني حال وي را وخيم اعلام كرده‌اند.
بر اساس اين گزارش، "امان الله " همراه با سه پسر خود در حال بازگشت به منزل خود بود كه در منطقه "گلشن اقبال كراچي " مورد حمله افراد ناشناس قرار گرفت.
اين افراد از قبل در مسير بازگشت وي به خانه در كمين بودند كه به محض ديدن وي شروع به تيراندازي كردند. ۶/۳/۱۳۸۸


تاريخ : Thu 28 May 2009 | 11 AM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

لاہور میں سنہ دو ہزار آٹھ سے اب تک ہلکے اور بھاری نوعیت کے کئی بم دھماکے اور خودکش حملے ہوئے ہیں لیکن اس کے ساتھ پاکستان میں لاہور واحد شہر ہے جہاں ممبئی طرز کے حملے بھی کیے جا چکے ہیں ۔مجموعی طور پر ان حملوں میں ایک سو گیارہ افراد ہلاک ہوئے جن میں اکسٹھ سکیورٹی اہلکار شامل ہیں ۔

دو ہزار آٹھ

دس جنوری

اس دن لاہور ہائی کورٹ کے باہر بم دھماکہ ہوا۔ اس میں تئیس افراد ہلاک اور متعدد زخمی ہوگئے ۔پولیس کے مطابق ہلاک ہونے والوں میں بیس پولیس اہلکار، دو شہری اور خودکش حملہ آور شامل تھے۔

چار مارچ

لاہور کی مصروف شاہراہ اپر مال پر واقع پاک بحریہ کے ایک نیول وار کالج میں خود کش دھماکے میں ایک حملہ آور سمیت کم از کم سات افراد ہلاک اور بارہ زخمی ہوگئے۔ حکام کے مطابق دھماکے میں نیوی کے چار اہلکار ہلاک ہوئے۔

گیارہ مارچ

لاہور میں مال روڈ کے نزدیک واقع وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) کے دفتر اور ماڈل ٹاؤن کے علاقے میں ہونے والے دو خودکش بم دھماکوں مجموعی طور پر ستائیس افراد ہلاک اور ایک سو ساٹھ سے زائد زخمی ہوئے ہیں۔ ہلاک ہونے والوں میں ایف آئی اے کے بارہ اہلکار بھی شامل تھے۔ حملوں میں دھماکہ خیز مواد سے بھری گاڑیاں استعمال کی گئی تھیں۔

تیرہ اگست

خودکش حملے میں پولیس اہلکاروں سمیت کم سے کم آٹھ افراد ہلاک اور پچیس سے زائد زخمی ہوگئے ۔ ہلاک ہونے والوں میں پولیس کے ایک سب انسپیکٹر اور دو خواتین بھی شامل تھیں۔ یہ بم دھماکہ ملک کی آزادی کے جشن شروع ہونے سے تھوڑی دیر قبل علامہ اقبال ٹاؤن کے دبئی چؤک پر شب گیارہ بجے کے قریب کیا گیا ۔

سات اکتوبر

لاہور کے گنجان علاقے گڑھی شاہو چوک میں یکے بعد دیگرے تین دھماکوں میں کم از کم چھ افراد زخمی ہوئے۔ پولیس کے مطابق یہ کم شدت کے بم تھے اور ان کا مقصد خوف وہراس پھیلانا تھا۔

بائیس نومبر

قذافی سٹیڈیم کے قریب واقع ایک ثقافتی مرکز میں اور اس کے پاس یک بعد دیگرے تین دھماکے ہوئے ۔ دھماکوں میں کوئی جانی و مالی نقصان نہیں ہوا۔ پولیس کے مطابق کم شدت کے ان دھماکوں کا بظاہر مقصد خوف وہراس پھیلانا تھا۔

چوبیس دسمبر

سرکاری افسروں کی رہائشی کالونی جی او آر II میں ایک گاڑی میں زور دار بم دھماکہ ہوا جس میں ایک خاتون ہلاک اور چار افراد زخمی ہوگئے۔

دو ہزار نو

نو جنوری

دو مختلف تھیئٹروں کے قریب دوگھنٹوں میں پانچ کم شدت کے دھماکے ہوئے ہیں جس میں کوئی جانی اور مالی نقصان نہیں ہوا۔

تین مارچ

سری لنکا کی کرکٹ ٹیم کو سٹیڈیم لے جانے والی بس پر تقریباً ایک درجن حملہ آوروں کی فائرنگ سے سری لنکا کے آٹھ کھلاڑی زخمی اور پنجاب پولیس کے پانچ اور ٹریفک پولیس کا ایک اہلکار ہلاک ہو گیا ۔ اس کے علاوہ دو نامعلوم افراد بھی مارے گئے ہیں۔

تیس مارچ

لاہور کے نواحی علاقے مناواں میں واقع پولیس کے تربیتی مرکز پر صبح سات بجے کے قریب متعدد مسلح افراد نے حملہ کیا ۔کمانڈوز نے ساڑھے آٹھ گھنٹے کے آپریشن کے بعد پولیس کے تربیتی سینٹر کی عمارت پر قبضہ کر لیا ۔ اس آپریشن میں آٹھ پولیس اہلکار اور چار دہشت گرد ہلاک جبکہ سو کے قریب افراد زخمی ہوئے۔

ستائیس مئی

لاہور میں سٹی پولیس آفیسر اور ریسکیو 15 کے دفاتر کے باہر خودکش حملے میں تئیس افراد ہلاک اور دو سو کے قریب زخمی ہوئے ہیں۔ حکام کے مطابق حملہ آوروں نے وہاں لگائے بیریئر کے قریب آ کر پہلے فائرنگ کی اور اس کے بعد چھوٹا دھماکہ کیا۔ جوابی فائرنگ کے بعد حملہ آوروں نے بیریئر پار کرنے کے بعد بڑا دھماکہ کیا۔



تاريخ : Thu 28 May 2009 | 11 AM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

دہشت گردوں کے نیٹ ورک کوتوڑنے اورعلاقے میں پر امن فضا قائم کرنے کے لیے گلگت بلتستان میں مکمل صوبائی سیاسی سیٹ اپ انتہائی ناگزیر ہے ان خیالات کااظہاررکن ڈسٹرکٹ کونسل گلگت ممتاز قانون دان امبر حسین ایڈووکیٹ نے اپنے ایک بیان میں کیاانہوں نے کہا کہ طاقت کے زور پر نہ توکوئی مسئلہ حل ہوا ہے اور نہ ہی حل ہوگا امبر حسین ایڈووکیٹ نے کہاکہ 1988ءسے1993ءتک گلگت بلتستان میں فرقہ واریت پروان چڑھی جس کے باعث سینکڑوں جانیں ضائع ہوگئیں لیکن پاکستان پیپلزپارٹی کی حکومت نے پہلی بار جماعتی بنیادوں پر انتخابات کرائے اور لوگوں کو مذہبی جنون سے نکال کر سیاسی جماعتوں سے وابستگی پر آمادہ کیا تو 1994ءسے 2003ءتک گلگت بلتستان میں مذہب کے نام نہ تو قتل غارت ہوئی اور نہ ہی فرقہ واریت کے نام پر فساد ہوا لیکن سیاسی جماعتوں سے عوام آہستہ آہستہ مذہبی جنون کی طرف اس لیے راغب ہو گیا کہ مرکز میں سیاسی جماعتوں اور سیاسی جماعتوں سے وابستہ شخصیات کی حوصلہ افزائی اور سیاسی اداروں کی رائے کو اہمیت دینے کے بجائے انتظامیہ جمعے کے خطبے پر فیصلے کرنے لگی جس کے باعث گلگت بلتستان میں فرقہ واریت نے جگہ بنائی۔امبر حسین ایڈووکیٹ نے کہا کہ اگر انتظامیہ سیاسی جماعتوں کی رائے اور مشوروں پر عمل درآمد کرے اور وفاق کی تمام سیاسی جماعتوں کو مرکز میں دیگر صوبوں کے برابر عزت اور اہمیت دی جائے تو گلگت بلتستان سے نہ صرف دہشت گردی ختم ہوگی بلکہ فرقہ واریت کا بھی مکمل خاتمہ ہوگا ۔امبر حسین ایڈووکیٹ نے کہا کہ وفاقی حکومت نے گلگت بلتستان میں61سال سے انتظامی اصلاحات کرتی رہی مگر سیاسی اصلاحات پر کبھی توجہ نہیں دی ۔جس کے باعث انتظامیہ مضبوط ہوتی گئی اور انتظامیہ اپنی مضبوطی کو قائم رکھنے کے لیے مذہبی انتہاپسندوں کی حوصلہ افزائی کرتی رہی۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ اگر گلگت بلتستان کو مکمل صوبائی سیٹ اپ کی سیاسی اصلاحات کئے جائیںتو علاقے سے لسانیت ¾فرقہ واریت اور علاقائیت کینسر کا مکمل خاتمہ ہوگا۔




تاريخ : Wed 6 May 2009 | 11 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

به گزارش خبرگزاری مهر: رئیس جمهور پاکستان در دیدار با استاندار خراسان رضوی خواستار ایجاد بنایی به یاد بود بی نظیر بوتو وزیر اسبق و رهبر فقید حزب مردم پاکستان در مشهد شد. آصف علی زرداری شامگاه چهارشنبه در نشستی با استاندار خراسان رضوی در محل فروگاه شهید هاشمی نژاد مشهد ضمن ابراز خرسندی از حضور در مشهد مقدس افزود: هدف من از این سفر زیارت مرقد مطهر حضرت رضا (ع) است.رئیس جمهور پاکستان از استاندار خراسان رضوی خواست تا بنایی به یاد بود بی نظیر بوتو وزیر اسبق و رهبر فقید حزب مردم پاکستان در مشهد ساخته شود.استاندار خراسان رضوی نیز با اشاره به راه اندازی نمایندگی محصولات آستان قدس رضوی در لاهور پاکستان اظهار داشت: ما نیز خواهان برقراری پرواز مستقیم مشهد - پاکستان هستیم.



تاريخ : Fri 13 Mar 2009 | 10 AM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

رئيس جمهور پاكستان با پاي برهنه به زيارت مضجع منور هشتمين امام شيعيان شتافت.به گزارش آستان قدس رضوي، آصف‌علي زرداري، رئيس جمهوري پاكستان در دقايق عرفاني و ملكوتي بامداد امروز هنگام ورود به صحن‌هاي مطهر، كفش‌هاي خود را به نشانه احترام و عرض ارادت به ساحت ملكوتي حضرت ثامن‌الحجج (ع) از پا در آورد و با حالت خضوع قدم در اين آستان مقدس گذاشت.
زرداري سپس لحظاتي را پيش روي مبارك ايستاد و با مولاي خود به نجوا پرداخت.وي پس از قرائت زيارتنامه و عتبه‌بوسي مضجع منور در رواق مباركه دارالسلام نماز خواند.محمدجواد محمدي‌زاده، استاندار خراسان رضوي، رئيس جمهور پاكستان را در حضور يك ساعته‌اش در حرم مطهر رضوي همراهي و توضيحاتي در ارتباط با توسعه حرم مطهر، فضاهاي جديد، زيرساخت‌ها و فعاليت‌هاي فرهنگي و رفاهي آستان قدس رضوي ارائه داد.زرداري كه به منظور شركت در اجلاس «اكو» به كشورمان سفر كرده بود، در مسير بازگشت به كشورش به منظور زيارت بارگاه منور رضوي، ساعاتي را در مشهد مقدس توقف كرد و همان شب به كشورش بازگشت



تاريخ : Fri 13 Mar 2009 | 10 AM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |
در منطقه شيعه نشين بلتستان، يك مؤسسه بنام "آسیای مرکزی" Central Asia ، با پشتيباني آمريكا و اسرائيل توسط شخصی بنام « غلام محمد پاروي» فعاليت‏هاي فرهنگي، آموزشي می‏کند و در زمینه ایجاد تاسيسات و مدارس غیر انتفاعي فعال شده است. البته رابط اصلی بين آمريكا و غلام محمد پاروي (در شمال پاكستان) آقاي دكتر گريك مي‏باشد. مادر دكتر گريك متولد آلمان و پدرش آمريكائي است و نيمي از زندگي‏اش را در اسرائيل گذرانده است. ورود دکتر گریک در ابتداء با استقبال سرد مردم شمال پاکستان مواجه شد؛ ولي آقاي غلام محمد پاروي که دارای افکاری شیطانی است، زمينه‏هايي را براي فعاليت دكتر گريك فراهم ساخت. علماء هم با ورود وی به مخالفت برخاستند ولي آقاي پاروي بعلت ذهنيت يهودي كه داشت، سياستمدار و عالم معروف «سيد عباس موسوي» را با هديه بزرگ قانع ساخت و ايشان طی فتوايي فعاليت دكتر گريك را بدليل وجود فقر در منطقه، جائز دانستند. بعد از اين ماجرا، دكتر گريك به منطقه شِگَر رفت تا فعالیتش را در آنجا آغاز کند، اما با مخالفت مردم روبرو شد. شخصي بنام اپو علي ايشان را به منزل راه داد و از ايشان پذيرايی گرمي بعمل آورد. وی به آقاي دكتر گريك 3 استكان چايي داد و بعد از آن دكتر گريك موفق به شروع فعاليت‏هايش شد. دكتر گريك پرسيد فلسفه خوردن 3 استكان چاي چيست؟ اپو علي گفت: در فرهنگ ما اگر كسي يك استكان چاي بدهد شما فكر كن كه با هم دوست شده ايد و اگر بار ديگر چاي داد فكر كن كه از افراد خانواده اش شده ايد و بار سوم اگر اين عمل تكرار شد فكر كن كه با هم هم‏راز شده‏ايد! وی تا بحال در منطقه شگر 35 مدرسه غير انتفاعي احداث كرده. همچنين در شهر اسكردو هم آپارتمان سه طبقه‏اي براي دانشجويان ساخته شده كه بعدا پنج طبقه خواهد شد. دكتر گريك كتابي نوشته بنام "سه استكان چاي" three cups of tea، كه در حدود 350.000 نسخه آن را به فروش رسانده است. در آمريكا و انگليس و بعبارتي در كشور‏هاي غربي مورد استقبال فراوانی قرار گرفته است و بايد دانشجویان دانشگاه‏هاي غربي آن را بخوانند و امتحان بدهند. ايشان چند روز پيش خواهان ترجمه فارسي این کتاب شده و هزینه ترجمه آن را تقبل کرده است. خبري نيز در دست است مبني بر اين كه، آقاي غلام محمد پاروي يك مؤسسه بنامNGO ، تأسیس کرده و اين مؤسسه با پشتيباني مالی کشور آلمان فعاليت خواهد كرد. در منطقه گنكهي، خَپُلو، سرمك و اسكردو، وهابي‏هاي عربستاني فعاليت‏هاي مختلفي را شروع كرده‏اند؛ از قبيل كمك به فقرا و مساكين و ايتام و ساختن مساجد. البته قبلا در شهر اسكردو (چون شهر بزرگي مي‏باشد) هيچ مسجد بزرگي وجود نداشت. در حال حاضر در شهر اسكردو در محله (عمر كالوني) يك مسجد خيلي بزرگ ساخته‏اند كه در آن اقدامات مشكوكي مي‏شود و در زیرزمین آن انبار اسلحه قرار دارد. در منطقه خپلو (در بین پیروان مذهب نور بخشيه) با كمك مالي عقیده بسیاری از مردم را تغيير داده و اين فعاليت را همچنان ادامه مي‏دهند. اگرا ين فعاليت ادامه پيدا كند در ظرف چند سال آينده وجود تشيع در اين منطقه بطور كلي به خطر مي‏افتد زيرا مردم اين منطقه در فقر اقتصادي شديدي بسر می‏برند. وهابي‏ها، تحت پوشش كمك‏هاي بشر دوستانه، مردم را به تغيير عقيده تشويق و يا از مذهب شيعه متنفر مي‏سازند. سازمان‏های خارجي برنامه‏هاي دقيق و غير محسوس را با حمايت ادارات داخلي در سرتاسر منطقه توسعه داده‏اند و در تضعيف مكتب تشيع فعال مي‏باشند و دولت نيز از آنها حمايت مي‏كند

تاريخ : Thu 5 Mar 2009 | 11 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |
فلسطین کا مسلمان ظلم کا شکار ہوگا تو کراچی کا مسلمان اس کے لیے تڑپ اٹھے گا۔ انڈونیشیا میں زلزلہ آئے تو کراچی‘ ممبئی‘ کلکتہ اور نیویارک تک کا مسلمان ایثار کے لیے کھڑا ہوجائے گا۔ امت ِمسلمہ کی اس خصوصیت سے اب تک صرف چند ایک مواقع پر اس امت کے لیڈروں نے امت کو فائدہ پہنچایا ہے‘ ورنہ ان جذبات کا فائدہ عموماً نہیں اٹھایا جاتا۔ لیکن امت ِمسلمہ کی اس خصوصیت کا فائدہ اس کے دشمن بھی اٹھارہے ہیں۔ کبھی کوئی شوشا چھوڑ کر امت ِمسلمہ کو مشتعل کرکے اپنے ہی ملکوں میں توڑپھوڑ کروا دی جاتی ہے۔ کبھی مسلمانوں کو جذبات میں آپس میں لڑوا دیا جاتا ہے۔ کبھی شیعہ سنّی‘ کبھی دیوبندی بریلوی‘ کبھی مہاجر پٹھان‘ کبھی سندھی پنجابی اور کبھی کچھ.... اور مسلمان جذبات میں آکر اپنا ہی نقصان کربیٹھتے ہیں۔ اب مسلمانوں پر الیکٹرانک اور ٹیکنالوجیکل حملے ہورہے ہیں۔ گزشتہ سے پیوستہ سال چند ملعونوں نے ہمارے پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے خاکے بناکر ان کی تضحیک کی تھی۔ پوری دنیا کے مسلمان اس پر مشتعل ہوئے تھے۔ اس موقع پر مسلمانوں کے جذبات سے فائدہ اٹھاکر ان کی انتہا پسندوں والی تصویر بنائی گئی۔ دنیا بھر میں توڑپھوڑ کرتے مسلمان دکھائے گئے۔ پھر دنیا بھر میں مسلمانوں نے ڈنمارک‘ ہالینڈ‘ ناروے اور ایسے ہی دیگر شاتم ملکوں اور ان کی مصنوعات کا بائیکاٹ کیا۔ اس کا ان ممالک کو نقصان بھی ہوا۔ پھر کچھ دن گزرے کہ الیکٹرانک حملہ ہوا۔ ایک ٹیکسٹ پیغام موبائلوں پر موصول ہونا شروع ہوا کہ ڈنمارک کا وہ صحافی اپنے فلیٹ میں زندہ جل گیا جس نے حضور پاک کی شان میں گستاخی کی تھی اور خاکے بنائے تھے‘ ڈنمارک کی حکومت اس خبر کو چھپارہی ہے‘ آپ یہ پیغام زیادہ سے زیادہ پھیلائیں۔ چنانچہ جذباتی مسلمانوں نے کروڑوں کی تعداد میں یہ پیغام منتقل کردیئے۔ ایک ہی آدمی کو اس کا حلقہ¿ اثر دس دس پیغامات بھیجنے لگا۔ صرف پاکستان کی بات کی جائے تو بھی بلاشبہ اربوں روپے کے پیغامات ایک مہینے کے اندر اِدھر سے اُدھر کردیئے گئے۔ پھر لوگ بھولنے لگے۔ ان اربوں پیغامات کے نتیجے میں کئی کروڑ روپے ان موبائل کمپنیوں کے مالکان کی جیب میں چلے گئے جو شاتم رسول ممالک کے دوست ہیں اور ان کے پیچھے یہی یہودی کمپنیاں ہیں۔ جب سے فلسطین پر اسرائیل کے حملے شروع ہوئے ہیں اُس وقت سے ایک اور میسج چل رہا ہے۔ ایک دن پیغام ملتا ہے کہ ”حماس نے آج رات سورہ الفتح تلاوت کرنے کی اپیل کی ہے‘ یہ پیغام زیادہ سے زیادہ پھیلائیں“۔ راتوں رات کروڑوں پیغام منتقل ہوئے لیکن حیرت کی انتہا نہ رہی جب ساتویں روز بھی یہی پیغام اسی شکل میں گردش کررہا تھا کہ حماس نے آج رات سورہ الفتح تلاوت کرنے کی اپیل کی ہے۔ آخر یہ ’آج رات‘ کون سی رات تھی! کسی نے زحمت نہیں کی کہ اپیل حماس نے کی ہے یا نہیں۔ آگے چلیں۔ اس کے ساتھ ساتھ یہ پیغام بھی گردش کررہا تھا کہ ”یہودیوں نے بیت المقدس پر قبضہ کرلیا ہے‘ مسجد اقصیٰ کا محاصرہ کیا ہوا ہے۔ آج رات سورہ اخلاص تین مرتبہ پڑھیں اور یہ پیغام آگے بڑھائیں‘ یہ آپ پر امت کا قرض ہے“۔ جذباتی امت نے کروڑوں پیغامات راتوں رات آگے بڑھادیئے۔ منافع ان ہی کمپنیوں کی جیبوں میں گیا جن کے خلاف احتجاج ہورہا ہے۔ یہ نہ سمجھیں کہ فلاں کمپنی تو مسلم ملک کی ہے‘ اس کے نیٹ ورک کو استعمال کرنے سے کیا فرق پڑے گا۔ ہمیں یقین ہے کہ مسلم ملکوں کی کمپنیوں کے پیچھے بھی ایسا ہی کوئی ملک نکلے گا‘ اور یہ کہ ہر میسج کرنے والا کمپنی دیکھ کر پیغام آگے نہیں بڑھاتا بلکہ جذبات اس کی عقل پر غالب ہوتے ہیں۔ فی آدمی اوسطاً دس پیغامات آگے بڑھتے ہیں۔ بسااوقات یہ شرح 100 پیغامات بھی ہوجاتی ہے جب کوئی ایس ایم ایس کاسٹر سروس استعمال کرتا ہے۔ اور امت ِمسلمہ کے ان جذباتی معاملات میں ایسا ہی ہورہا ہے۔گزشتہ دنوں تو حد ہی ہوگئی‘ فلسطین کے حوالے سے ایک اور پیغام موبائلوں پر موصول ہونا شروع ہوا‘ آپ سب کو بھی یہ پیغام ملا ہوگا کہ سی این این پر ایک پول ہورہا ہے جس میں سوال پوچھا گیا ہے کہ ”کیا اسرائیل کو فلسطین پر حملے کا اختیار ہے؟“ اس سروے میں ہم 54 کے مقابلے میں 46 فیصد کی شرح سے پیچھے ہیں‘ جلدی کریں اپنا ووٹ بھی ڈالیں۔“اس پیغام کو بھی لوگوں نے اندھادھند آگے بڑھانا شروع کردیا۔ ہم نے سب سے پہلے انٹرنیٹ کھولا‘ سی این این پر گئے‘ یہ پول کہیں نظر نہیں آیا۔ اپنے دوسرے ساتھی سے کہا کہ تم تلاش کرو.... اسے بھی نظر نہیں آیا۔ انٹرنیٹ کے ماہرین کو دوڑایا‘ ان کو بھی کہیں نظر نہیں آیا۔ پھر ہم نے اپنے پاس پیغام بھیجنے والے ایک ساتھی کو جواب دیا کہ بھائی کیا آپ نے یہ سروے کہیں دیکھا ہے؟ اور یہ کتنی عجیب بات ہے کہ سات دن سے یہ پیغام گردش کررہا ہے اور سروے کی شرح 54 کے مقابلے میں 46 فیصد چلی آرہی ہے! امت ِمسلمہ پیغام ہی آگے بڑھا رہی ہے‘ ووٹ کاسٹ نہیں کررہی؟ کسی کے پاس اس کا جواب نہیں ہے کہ اگر حضور کے خاکے بنانے والا اپنے فلیٹ میں جل مرا تو اس پر پیغامات بھیج کر ہم مغربی کمپنیوں کے منافع میں کیوں اضافہ کریں؟ اگر یہودی افواج نے القدس شریف کا محاصرہ کرلیا ہے تو سورہ اخلاص ضرور پڑھو‘ لیکن امت ِمسلمہ تم پر فلسطینیوں کا یہ قرض نہیں کہ ایک SMS کرکے ہاتھ جھاڑ کر بیٹھ جاﺅ۔ نکلو اپنے گھروں سے‘ ان فلسطینیوں کی جس طرح مدد کرسکتے ہو کرو۔ اگر حماس نے بالفرض سورہ الفتح تلاوت کرنے کی درخواست بھی کی ہے تو ضرور کرو‘ لیکن مجاہدین کے گھوڑے تو تیار کرو۔ شہادت کے لیے خود نہیں جاسکتے تو مجاہد تیار کرنے کے لیے مالی ایثار ہی کرو۔ اگر پاکستان میں دس کروڑ پیغامات روزانہ اِدھر سے اُدھر ہورہے ہیں‘ تو لگ بھگ روزانہ ڈھائی کروڑ روپے ان فون کمپنیوں کو جارہے ہیں۔ ارے ہمارے جذباتی مسلمانو! یہ ایس ایم ایس اُس وقت کے لیے بچاکر رکھو جب سب اپنا رخ اسلام آباد کی طرف کرو گے۔ اگر اسی شرح سے 16 کروڑ میں سے صرف 10 کروڑ عوام روزانہ ایک روپیہ فلسطینیوں کے کسی غیر سرکاری فنڈ میں جمع کرائیں تو ماہانہ تین ارب روپے جمع ہوں گے۔

تاريخ : Wed 14 Jan 2009 | 0 AM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |



ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال سکردو کے ڈاکٹروں اور پیرا میڈیکل سٹاف نے گزشتہ رات سیکرٹری صحت کے خلاف ہونے والے فائرنگ اور دہشت گردی کے خلاف شدید احتجاج کیا۔ ہسپتالوں میں ڈاکٹروں نے ہڑتال کی جبکہ تمام ڈاکٹروں اور پیرا میڈیکل سٹاف نے بازوﺅں پر کالی پٹی باندی تقریباً گیارہ بجے تمام سٹاف اور ڈاکٹر صاحبان ہسپتال کے ایڈمن بلاک کے سامنے جمع ہو گئے اس کے بعد ڈائریکٹر صحت بلتستان ریجن ڈاکٹر حسن خان اماچہ کے قیادت میں ڈی ایچ کیو ہسپتال سکردو سے ڈی سی آفس سکردو تک ایک پر امن احتجاجی ریلی نکالی گئی۔ ریلی کے شرکاءجن میں پیرا میڈیکل سٹاف اور ڈاکٹر بھی شامل تھے نعرہ لگاتے ہوئے ڈی سی آفس تک گئے اس دوران سٹاف نے دہشت گردی ختم کرو سیکرٹری کے اوپر حملہ کرنے والے ملزمان کو فوری طور پر گرفتار کرو کے نعرے لگائے گئے اس کے بعد شرکاءنے ایک قرارداد بھی ڈی سی سکردو کو پیش کیا جس میں حالیہ دنوں ہونے والی دہشت گردی کے خلاف سخت الفاظ میں مذمت کی گئی اور ملزمان کو فوری طور پر گرفتار کرنے کا مطالبہ کیا اور آئندہ گلگت میں موجود سرکاری آفیسروں کے تحفظ کو یقینی بنانے کا مطالبہ کیا اسکے بعد ڈی سی سکردو آصف بلال لودھی نے کہا کہ حالیہ ہونے والی دہشت گردی کے خلاف شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں۔ سکراری افسروں کی حفاظت کرنا ہماری ذمہ داری ہے۔ ہم حفاظت کرنا خوب جانتے ہیں اگر اس واقعہ میں لوکل ہو تو اسے ہوش کرنا چاہئے کہ امن ایک نعمت ہے اگر اس میں غیر مقامی افراد شامل ہیں تو ان کے ساتھ مقابلہ کرنا انتظامیہ کو خوب آتا ہے اس حوالے سے ہم نے یہاں کے عوام کی جانب سے جو آواز بلند کیا تھا ہم نے کل رات کو ہی گلگت کے اعلیٰ حکام تک آپ لوگون کی مطالبہ پہنچایا گیا ہے اور امید ہے کہ ضلعی انتظامیہ اور گلگت انتظامیہ جلد از جلد ملزمان کو گرفتار کرینگے۔ اس کے بعد ریلی کے شرکاءکی جانب سے ڈائریکٹر صھت بلتستان ریجن ڈاکٹر حسن خان اماچہ نے ایک قرار داد ڈی سی سکرو کو پیش کر دی گئی اس کے بعد پر امن طور پر منشتر ہو گئے۔



تاريخ : Wed 14 Jan 2009 | 0 AM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |
کربلا کے واقعہ اور حضرت امام حسین علیہ السلام کے اقوال پر نظر ڈالنے سے، عاشورا کے جو پیغام ہمارے سامنے آتے ہیں ان کوہم اس طرح بیان کر سکتے ہیں۔

(1) پیغمبر (ص) کی سنت کو زندہ کرنا:

بنی امیہ یہ کوشش کر رہے تھے کہ پیغمبر اسلام (ص) کی سنت کو مٹا کر زمانہٴ جاہلیت کے نظام کو جاری کیا جائے۔ یہ بات حضرت کے اس قول سے سمجھ میں آتی ہے کہ ”میں عیش و آرام کی زندگی بسر کرنے یا فساد پھیلانے کے لئے نہیں جا رہا ہوں۔ بلکہ میرا مقصد امت اسلامی کی اصلاح اور اپنے جد پیغمبر اسلام (ص) و اپنے بابا علی بن ابی طالب کی سنت پر چلنا ہے۔“

(2) باطل کے چہرے پر پڑی ہوئی نقاب کو الٹنا:

بنی امیہ اپنے ظاہری اسلام کے ذریعہ لوگوں کو دھوکہ دے رہے تھے۔ واقعہ کربلا نے ان کے چہرے پر پڑی اسلامی نقاب کوالٹ دیا،  تاکہ لوگ ان کے اصلی چہرے کو پہچان سکے۔ ساتھ ہی ساتھ اس واقعہ نے انسانوں و مسلمانوں کو یہ درس بھی دیا کہ انسان کو ہمیشہ ہوشیار رہنا چاہئے اور دین کامکھوٹا پہنے فریبکار لوگوں سے دھوکہ نہیں کھانا چاہئے۔

(3) امر بالمعروف کو زندہ رکھنا:

حضرت امام حسین علیہ السلام کے ایک قول سے معلوم ہوتا ہے، کہ  آپ کے اس قیام کا مقصد امر بالمعروف و نہی عن المنکر تھا ۔ آپنے ایک مقام پر بیان فرمایا کہ میرا مقصد امر بالمعروف و نہی عن المنکرہے۔ایک دوسرے مقام پر بیان فرمایا کہ : اے اللہ! میں امربالمعروف ونہی عن المنکر کو بہت دوست رکھتا ہے۔

(4) حقیقی اور ظاہری مسلمانوں کے فرق کو نمایاں کرنا:

آزمائش کے بغیر سچے مسلمانون، معمولی دینداروںا ور ایمان کے جھوٹے دعویداروں کو پہچاننا مشکل ہے۔ اور جب تک ان سب کو نہ پہچان لیا جائے، اس وقت تک اسلامی سماج اپنی حقیقت کا پتہ نہیں لگاسکتا۔ کربلا ایک ایسی آزمائش گاہ تھی جہاں پر مسلمانوں کے ایمان، دینی پابندی  و حق پرستی کے دعووں کوپرکھا جا رہا تھا۔ امام علیہ السلام نے خود فرمایا کہ لوگ دینا پرست ہیں جب آزمائش کی جاتی ہے تودیندار کم نکلتے ہیں۔

(5) عزت کی حفاظت کرنا:

حضرت امام حسین علیہ السلام کا تعلق اس خاندان سے ہے، جو عزت وآزادی کا مظہر ہے۔ امام علیہ السلام کے سامنے دو راستے تھے، ایک ذلت کے ساتھ زندہ رہنا اور  دوسرا  عزت کے ساتھ موت کی آغوش میں سوجانا۔ امام نے ذلت کو پسند نہیں کیا اور عزت کی موت کو قبول کرلیا۔ آپ نے فرمایا ہے کہ :  ابن زیاد نے مجھے تلوار اور ذلت کی زندگی کے بیچ لا کھڑا کیا ہے، لیکن میںذلت کوقبول کرنے والا نہیں ہوں۔

(6) طاغوتی طاقتوں سے  جنگ:

امام حسین علیہ السلام کی تحریک طاغوتی طاقتوں کے خلاف تھی۔ اس زمانے کا طاغوت یزید بن معاویہ تھا۔ کیونکہ امام علیہ السلام نے اس جنگ میں پیغمبراکرم (ص) کے قول کو سند کے طور پر پیش کیا ہے کہ ” اگر کوئی ایسے ظالم حاکم کو دیکھے جو اللہ کی حرام کردہ چیزوں کو حلال ا ور اس کی حلال کی ہوئی چیزوں کوحرام کررہا ہو،  تواس پر لازم ہے کہ اس کے خلاف آواز اٹھائے اور اگر وہ ایسا نہ کرے تو اسے اللہ کی طرف سے سزا دی جائے گی۔“

(7) دین پر ہر چیز کو قربان کردینا چاہئے:

دین کی اہمیت اتنی زیادہ ہے کہ اسے بچانے کے لئے ہر چیز کو قربان کیا جاسکتا ہے۔ یہاں تک کہ اپنے ساتھیوں ،بھائیوں اور اولاد کو بھی قربان کیا جاسکتا ہے۔ اسی لئے امام علیہ السلام نے شہادت کو قبول کیا۔ اس سے معلوم ہوتا ہے کہ دین کی اہمیت بہت زیادہ اور وقت پڑنے پر  اس کو بچانے کے لئے سب چیزوں کو قربان کردینا چاہئے۔

(8) شہادت کے جذبے کو زندہ رکھنا:

جس چیز پر دین کی بقا، طاقت، قدرت و عظمت کا دارومدار ہے  وہ جہاد اور شہادت کا جذبہ ہے۔ حضرت امام حسین علیہ السلام نے دنیا کو یہ بتانے کے لئے کہ دین فقط نماز روزے کا ہی نام نہیں ہے یہ خونی قیام کیا ،تاکہ عوام میں جذبہٴ شہادت زندہ ہو اور عیش و آرام کی زندگی کا خاتمہ ہو۔ امام حسین علیہ السلام نے اپنے ایک خطبہ میں ارشاد  فرمایاکہ :  میں موت کو سعادت سمجھتا ہوں۔ آپ کا یہ جملہ دین کی راہ میں شہادت کے لئے تاکید ہے۔

(9)اپنے ہدف پرآخری دم تک  باقی رہنا:

جو چیز عقیدہ کی مضبوطی کو ظاہر کرتی ہے، وہ ہے اپنے  ہدف پر آخری دم تک باقی رہنا۔ امام علیہ السلام نے عاشورا کی پوری تحریک میںیہ ہی کیا ،کہ اپنی آخری سانس تک اپنے ہدف پر باقی رہے اور دشمن کے سامنے  تسلیم نہیں ہوئے۔ امام علیہ السلام نے امت مسلمہ کو ایک بہترین درس  یہ دیا کہ حریم مسلمین سے تجاوز کرنے والوںکے سامنے ہرگز نہیں جھکنا  چاہئے۔

(10)جب حق کے لئے لڑو تو ہر طبقہ سے کمک حاصل کرو:

کربلا سے، ہمیں یہ سبق ملتا ہے کہ اگر سماج میں اصلاح یا انقلاب منظور نظر ہو تو سماج میں موجود ہر س طبقہ سے مدد حاصل کرنی چاہئے۔ تاکہ ہدف میں کامیابی حاصل ہو سکے۔امام علیہ السلام کے ساتھیوں میں جوان، بوڑھے، سیاہ سفید، غلام آزاد سبھی طرح کے لوگ موجود تھے۔

(11) افراد کی قلت سے گھبرانا نہیںچاہئے :

کربلا ،امیر المومنین حضرت علی علیہ السلام کے اس قول کی مکمل طور پر جلوہ گاہ ہے کہ ”حق و ہدایت کی راہ میں افراد کی تعدا د کی قلت  سے نہیںگھبرانا چاہئے۔“  جو لوگ اپنے ہدف پر ایمان رکھتے ہیں ان کے پیچھے بہت بڑی طاقت ہوتی ہے۔ ایسے لوگوں کو اپنے ساتھیوں کی تعداد کی قلت سے نہیں گھبرانا چاہئے اور نہ ہی ہدف سے پیچھے ہٹنا چاہئے۔ امام حسین علیہ السلام اگر تنہا بھی رہ جاتے تب بھی حق سے دفاع کرتے رہتے اور اس کی دلیل آپ کا وہ قول ہے جو آپ نے شب عاشور اپنے ساتھیوں کو مخاطب کرتے ہوئے فرمایاکہ آپ سب جہاں چاہو چلے جاؤ یہ لوگ فقط میرے -----۔

(12)ایثار کے ساتھ سماجی تربیت کوملا دینا:

کربلا ،تنہا جہاد و شجاعت کا میدان نہیں ہے بلکہ سماجی تربیت و  وعظ ونصیحت کا مرکز بھی ہے۔ تاریخ کربلا میں امام حسین علیہ السلام کا یہ پیغام  پوشیدہ ا ہے۔ امام علیہ السلام نے شجاعت، ایثار اور اخلاص کے سائے میں اسلام کو نجات دینے کے ساتھ لوگوں کو بیدار کیا اور ان کی فکری و دینی سطح کو بھی بلند کیا،تاکہ یہ سماجی و جہادی تحریک ،اپنے نتیجہ کو حاصل کرکے نجات بخش بن سکے۔

(1۳) تلوار پر خون کوفتح:

مظلومیت سب سے اہم اسلحہ ہے۔ یہ احساسات کو جگاتی ہے اور واقعہ کو جاودانی بنادیتی ہے۔ کربلا میں ایک طرف ظالموں کی ننگی تلواریں تھی اور دوسری طرف مظلومیت۔ ظاہراً امام علیہ السلام اور آپ کے ساتھی شہید ہو گئے۔ لیکن کامیابی انھیں کو حاصل ہوئی۔ ان کے خون نے جہاں باطل کو رسوا کیا وہیں حق کو مضبوطی بھی عطا کی۔ جب مدینہ میں حضرت امام سجاد علیہ السلام سے ابراہیم بن طلحہ نے سوال کیا کہ کون جیتا اور کون ہارا؟  تو آپ نے جواب دیا کہ اس کا فیصلہ تو نماز کے وقت ہوگا۔

(14) پابندیوں سے نہیں گھبرانا چاہئے:

کربلا کا ایک درس یہ بھی ہے کہ انسان کو اپنے عقید و ایمان پر قائم رہنا چاہئے۔ چاہے تم پر فوجی و اقتصادی پابندیاں ہی کیوں نہ لگی ہوں۔ امام علیہ حسین السلام پر تمام پابندیاں لگی ہوئی تھی۔ کوئی آپ کی مدد نہ کرسکے اس لئے آپ کے پاس جانے والوں پر پابندی تھی۔ نہر سے پانی لینے پر پابندی تھی۔ مگر ان سب پابندیوں کے ہوتے ہوئے بھی کربلا والے نہ اپنے ہدف سے پیچھے ہٹے اور نہ ہی دشمن کے سامنے جھکے۔

(15) نظام :

حضرت امام حسین علیہ السلام نے اپنی پوری تحریک کو ایک نظام کے تحت چلایا۔ جیسے ،بیعت سے انکار کرنا، مدینہ کو چھوڑ کر کچھ مہینے مکہ میں رہنا، کوفہ و بصرے کی کچھ شخصیتوں کو خط لکھ کر انہیں اپنی تحریک میں شامل کرنے کے لئے دعوت دینا۔ مکہ، منیٰ اور کربلا کے راستے میں تقریریں کرنا وغیرہ۔ ان سب کاموںکے ذریعہ امام علیہ السلام اپنے مقصد کو حاصل کرنا چاہتے تھے۔ عاشورا کے قیام کا کوئی بھی جز بغیر تدبیر کے پیش نہیں آیا۔ یہاں تک کہ عاشور کی صبح کو امام علیہ السلام نے اپنے ساتھیوں کے درمیان جو ذمہ داریاں تقسیم کی تھیں وہ بھی ایک نظام کے تحت تھیں۔

(16) خواتین کے کردار سے  استفادہ:

خواتین نے اس دنیا کی بہت سی تحریکوں میں بڑا اہم کردار ادا کیا ہے۔ اگر پیغمبروں کے واقعات پر نظر ڈالی جائے تو حضرت عیسیٰ ، حضرت موسیٰ، حضرت ابراہیم علیہم السلام------ یہاں تک کہ پیغمبر اسلام (ص) کے زمانے کے واقعات میں بھی خواتین کا کردار بہت موثر رہا ہے۔ اسی طرح کربلا کے واقعات کو جاوید بنانے میں بھی حضرت زینب سلام اللہ علیہا، حضرت سکینہ علیہا السلام، اسیران اہل بیت اورکربلا کے دیگر شہداء کی بیویوں کا اہم کردار رہا ہے۔ کسی بھی تحریک کے پیغام کو عوام تک پہونچانا بہت زیادہ اہمیت کا حامل ہے ۔ کربلا کی تحریک کے پیغام کو عوام تک اسیران کربلا نے  ہی پہنچایا ہے۔

(17)میدان جنگ میں بھی  یاد  خدا:

جنگ کی حالت میں بھی اللہ کی عبادت ا ور اس کے ذکرکو نہیں بھولنا چاہئے۔  میدان جنگ میں بھی عبادت و یادخدا ضروری ہے۔ امام حسین علیہ السلام نے شب عاشور دشمن سے جو مہلت لی تھی، اس کا مقصدتلاوت قرآن کریم ، نماز اور اللہ سے مناجات تھا۔ اسی لئے اپنے فرمایاتھاکہ میں نماز کو بہت زیادہ دوست رکھتا ہوں۔ شب عاشور آپ کے خیموں سے پوری رات عبادت و مناجات کی آوازیں آتی رہیں۔ عاشور کے دن امام علیہ السلام نے نماز ظہر کو اول وقت پڑھا۔ یہی نہیں بلکہ اس پورے سفر میں حضرت زینب سلام اللہ علیہا کی نماز شب بھی قضا نہ ہوسکی ، چاہے آپ کو بیٹھ کر ہی نماز کیوں نہ پڑھنی پڑی ہو۔

(18) اپنی ذمہ داریوں کو پورا کرنا:

سب سے اہم بات انسان کا اپنی ذمہ داریوں کو پورا کرنا ہے۔ چاہے اس ذمہداری کو نبہانے میں انسان کو ظاہری طور پر کامیابی نظر نہ آئے۔ اور یہ بھی ہمیشہ یاد رکھنا چاہئے کہ انسان کی سب سے بڑی کامیابی اپنی ذمہ داری کوپورا کرنا ہے ، چاہے اسکا نتیجہ کچھ بھی ہو۔ حضرت امام حسین علیہ السلام نے بھی، اپنے کربلا کے سفر کے بارے میں یہی فرمایا تھاکہ جو اللہ چاہے گا بہتر ہوگا، چاہے میں قتل ہو جاؤں یا مجھے (بغیر قتل ہوئے) کامیابی مل جائے۔

(19) مکتب کی بقاء کے لئے قربانی:

دین کے معیار کے مطابق، مکتب کی اہمیت، پیروان مکتب سے زیادہ ہے۔ مکتب کو باقی رکھنے کے لئے حضرت علی علیہ السلام و حضرت امام حسین علیہ السلام جیسی معصوم شخصیتوں نے بھی اپنے خون و جان کو فدا کیا ہے۔ امام حسین علیہ السلام جانتے تھے کہ یزید کی بیعت  دین کے اہداف کے خلاف ہے لہٰذا بیعت سے انکار کردیا اور دینی اہداف کی حفاظت کے لئے اپنی جان قربان کردی، اور امت مسلمہ کو سمجھا دیا کہ مکتب کی بقا کے لئے مکتب کے چاہنے والوں کی قربانیاںضروری ہے۔ انسان کو یاد رکھنا چاہئے کہ یہ قانون فقط آپ کے زمانہ سے ہی مخصوص نہیں  تھا بلکہ ہر زمانہ کے لئے ہے۔

(20)  اپنے رہبر کی حمایت ضروری ہے:

کربلا ،اپنے رہبر کی حمایت کی سب سے عظیم جلوہ گاہ ہے۔ امام حسین علیہ السلام نے شب عاشور اپنے ساتھیوں کے سروں سے اپنی بیعت کو اٹھالیا تھااور فرمایا تھا جہاں تمھارا دل چاہے چلے جاؤ۔ مگر آپ کے ساتھی آپ سے جدا نہیں ہوئے اور آپ کو دشمنون کے نرغہ میں تنہا نہ چھوڑا۔ شب عاشور آپ کی حمایت کے سلسلہ میں حبیب ابن مظاہر اور ظہیر ابن قین کی بات چیت قابل غور ہے۔ یہاں تک کہ آپ کے اصحاب نے میدان جنگ میں جو رجز پڑہے ان سے بھی اپنے رہبر کی حمایت ظاہر ہوتی ہے ،جیسے حضرت عباس علیہ السلام نے فرمایا کہ اگر تم نے میران داہنا ہاتھ جدا کردیا تو کوئی بات نہیں، میں پھر بھی اپنے امام ودین کی حمایت کروں گا۔

مسلم ابن عوسجہ نے آخری وقت میں جو حبیب کو وصیت کی وہ بھی یہی تھی کہ امام کو تنہا نہ چھوڑنا اور ان پر اپنی جان قربان کردنیا۔

(21) دنیا ، خطرناک لغزش گاہ ہے:

دنیا کے عیش و آرام و مالو دولت کی محبت تمام سازشوںا ور فتناو فساد کی جڑہے۔  میدان کربلا میں جو لوگ گمراہ  ہوئے یا جنہوں نے اپنی ذمہ داریوں کو پورا نہیںکیا، ان کے دلوں میں دنیا کی محبت سمائی ہوئی تھی۔ یہ دنیا کی محبت ہی تو تھی جس نے ابن زیاد وعمر سعد کو امام حسین علیہ السلام کا خون بہانے پر آمادہ کیا۔ لوگوں نے شہر ری کی حکومت کے لالچ اور امیر سے ملنے والے انعامات کی امید پر امام علیہ السلام کا خون بہا یا۔ یہاں تک کہ جن لوگوں نے آپ کی لاش پر گھوڑے دوڑآئے انھوںنے بھی ابن زیاد سے اپنی اس کرتوت کے بدلے انعام چاہا۔ شاید اسی لئے امام حسین علیہ السلام نے فرمایا تھا کہ لوگ دنیا پرست ہوگئے ہیں، دین فقط ان کی زیانوں تک رہ گیا ہے۔ خطرے کے وقت وہ دنیا کی طرف دوڑنے لگتے ہیں۔ چونکہ امام حسین علیہ السلام کے ساتھیوں کے دلوں میں دنیا کی ذرا برابربھی محبت نہیں تھی ،اس لئے انھوں نے بڑے آرام کے ساتھ اپنی جانوں کو راہ خدا میں قربان کردیا۔ امام حسین علیہ السلام نے عاشور کے دن صبح کے وقت جو خطبہ دیا اس میں بھی دشمنوں سے یہی فرمایا کہ تم دنیا کے دھوکہ میں نہ آجانا۔

(22) توبہ کا دروازہ ہمیشہ کھلا ہے:

توبہ کا دروازہ کبھی بھی بند نہیں ہوتا، انسان جب بھی توبہ کرکے صحیح راستے پر آ جائے بہتر ہے۔ حر جو امام علیہ السلام کو گھیرکر کربلا کے میدان میں لایا تھا، عاشور کے دن صبح کے وقت باطل راستے سے ہٹ کر حق کی راہ پر آگیا۔ حر امام حسین علیہ السلام کے قدموں پر اپنی جان کو قربان کرکے، کربلا کے عظیم ترین شہیدوں میں داخل ہوگیا۔ اس سے معلوم ہوتا ہے کہ ہر انسان کے لئے ہر حالت میں اور ہر وقت توبہ کا دروازہ کھلا ہے۔

(23) آزادی:

کربلا ،آزادی کا مکتب ہے اور امام حسین علیہ السلام اس مکتب کے معلم ہیں۔ آزادی وہ اہم چیز ہے جسے ہر انسان پسندکرتا ہے۔ امام علیہ السلام نے عمر سعد کی فوج سے کہا کہ اگر تمھارے پاس دین نہیں ہے اور تم قیامت کے دن سے نہیں ڈرتے ہو تو کم سے کم آزاد انسان بن کر تو جیو۔

(24) جنگ میں ابتداء نہیں کرنی چاہئے:

اسلام میں جنگ کو اولویت نہیں ہے۔ بلکہ جنگ، ہمیشہ انسانوںکی ہدایت کی راہ میں آنے والی رکاوٹ ک دور کرنے کے لئے کی جاتی ہے۔ اسی لئے پیغمبر اسلام (ص) حضرت علی علیہ السلام و امام حسین علیہ السلام نے ہمیشہ یہی کوشش کی، کہ بغیر جنگ کے معاملہ حل ہوجائے۔ اسی لئے  آپنے کبھی بھی جنگ میں ابتداء نہیں کی۔ امام حسین علیہ السلام نے بھی یہی فرمایا تھا کہ ہم ان سے جنگ میں  ابتداء نہیں کرےں گے۔

(25)انسانی حقوق کی حمایت:

کربلا جنگ کا میدان تھا ،مگر امام علیہ السلام نے انسانوں کے مالی حقوق کی مکمل حمایت کی۔ کربلا کی زمین کو اس کے مالکوں سے خرید کر وقف کیا۔ امام علیہ السلام نے جو زمین خریدی اس کا حدود اربع  چارضر ب چار میل تھا۔ اسی طرح امام علیہ السلام نے عاشور کے دن فرمایا کہ اعلان کردو کہ جو انسان مقروض ہو وہ میرے ساتھ نہ رہے۔

(26)  اللہ سے راضی رہنا:

انسان کا سب سے بڑا کمال، ہر حال میں اللہ سے راضی رہنا ہے ۔ امام حسین علیہ السلام نے اپنے خطبے میں فرمایا کہ ہم اہل بیت کی رضا وہی ہے جو اللہ کی مرضی ہے۔ اسی طرح آپ نے زندگی کے آخری لمحہ میں بھی اللہ سے یہی مناجات کی کہ پالنے والے! تیرے علاوہ کوئی معبود نہیں ہے اور میں تیرے فیصلے پر راضی ہوں۔



تاريخ : Sat 3 Jan 2009 | 11 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |
گلگت بلتستان سکردو میں حکومت بے روزگاری کے خاتمے کے لئے خصوصی اقدامات کر یں۔سکردو کے اےک بے روزگار ایکشن کمیٹی کے ا ےک وفد نے کے پی این سے انٹرویو دےتے ہوئے کہا ہے کہ اس وقت گلگت بلتستان میں بے روزگاری میں تیزی سے اضافہ ہور ہا ہے۔اس کے علاوہ مہنگائی، غربت اور ذہنی امراض ایک اور مسئلہ ہے۔ اس وقت موجودہ حکومت کو چاہےے کہ وہ سب سے پہلے گلگت بلتستان میں بے روزگاری کے خاتمے کے لئے خصوصی کام کرے۔اس قت بلتستان میں بے روزگاری کے شرح میں کافی حد تک اضافہ ہو رہا ہے۔اور ساتھ ہی ساتھ سرکاری محکموں کے اندر خانہ بھرتیوں کا سلسلہ بھی جاری ہے ۔ جس کی وجہ سے حقداروں کو حق نہیں ملتا۔اس وقت قابل اور ذہین افراد روزگار کی تلاش مین ذلیل ہو رہا ہے ۔ لےکن نااہل افراد بھرتی ہو رہیں۔ اس قت سرکاری محکموں میں عارضی ملازمین کی تعداد بہت زیاد ہ ہے ایسی عارضی ملازمین جو کہ اس وقت سخت مہنگائی میں صرف 250روپے سے 500تک کے لئے سرکاری محکموں میں نوکری کر رہا ہے۔ جبکہ وزیر اعظم پاکستان کی جانب سے اعلان کیا تھا کہ سرکاری دفتروں میں کارم کرنے والے ملازمین کی تنخواہ چھے ہزار روپے سے کم نہیں ہوگا۔لےکن ابھی تک اس اعلان کا اطلاق گلگت بلتستان کے سرکاری دفاتر مین کام کرنے والے ملازمین کو وہ مراعات اور اضافی تنخواہوں سے محروم ہیں اس کے علاوہ گلگت بلتستان مین بے روزگاری کی روک تھام کے لئے حکومت فوری طور پر کارخانے اور فیکٹریاں لگانے کی منصوبے تیار کیا جائے تاکہ گلگت بلتستان سے بے روزگاری اور مہنگائی اور غربت کا خاتمہ ہو سکے۔

تاريخ : Sat 3 Jan 2009 | 11 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |
امام جمعہ والجماعت مرکزی امامیہ مسجد گلگت آغا راحت حسین الحسینی نے کہا ہے کہ علاقے میں امن وامان کے مکمل قیام کیلئے تمام فرقوں سے تعلق رکھنے والے افراد کو اتحاد واتفاق کا عملی مظاہرہ کرنے کی ضرورت ہے تا کہ شرپسند عناصر کے مذموم مقاصد خاک میں مل سکیں انہوں نے نماز جمعہ کے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ تیس سال قبل علاقے کے عوام آپس میں شیروشکر تھے اور ایک دوسرے کے مذہبی اجتماعات میں گرمجوشی سے شرکت کرتے تھے مگر ملک دشمن اور اسلام دشمن عناصر نے مذہبی فسادات کرا کر ایک دوسرے سے دور کرانے کی کوشش کی انہوں نے کہا کہ ملک بھر میں جب فسادات ہو رہے تھے تو یہاں کے عوام امن اور بھائی چارے سے رہ رہے تھے مگر محرم الحرام سے چند روز قبل ایک اعلیٰ سرکاری افسر کو قتل کرا کر ایک دفعہ پھر اس علاقے کو آگ لگانے کی کوشش کی گئی مگر اس علاقے کے تمام باشعور عوام سمجھ چکے ہیں کہ علاقے میں فساد کرانے والے مقامی افراد نہیں بلکہ اسلام دشمن اور استعمار کے ایجنٹ ہیں آغا راحت نے کہا کہ آج علاقے میں بسنے والے تمام شیعہ ، سنی اور اسماعیلیوں کو تیس سال قبل کے اتحاد کو دوبارہ زندہ کرنے کی ضرورت ہے اور علاقے میں ملک اور اسلام کے خلاف بننے والی سازشوں کو پارہ پارہ کر کے آپس میں اتحاد پیدا کر کے استعماری طاقتوں کے مقاصد کو خاک میں ملایا جائے انہوں نے گزشتہ روز جیل میں پیش آنیوالے واقعے کی مذمت کرتے ہوئے مطالبہ کیا کہ ملک کی دیگر جیلوں کی طرح گلگت میں بھی تمام فرقوں سے تعلق رکھنے والے قیدیوں کو اپنی مذہبی رسومات منانے کی اجازت دی جائے

تاريخ : Sat 3 Jan 2009 | 11 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

اے میرے اہل غزہ ! میں شرمندہ ہوں تم سے ان دنوں کاروبار بہت خراب ہے تمہیں تو پتا ہی ہے نا دنیا بھر میں مندی چل رہی ہے بینک بند ہورہے ہیں ،بس میں بھی ان دنوں اسی کا شکار ہوں پچھلے ہی دنوں شیئرز کی قیمتیں اتنی گرگئیں کہ میرا پچھلے دس برسوں کا منافع ڈوب گیا ۔ بس اب صرف دو فیکٹریوں پر گزارہ ہے ۔ اٹھارہ گھنٹے محنت کرتاہوں تب جا کر گھر کے 2لاکھ روپے ماہانہ اخراجات پورے ہو پاتے ہیں میں تم سے شرمندہ ہوںکیا کروں ؟ ذرا اس کاروبار سے فرصت پاﺅں تو تمہاری طرف بھی متوجہ ہوں ناں ؟ میرے پیارے خالد مشعل ! مجھے تمہیںپرسہ دینا ہے تمہارے چار سو بھائی چاردنوں میں مارے گئے سچ پوچھو میں بہت دکھی ہوں مگر کیا کروں میرے تو اپنے دوبھائیوں کی نوکریوں کا مسئلہ ہے ۔ ایک کو ایم بی اے کر وایا تھا دوسرے کو انجینئر بنایا تھا زندگی کے پچھلے 30برس اسی جدوجہد کی نذر ہو گئے، بس ذرا ان کی نوکریوں کابندوبست ہوجائے ۔یقین کرو میں فلسطینیوں کے لیے ہر مظاہرے میں شریک ہوں گا بس تھوڑی سی مہلت اوردے دو! میرے معصوم فلسطینی شہیدو! تمہاری گرد آلود کٹی پھٹی لاشیں دیکھ کر یقین کرو میری آنکھیں آنسوﺅں سے بھیگ بھیگ جاتی ہیں۔ سنا ہے اب مرد ہ خانوں میں لاشیں رکھنے کی جگہ بھی نہیں بچی ! سنا ہے ایک اسرائیلی کے بدلے اب 230فلسطینیوںکی لاشیں گرائی جارہی ہیں ۔ میں تم سے شرمندہ ہوں ،یقین کرو میں ہرنماز کے بعد پانچ منٹ تک تمہارے لئے ،صرف تمہارے لئے دعائیں مانگتاہوں کل ہی میں گڑگڑا کر رو رو کر التجا کر رہا تھا کہ اے اللہ ،اسرائیل کے ٹینکوں میں کیڑے پڑ جائیں ، ان کے جہاز خود بخود گر جائیں ،ان کے ہاتھ ٹوٹ جائیں ،یہ برباد ہو جائیں۔اور ہاں آج سے میں نے دعائیں مزید بڑھانے کا فیصلہ بھی کیا ہے۔ میرے بھائی وزیر اعظم فلسطین اسماعیل ہانیہ! میں آپ سے شرمندہ ہوں میرے حکمرانوں کی کچھ مجبوریاں ہیںناں ،اب آپ خود ہی سوچیں بھلا ہم امریکا اور اسرائیل کے خلاف کیا کر سکتے ہیں ،میرا مشورہ ہے کہ آپ لوگ بھی اسرائیل سے کوئی ڈےل کر لےں،ہاں ۔ڈیل کرلیں ۔ اے شیخ احمد یاسین شہید!آ پ کی روح سے شرمندگی کے سے ساتھ معذرت ! ہم ان دنوں اپنی ایک شہیدہ کا سوگ منارہے ہیں ۔مجھے معلوم ہے آپ نے ایک عظیم مقصد کے لیے وقت کے سب سے بڑے شیطان کے سامنے کلمہ حق کہتے ہوئے جان دی تھی ،مگر کیا کروں حالات اب بدل گئے ہیں ،میری نیک تمنا ئیں آپ کی مظلوم قوم کے ساتھ ہیں،میرے ملک کے وزیر اعظم ، میرے صدر ،میرے علماءمیری سیاسی جماعتوں کے رہنما سب نے آپ کی قوم کے حق میں سخت بیانات دیے ہیں ،اسرائیل کے اقدامات کو شدت سے مسترد بھی کیا ہے ،یقین کریں جوہمارے بس میں ہو گا وہ ہم کریں گے ۔ مگر میں شرمندہ نہیں ہوں ! میرے خون میں لتھڑے پیارے بچے، میری روتی ہوئی فلسطینی ماں ، میرے بھائی خالد مشعل ، میرے عزیز اسماعیل ہانیہ، میرے شہید شیخ، میں شرمند ہ نہیں ہوں ! کیونکہ مےں تحرےک اسلامی کا کارکن ہوں،مجھے نہ تو کوئی کیریئر بنانا ہے ،نہ کوئی کاروبار سیٹ کرنا ہے، میری کوئی مجبوری نہیں ،مجھے وقت کے کسی طاغوت کا کوئی خوف نہیں ،میں تمہارے ساتھ ہوں اور یقین کرو میں پوری تیاری کررہاہوں ،جلد تم مجھے اپنے ساتھ پاﺅ گے پھر ہم اور تم سب انصار اللہ بن کر ارض مقدس کوناپاک یہود ی وجود سے پاک کریں گے ۔امام مہدی ہمارے قائد ہوں گے ،حضرت عیٰسی ؑ ہمارے سالار جنگ ہونگے پھر ہم اس سرزمین پر گرنے والے ایک ایک قطرہ خون کا انتقام لیں گے ،اس وقت نسلوں کی بربادی کے ذمہ دار یہودیوں کا قتل مباح ہوجائے گا ،انہیں چن چن کر درختوں اور چٹانوں کی اوٹ سے نکال نکال کر موت کے گھاٹ اتارا جائےگا اور اس زمین کو ان کے ناپاک وجود سے پاک کردیا جائے گا ۔ میرے عزیز فلسطینی بھائی تم غمزدہ نہ ہو دنیا بھر کی اسلامی تحریکیں اس عظیم معرکے کے لئے انصار اللہ تیار کررہی ہیں ۔تمہیں شاید معلوم نہ ہو میرے اس ملک میں روزانہ ہزاروں مائیں اوربہنیں اپنے گھروں سے نکل کر گھر گھر جاتی ہیں ،دردر پر دستک دیتی ہیں ،درس قرآن کرتیں اور ماﺅں کو اپنے بچوں کو انصار اللہ بنانے پر آمادہ کرتی ہیں،وہ سب مل کر ایک قوت تیار کریں گی ۔جو خےبر خےبر ےا ےہود ، جیش محمدﷺسوف ےعیود۔(خبر دار یہودیو‘ محمدﷺ کا لشکر بس آنے کو ہے ) پکاریں گی ۔ یہی نہیں میرے عزیز جمعیتوں والے، یہ پاسبان، یہ شباب ، یہ اخوان یہ سب اسی بڑے لشکر کی تیار ی ہی تو ہے جنہوں نے جلد فلسطین کارخ کرنا ہے ۔ میرے عزیز فلسطینیو ! بس ہمیں ذرا اپنے ملکوں میں اسرائیل کے ایجنٹوں سے نمٹ لینے دو ۔یہ ظالم جنہوں نے پوری امت مسلمہ کو یرغمال بنا رکھا ہے، یہ جو امت کی قوت کو مجتمع ہونے اور اس کی توانائیوں کو جدوجہد کے راستے پر آنے ہی نہیںدیتے ۔جن کی تہہ در تہہ سازشیں تقسیم درتقسیم کا ذریعہ ہیں بس ان سے جان چھوٹنے کی دیر ہے ۔اسرائیل کانام دنیا کے نقشے سے کھرچ دیا جائےگا،انشاءاللہ۔ بس تم ےہ یادرکھو! قومیں کبھی قتل عام سے نہیں مرتیں ۔ ہاں قومیںتب مر جاتی ہیں جب ان کے نظریے ان کے دلوں ، گلیوں اور بازاروں میں مرجاتے ہےں ،بس تم شیخ احمد یاسین کا یاد کرایا ہوا سبق نہ بھولنا ،اگر تم نے یہ کرلیا تو مجھے یقین ہیں بہادر فلسطینی مائیں ایسے بیٹے جنتی رہیں گی جو اسرائیل کومنہ توڑ جواب دیںگے اور انصار اللہ بنیں گے ۔ انشاءاللہ

 زبیر منصوری

 



تاريخ : Sat 3 Jan 2009 | 11 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

اشرار و نواصب تروریست موسوم به طالبان که از مناطق مختلف به منطقه شیعه‏نشین "کرم ایجنسی" لشگرکشی کرده‏اند دو روز پیش از نواصب محلی خواستند که به هریک از آنها ـ که با طناب نواصب محلی به چاه کرم ایجنسی فرو رفته‏اند ـ مبلغ یکصد هزار روپیه پول نقد پرداخت کنند. آنها همچنین اعلام کرده‏اند که هر قبیله سنی باید 100 مرد مسلح را در اختیار به اصطلاح جنگجویان طالبان قرار دهد.

به گزارش شيعه آنلاين به نقل از ابنا، تروریست‏ها همچنین به یک موضع شیعیان در منطقه "تبی مقام" واقع در مجاورت روستاهای شیعه نشین "انجیری" حمله کردند و آن را تصرف نمودند ؛ ولی امروز بعد از ظهر جوانان شیعه موضع مذکور را با به هلاکت رساندن  حدود 25 نفر از تروریست‏ها بازپس گرفتند. طالبان و ناصبیان محلی پس از فرار از این موضع، مقادیر زیادی سلاح و مهمات نیز برجای گذاشتند.

در همین حال هیأتی متشکل از زعماء قبائل شیعه و سنی مناطق "تیراه"، "کوهات" و "هنگو" که تقریبا 10 روز پیش به منطقه اعزام شده بود با رهبران شیعه در شهر "پاراچنار" و با رهبران قبایل سنی در شهرک "صده" دیدار و گفتگو کرد. مذاکرات هیأت با شیعیان در همان دو روز اول به نتیجه رسید و همزمان دولت نیز اعلام کرد که چنانچه طرفین در این منطقه تن به ایجاد صلح و برقرار آتش‏بس ندهند نیروهای دولتی علیه هر دو طرف درگیر وارد عمل خواهند شد ؛ ولی با این وجود سران قبایل سنی پاسخ قانع‏کننده‏ای به هیأت نداد و هیأت مزبور دولت از دولت مهلت بیشتری درخواست نمود. ولی با گذشت زمان تعیین شده و ضرب‏الاجل دولت و مهلت درخواستی سه روزه، سران قبایل سنی به هیأت اعلام کردند که با توجه به سلطه نواصب و گروه طالبان بر اوضاع، این قبایل توان سپردن هیچگونه تعهدی را به دولت ندارند و اکنون هیچ کاری از آنها ساخته نیست! در پی این اعلام،  هیأت اعزامی به "اسلام آباد" بازگشت ولی دولت هنوز هیچ اقدامی علیه تروریست‏ها و طالبان صورت نداده است. برخی سازمان های امنیتی پاکستانی به جای عمل به وظایف رسمی خود علیه شیعیان وارد جنگ تبلیغاتی شده اند و شایع کرده‏اند که «شیعیان از کمک‏های تسلیحاتی دولت افغانستان برخوردارند و دخالت افغانستان باعث ادامه درگیری در این منطقه شده است». در واکنش به این شایعه، «دبیر انجمن حسینی پاراچنار» ضمن رد القائات سازمان‏های اطلاعاتی پاکستان گفت: «دولت افغانستان که حتی قادر نیست امنیت را در پایتخت این کشور "کابل" برقرار کند چگونه می‏تواند در جای دیگری به دیگران کمک کند که با طالبان مقابله کنند... سازمان‏های اطلاعاتی ـ که اشاره ای به لشگرکشی‏های تروریست‏ها از مناطق مختلف به منطقه کرم ایجنسی نمی‏کنند ـ برای توجیه شکست‏های خود از طالبان در این منطقه دست به اینگونه شایعه‏پراکنی‏ها زده‏اند».

قابل ذکر است که سازمان های اطلاعاتی پاکستان که آتش بیار این معرکه و آغازگر جنگ و ادامه محاصره پاراچنار شناخته می‏شوند، هرگز انتظار نداشتند که شیعیان تا این مدت با حملات تروریست‏ها، محاصره و گرسنگی و نبود امکانات دست و پنجه نرم کنند و منطقه خود را از تعرضات و تجاوزها حفظ کنند.

به اعتراف «سلیم خان» فرماندار اسبق و «سپهبد بازنشسته علی محمدجان اورکزئی» حکمران پیشین ایالت سرحد، قرار بود نقشه پاراچنار در سال 2007 با وارد شدن "آفات غیرطبیعی" تغییر کند! آنها به اندازه‏ای از اقدامات آتی و نتائج آن مطمئن بودند که آنچه طراحی شده بود را براحتی بر زبان آوردند! اما اینک «ظهیرالاسلام» فرماندار پیشین منطقه - که انتظار داشت شیعیان هرچه زودتر شکست بخورند و جنگ «نتایج مطلوب» را برای او همفکرانش در پیشاور و اسلام آباد به دنبال داشته باشد ـ با مشاهده مقاومت شیعیان مدعی شده است که این جنگ به دلیل دخالت‏های خارجی ادامه پیدا کرده است.



تاريخ : Thu 9 Oct 2008 | 10 AM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

سکردو ٹاﺅن ایریا میں زیر تعمیر بہت سارے منصوبے ابھی تک التوا کا شکار ہے۔ جس کیو جہ سے عوام کو کافی مشکلات کا سامنا ہے۔اور ساتھ ہی ساتھ ترقیاتی فنڈز میں کٹوتی کی وجہ سے ٹھیکیدار برادری کو کافی مشکلات کا سامنا ہے اس لئے موجودہ حکومت شمالی علاقوں کے ترقیاتی سالانہ فنڈز میں اضافہ کیا جائے۔عوامی حلقے۔ صدر جنرل پرویز مشرف کے دور حکومت میں شمالی علاقہ جات میں بھٹو کے بعد مشرف کے دور میں کافی ترقی ہوئی۔شمالی علاقہ جات میں سب سے زیادہ ترقیاتی کام اور عوام کو زبان ذوالفقار علی بھٹو نے دی اس کے بعد شمالی علاقہ جات کے عوام کو دوسرے تمام حقوق اور علاقے کی ترقی میں صدر جنرل مشرف کا ہاتھ رہا۔ اس سے قبل شمالی علاقہ جات میں اتنی ترقی نہیں ہوئی جو افواج پاکستان کے دور میں ہوا۔صدر مشرف کے دور حکومت میں بہت سارے ترقیاتی منصوبہ زیر تعمیر تھے اس کے شمالی علاقہ جات کے سالانہ ترقیاتی فنڈز کا دوگنا اضافہ کر دیا گیا اور اس دور میں بڑے بڑے میگا پراجیکٹ پر کام ہوا۔جس میں نلتر بجلی گھر گلگت سکردو روڈ سد پارہ ڈیم کے علاوہ بہت سارے میگا پراجیکٹ شامل تھے۔اس کے دور حکومت میں شمالی علاقہ جات میں ٹھیکیداروں کو گھر تعمیر کرنے والے افراد کو مزدور نہیں ملا چونکہ جگہ جگہ منصوبوں پر کام جاری تھا اور ساتھ ہی ساتھ اس وقت اےک مزدور 250روپے سے 300روپے روزانہ مزدوری دےنے کے باوجود کام کرنے کو تیار نہیں تھے۔چونکہ اس مزددور کو وہ مزدوری مل رہا تھا،ےہ ٹھیکیدار خوش تھے چونکہ ہر اےک کو بروقت پےمنٹ ہو رہا تھا۔ دوسری طرف تمام بے روزگار افراد خوش تھے ۔ ان افراد کو آئے اور سرکاری محکموں میں روزگار مل رہا تھا۔ صدر مشرف کے دور میں شمالی علاقہ جات میں بہت سارے نئے محکمے کھل گئے اور ان محکموں میں موجود خالی اسامیوں پر بے روزگاروں کو بھرتی کیا گیاا ور ان نئے کھلنے والے محکموں کو خصوصی بجٹ رکھا گیا لےکن آج روٹی کپڑا اور مکان کے نعرہ لگانے والی حکومت نے شمالی علاقہ جات میں کوئی شامل ترقیاتی کام نہیں کیا گیا۔صدر مشرف نے جو ترقیاتی فنڈز میں اضافہ کیا گیا آج اس حکومت نے اس فنڈز مین کمی کر دی ۔روٹی کپڑا اور مکان کے نعرہ لگانے والوں کے دور حکومت میں غریب عوام اےک وقت کی روٹی کو ترس رہا ہے۔ مسلم لیگ(ق) کے دور حکومت میں پٹرولیم مصنوعات میں کوئی خاطر خواہ اضافہ نہیں کیا گیا۔لےکن موجودہ حکومت میں بین الاقوامی سطح پر ےہ پٹرولیم مصنوعات میں کمی ہونے کے باوجود غریب عوام کو ان پٹرولےم مصنوعات میں کوئی کمی نہیں کیا گیا۔بلکہ غریب عوام کے ذرےعے پٹرولےم مصنوعات کے قرضہ ادا کر رہا ہے۔اس لئے شمالی علاقہ جات کے عوام نے موجودہ حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ شمالی علاقوں کے لئے سب سے پہلے آئےنی حقوق دے دوسرا شمالی علاقوں کے سالانہ بجٹ میں خاطر خواہ اضافہ کیا جائے۔اور شمالی علاقوں کے بے روزگار افراد کو روزگار فراہم کیا جائے۔اور شمالی علاقوں میں فوری طور پر میگا پراجیکٹ پر کام شروع کیا جائے اور جو غریب اور بے روزگار افراد جو ان افراد کو حکومت روٹی کپڑا اور مکان کا بندوبست کیا جائے۔




تاريخ : Thu 9 Oct 2008 | 10 AM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

اوضاع پاکستان رو به بهبود نیست و آنچه را در روزهای گذشته اتفاق افتاده نمی توان دموکراسی نام نهاد.

جریانی که سابق بر این کنار زده شده بود مجددا بازگشت کرده و استحکام و ثبات را از پاکستان گرفته است. این همان تفکر طالبانی بود که بعد از ماجرای 11 سپتامبر به دست پرویز مشرف کنار زده شد. اگرچه در سال های پس از واقعه 11 سپتامبر مشرف سعی کرد آن جریان را از میان بردارد ولی سرانجام این آتش زیر خاکستر شعله ور شد و دامن این ژنرال را که بی جهت برخی رسانه ها او را دیکتاتور می نامند گرفت.

باید بدانیم که دموکراسی در جوامعی چون پاکستان معنای خاص خودش را دارد. ما از کشوری سخن می گوییم که 70 درصد مردم آن بی سوادند و خیابان هایش با زباله دانی کشورهای پیشرفته تفاوتی ندارد. بنابراین نمی توان گفت این ظاهر که از فرهنگی باطنی خبر می دهد، در سیاست چیزی جدا از در و دیوارهای آن خواهد بود.

در ایامی که بی نظیر بوتو نخست وزیری پاکستان را بر عهده داشت نام علی زرداری بر دیواره های شهرهای این کشور با عنوان "آقای 10 درصد" نشسته بود؛ مقصود از این اطلاق این بود که او از هر پیمانکاری که با دولت قرارداد می بست به‌واسطه نفوذ همسرش مبلغ درصد را نصیب خود می کرد.

از سوی دیگر نواز شریف – در صورتی که به میدان رقابت بیاید – هم مردی است ثروتمند و متملک که بی کفایتی و ناکارآمدی اش را یک بار در جنگی که مشرف فرماندهی آن را بر عهده داشت نشان داد. بطور کلی در تاریخ پاکستان به ندرت مردی مثل مشرف را می توان سراغ گرفت. پرسش اینجاست که او چگونه پارلمان را منحل نکرد و همین پارلمان بود که بلای جان او شد؟ اگر او دیکتاتور بود جلوی انتخابات را می گرفت و مجلس را منحل می کرد؛ مگر دیکتاتورها این چنین عمل نمی کنند؟

پس مسئله دموکراسی در پاکستان مفهومی اعتباری است. آزادی ای که پرویز مشرف در اختیار رسانه های گروهی گذاشت به حدی بود که هر گذرنده ای به هنگام ایستادن در کنار کیوسک های روزنامه فروشی این کشور می توانست عکس های تظاهرات ضد مشرف و شعار "مرگ بر مشرف" منقوش روی پلاکاردهای تظاهرکنندگان را روی صفحه نخست ببیند و فضای آزاد مطبوعات را لمس کند. علاوه بر روزنامه ها تلویزیون این کشور نیز بارها برنامه هایی علیه او نشان می داد.
اصولا در کشورهایی مثل پاکستان نیاز به فردی مقتدر مثل مشرف همیشه احساس می شود؛ کسی که بتواند در بلوای قوم گرایی ها و بنیادگرایی ها و تا زمان پاگیری دموکراسی پایه های آن را تثبیت کند ولی متاسفانه برخی رسانه های ما هم او را ژنرال دیکتاتور می کنند. کسی مثل او در جایی نظیر پاکستان حکم چوبی را دارد که اگرچه آزادی را از نهال می گیرد اما اجازه نمی دهد نهال به چپ و راست خمیده شود و این امکان را به آن می دهد تا به حدی از بالندگی برسد که شما بتوانید چوب را از آن جدا کنید.

به اعتقاد من با رفتن پرویز مشرف آینده روشنی در انتظار پاکستان نخواهد بود به خصوص که پاکستانی ها تحت تاثیر عطوفت زدگی و علقه های دینی و نیز محبوبیت بی نظیر بوتو، متمایل به آقای 10 درصد شده اند. اینها نشانه عدم آگاهی جامعه است.

*دکتر محمد بقایی ماکان
محقق و دارنده نشان درجه اول علمی دولت پاکستان



تاريخ : Thu 4 Sep 2008 | 9 AM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

صدرمشرف واحد پاکستانی سیاسی لیڈرتھے جوگلگت بلتستان کے ہرکوچے سے واقف تھے گلگ بلتستان کے عوام میں صدر کے استعفےٰ سے مایوسی پیداہوگئی ہے مختلف عوامی حلقوں میں عوام نے صدر مشرف کے استعفےٰ پرافسوس کااظہار کرتے ہوئے کہاکہ مشرف پاکستان کی سیاست میں واحد رہنماتھے جن کوگلگت بلتستان کے کوچہ کوچہ کاعلم تھاباقی پاکستانی لیڈروں کومفصل طورپربتاناپڑتاتھاکہ گلگت بلتستان کوایک الگ حیثیت حاصل ہے ایسے لیڈران وزیرستان وغیرہ کوشمالی علاقہ جات کہتے تھے ان سیاسی قائدین کوشمالی علاقوں میں دوایسے خطے بھی ہیں جن کانام گلگت اوربلتستان ہے کوئی علم نہیںتھاعوام نے مزید کہاکہ صدرمشرف نے شمالی علاقہ جات کے لوگوں کےلئے گراں قدرخدمات انجام دئیے ہیں یہاںکے عوام ان کے احسانات کوکبھی نہیںبھولیںگے عوام نے مزید کہاکہ جہاں تک ہمارااندازہ ہے حکومت صدرکے ساتھ انتقامی کارروائی میں کامیاب ہوچکی ہے اوریہی مخلوط حکومت کاسب سے بڑاخواب بھی تھا۔


موضوعات مرتبط: اخبار بلتستان

تاريخ : Fri 22 Aug 2008 | 8 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

اسلام آباد ( جمیل نگری ) قومی اسمبلی نے شمالی علاقوں کو قومی دھارے میں لانے اوریہاں کے عوام کوملک کے دوسرے حصوں کی طرح حقوق اورمراعات دینے کابل کثرت رائے سے مسترد کردیا بل رکن قومی اسمبلی ماروی میمن نے پیش کیا تھا ماروی میمن نے بل پیش کرتے ہوئے کہاکہ شمالی علاقوں کے عوام اپنے پیدائشی حقوق سے محروم ہیں یہاں پسماندگی ہے ،غربت ہے اور بے روزگاری ہے اس لئے شمالی علاقوں کو قومی دھارے میںلانا ضروری ہوگیا ہے بل میں کہاگیا تھا کہ شمالی علاقوں کے عوام کو قومی دھارے میں لانے کے لئے ضروری ہے کہ ان علاقوں کو ملک کا پانچواں صوبہ بنایا جائے اوریہاں کے عوام کو قومی اسمبلی اورسینٹ میں نمائندگی دی جائے اس کے علاوہ انہیں خصوصی مراعات دی جائیں منگل کے روز قومی اسمبلی میں بل کی مخالفت کرتے ہوئے پیپلز پارٹی کے لیڈر اور چیرمین شمالی علاقہ جات قمرزمان کائرہ نے کہاکہ شمالی علاقوں کے عوام کو ملک کے دوسرے حصوں کے برابر حقوق دینے میں عالمی سطح پر رکاوٹیں ہیں مسئلہ کشمیر کی وجہ سے ان علاقوں کو صوبہ نہیں بنایا جاسکتا ہے یہ حساس معاملہ ہے اس پرسیاست نہیں کرنی چاہئے بل کی مخالفت کرتے ہوئے وزیر امورکشمیر وچیئرمین شمالی علاقہ جات قمرزمان کائرہ نے کہاکہ ماروی میمن متنازعہ علاقے کے ایشوز پرسیاست نہ کریں ان علاقوں کو ملک کے برابر مراعات دینے کے لئے سالانہ فنڈز کوبڑھا کرساڑھے 5ارب کردیا گیا ہے شمالی علاقہ جات کونسل کو اسمبلی کا درجہ دیا گیا ہے اوران کومزید اختیارات دے رہے ہیں اور آزاد کشمیر ہائی کورٹ کے برابر عدالتی اختیارت بھی دے دیں گے اور اسمبلی کومزید اختیارات دیں گے ماروی میمن نے کہا کہ آج پاکستان کی تاریخ کابرادن ہے پہلی دفعہ شمالی علاقہ جات کے عوام کا بل پیش ہوا ہے مجھے نہایت افسوس کے ساتھ کہنا پڑتا ہے کہ بل مسترد کردیاگیا یہ بل شمالی علاقہ جات کے محروم عوام کی امیدوں کامرکز ہے مسئلہ کشمیر اپنی جگہ پر ہے مگر اس بل کو کم از کم کمیٹی کے حوالے کیاجانا چاہیے تھا انہوں نے کہا کہ اس دور میں شمالی علاقہ جات کو مسلسل نظر انداز کیاجارہا ہے مسلم لیگ ق کے دورحکومت میں ان علاقوں کو پہلی مرتبہ اختیارات دئیے گئے قانون ساز کونسل کواسمبلی کادرجہ دیا گیا موجودہ حکومت کو ان علاقوں کی فکر نہیں ہے صدر پرویز مشرف نے ان علاقوں کو ترقی کی راہ پر ڈال دیا اورقانون سازی کاموقع دیا ماروی میمن نے وزیر اعظم کو مخاطب کرتے ہوئے کہاکہ وزیر اعظم کو ان علاقوں سے کوئی دلچسپی نہیں ہے محب وطن عوام کو کیوں نظر انداز کیاجارہا ہے اس موقع پر سپیکر نے رولنگ دیتے ہوئے کہا کہ آپ کو وزیراعظم کو مخاطب ہونے کا اختیار نہیں ہے متعلقہ وزیر کو مخاطب کریں بعد میں پارلیمنٹ ہاﺅس سے باہرصحافیوں کے گفتگو کرتے ہوئے قمر زمان کائرہ نے اپنے اس دعو ے کو پھردوہرا یا کہ قانون ساز کونسل کو اسمبلی ہم نے بنایا اورعدلیہ کو اختیارات ہم نے دئیے اس لئے مسلم لیگ (ق )کے اس دعوے میں کوئی حقیقت نہیں کہ قانون کونسل کو اسمبلی کا درجہ اس کے دور میں دیاگیا تھا جب ان سے پوچھا گیا کہ شمالی علاقوں کو نظر انداز کرنے کی پالیسی کی وجہ سے شمالی علاقوں میں پیپلز پارٹی کے کارکنوں اورلیڈروں میں بہت زیادہ بے چینی ہے اورپیپلز پارٹی کے جنرل سیکرٹری سید مہدی شاہ نے اپنے عہدے سے مستعفی ہونے کی دھمکی دے دی ہے توقمرزمان کائرہ نے کہا ایسی کوئی بات نہیں ۔



تاريخ : Fri 15 Aug 2008 | 11 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |



سکردو (نمائند ہ کے پی این )ضلع گانچھے کے انتہائی پسماندہ گاﺅں ہریکون کے عوام کے مسائل دن بدن گھمبیر ہوتے جارہے ہیں علاقہ ہریکون کی پسماندگی اورترقی کے حوالے سے مایوس کن صورت حال پرغورکے لئے علاقے کے باشعورنوجوان طلباءکاایک مشترکہ اجلاس سکردومیں ہواجس میں مسائل اورتعمیروترقی کے حوالے سے حکام کی غفلت پرسخت افسوس کااظہار کرتے ہوئے طلباءبرادری نے کہاکہ اس ترقی یافتہ دورمیں بھی ہریکون میں کوئی قابل ذکر کام نہیں ہواہے لوگوں کوصحت ، تعلیم اوربجلی کے حوالے سے بے پناہ مسائل درپیش ہیں طلباءوطالبات کے لئے الگ الگ سکول کاانتظام نہیں بچے بچیاں پرائمری تک تعلیم حاصل کرنے کے بعد مزید تعلیمی سلسلہ جاری نہیں رکھ سکتے بچے پہاڑی دشوارگزار راستوں کوعبوررکے دوردرازحصول تعلیم کے لئے جانے سے کتراتے ہیں پورے ہریکون میں صرف ایک پرائمری سکول ہے لوگوںکوبجلی کے حوالے سے بھی اکثر اوقات پریشانیوںسے دوچارہوناپڑتاہے پورے علاقے میں ایک لائن مین بھی نہیں جوبجلی کی بندش کی صورت میں بجلی بحال کرسکے ڈاکخانہ کاکوئی موثر انتظام نہ ہونے کے باعث عوام کومیلوںسفر طے کرکے ڈاک خانے تک جاناپڑتاہے اس وجہ سے بجلی کے بجل کی ادائیگی میں بہت زیادہ تاخیر ہوجاتی ہے جبکہ مال مویشیوں کی دیکھ بھال کے لئے وٹرنری ہسپتال کاسرے سے کوئی وجود ہی نہیں بنیادی صحت کے حوالے سے بھی ہریکون دیگر مقامات سے کہیں پسماندہ ہے عوام کے ان دیرینہ مسائل سے حکام کی چشم پوشی سے بالخصوص طلباءبرادری میں سخت مایوسی پھیل رہی ہے عوامی حلقوں بشمول طلباءبرادری نے جملہ مسائل کے فوری حل کے لئے منتخب عوامی نمائندوں ، سیکرٹری ایجوکیشن ، چیف سیکرٹری شمالی علاقہ جات اسمبلی ،محکمہ برقیات کے اعلیٰ حکام اوروفاقی وزیر امورکمشیر وچیئرمین شمالی علاقہ جات اسمبلی قمر الزمان کائرہ سے پُرزورمطالبہ کیاہے کہ وہ علاقہ ہریکون کے حل طلب مسائل کے حل کے لئے فوری اقدامات کریں تاکہ علاقہ ہریکون کے عوام تک بھی ترقی کے ثمرات پہنچ سکیں۔



تاريخ : Wed 4 Jun 2008 | 8 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |



قراقرم یونیورسٹی میں صورتحال مکمل طور پر انتظامیہ کے کنٹرول میں ہے اور اس وقت یونیورسٹی میں مکمل طور پر امن ہے۔پریس نوٹ کے مطابق قراقرم انٹر نیشنل یونیورسٹی میں ایک فیکلٹی ممبر اور طلباءکے درمیان کسی خاص موضوع پر تکرار کی وجہ سے یونیورسٹیکی حدود میں تھوڑی سی ہنگامہ آرائی ہوئی جسے فوری طور پر یونیورسٹی کے حکام ،مقامی انتظامیہ، سیاسی رہنما، اور علاقہ کے عمائدین نے ملکر معاملہ کو رفع دفع کیا۔ اب یونیورسٹی میں مکمل طور پر امن و امان ہے۔ عینی شاہدین کے مطابق یونیورسٹی میں نا خوشگوار واقعہ اس وقت پیش آیا جب منگل کے روز یونیورسٹی میں طلبہ کا ایک گروپ یونیورسٹی کے اسسٹنٹ پروفیسر سعید احمد کے جانب سے دوران لیکچر ایک سوال کے جواب میں قابل اعتراض ریمارکس دینے کے خلاف احتجاج کر رہا تھا۔ احتجاج کرنے والے طلبہ سے یونیورسٹی کے قائم مقام وائس چانسلر ڈاکٹر پروفیسر محمد سلیم خان کا خطاب جاری تھا کہ پہلے دو طالبعلموں کے آپس میں تلخ کلامی اور بعد ازاں ہاتھا پائی ہو گئی۔ بعد ازاں یہ جھگڑا با قاعدہ تصادم کی شکل اختیار کر گیا۔ اسی دوران دونوں گروپوں میں شامل بعض طلبہ نے یونیورسٹی میں توڑ پھوڑ کے علاوہ ایک دوسرے پر پتھراﺅ بھی کیا۔ جس سے4طالبعلم زخمی ہو گئے۔ اس صورتحال کے پیش نظر ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر گلگت عبدالقمر شہزاد،اسسٹنٹ کمشنر گلگت سبطین احمد،ایلیٹ فورس اور پولیس کی بھاری نفری سمیت موقع پر پہنچے جبکہ چیئر مین بلدیہ گلگت محمد الیاس صدیقی کی قیادت میں ایک وفد بھی یونیورسٹی پہنچا۔ جس کے بعد اسلامی جمیعت طللبہ اور امامیہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن کی مشترکہ کوششوں کے نتیجے میں متحارب طلبہ تصادم ختم کرنے پر آمادہ ہو گئے۔ اس موقع پر یونیورسٹی انتظامیہ کے خصوصی اجلاس کے اختتام پر یونیورسٹی کے قائم مقام وائس چانسلر ڈاکٹر سلیم نے مذکورہ پروفیسر کو معطل کرنے اور ساری صورتحال کی تحقیقات کروانے کا اعلان کیا۔ جس پر تمام کے تمام طلبہ پر امن طور پر منتشر ہو گئے اور صورتحال مکمل طور پر معمول پر آ گئی۔ تا ہم مزید کسی نا خوشگوار صورتحال سے بچنے کے لئے حفظ ما تقدم کے طور پر یونیورسٹی کو پانچ روز کے لئے بند کر دیا گیا۔ چیئر مین بلدیہ گلگت محمد الیاس صدیقی نے کہا ہے کہ کچھ نادیدہ طاقتیں گلگت شہر کے حالات کو خراب کرنے کیلئے حرکت میں آ گئی ہیں اور آئے روز نت نئی سازشیں کی جا رہی ہیں تمام مکاتب فکر کے لوگوں بالخصوص علمائے کرام کی ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ نہ صرف خود ان سازشوں سے ہوشیار رہیں بلکہ عوام کو بھی ان سازشوں سے خبردار کریں۔ انہوں نے کے پی این سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ایک سازش کے تحت گلگت شہر میں مختلف فرقوں کے خلاف پمفلٹ تقسیم کرنا اسی سازش کی کڑی ہے انہوں نے کہا کہ گلگت شہر کے عوام بالخصوص دونوں مکاتب فکر کے علماءنے ذمہ داری کا ثبوت دیتے ہوئے اس سازش کو ناکام بنایا۔ انہوں نے ایک سوال کے جواب میں بتایا کہ اس وقت ہمارا ہمسایہ ملک چین شاہراہ قراقرم کے توسیعی منصوبے پر کام شروع کر رہا ہے جبکہ پاکستان دشمن طاقتیں نہیں چاہتی ہیں کہ شاہراہ قراقرم کی توسیع اور مرمت ہو۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان دشمن طاقتوں کی کوشش ہے کہ کسی بھی طرح شاہراہ قراقرم کے توسیعی منصوبے کو روکا جائے۔ اسی لئے یہ طاقتیں گلگت شہر کے حالات کو خراب کرنا چاہتی ہیں تا کہ گلگت میں حالات کی خرابی کا بہانہ بنا کر چینی انجینئرز واپس چلے جائیں انہوں نے کہا کہ گلگت شہر میں متنازعہ پمفلٹوں کی تقسیم پھر بین الاقوامی میڈیا میں اسامہ بن لادن کی شمالی علاقہ جات میں موجودگی کی خبریں اور اب یونیورسٹی میں ایک پروفیسر کی جانب سے حضرت علی ؑ کی شان میں گستاخی جیسے واقعات ملک دشمن عناصر کی جانب سے گلگت شہر کے حالات خراب کرنے کی کوششوں اور سازشوں کا حصہ ہیں انہوں نے کہا کہ اس وقت گلگت کے عوام بالخصوص دونوں مکاتب فکر کے علماءنہ صرف ان سازشوں سے بخوبی آگاہ ہو چکے ہیں بلکہ ایسی سازشوں سے ہوشیار بھی ہیں اس لئے اب گلگت شہر میں دشمن کی ایسی نا پاک ساش کبھی بھی کامیاب نہیں ہونگی۔ انہوں نے شہر کے عوام سے ایک بار پھر اپیل کی کہ وہ پر امن رہیں اور ایسی سازشوں سے نہ صرف خود ہوشیار رہیں بلکہ تمام شہریوں کو پر امن رہنے کی تلقین کریں۔ آئی ایس او گلگت نے بھی قراقرم یونیورسٹی میں پیش آنے والے واقعہ کی مذمت کی ہے۔ یونیورسٹی میں دو گروپوں میں ہونے والے تصادم کو رکوانے اور حالات کو معمول پر لانے میں اسلامی جمیعت طلبا اور امامیہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن نے مثبت اور مثا لی کردار ادا کیا۔ یونیورسٹی میں ہونے والے تصادم کے موقع پر اسلامی جمیعت طلباءاور امامیہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن کے طلباءبھی موجود تھے مگر ان دونوں طلباءتنظیموں سے تعلق رکھنے والے طلباءتصادم کا حصہ بننے کی بجائے تصادم کو رکوانے میں کردار ادا کیا اور یونیورسٹی کے حالات کو معمول پر لانے کیلئے کوشش کی اور اس میں کامیاب بھی ہو گئے جبکہ اس نا خوشگوار واقعے کو کنٹرول کرنے میں جہاں پولیس اور انتظامیہ نے مثبت کو ششیں کیں وہی پر بلدیہ گلگت کے چیئر مین محمد الیاس صدیقی نے بھی مثالی کردار ادا کیا جو یونیورسٹی میں تصادم شروع ہوتے ہی فوراً اپنے دو ساتھیوں سابق چیئر مین بلدیہ گلگت جاوید اختر ایڈووکیٹ ،میجر (ر) حسین شاہ اور ممبر بلدیہ سعید الحسنین کے ہمراہ موقع پر پہنچ گئے اور دونوں گروپوں کے جذبات ٹھنڈا کرنے میں کامیاب ہو گئے۔ قراقرم انٹر نیشنل یونیورسٹی میں زیر تعلیم طلبا نے امن کمیٹی قائم کرنے کا اعلان کیا ہے۔ اس بات کا اعلان تینوں مکاتب فکر سے تعلق رکھنے والے طلباءکے نمائندہ وفد نے یونیورسٹی کے سینئر حکام اور اساتذہ سے ملاقات میں کیا۔ طلباءوفد نے منگل کے روز یونیورسٹی میں پیدا ہونے ولی صورتحال کی مذمت کرتے ہوئے تمام طلبا کے اندر ہم آہنگی ، اتحاد ،اتفاق اور بھائی چارگی کو فروغ دینے کے لئے مل کر کام کرنے کا عہد کیا۔ نمائندہ وفد میں تینوں مسالک سے تعلق رکھنے والے طلباءشامل تھے جو اپنے اپنے مسالک کی تنظیموں کی نمائندگی بھی کررہے تھے۔ طلباءوفد نے یونیورسٹی انتظامیہ کو یقین دلایا کہ یونیورسٹی کے ماحول کو خراب ہونے نہیں دیا جائے گا۔ اور یونیورسٹی کی فضاءکو بہتر بنانے کے لئے تینوں مکاتب فکر سے تعلق رکھنے والے طلباءاپنی بھر پور توانائیوں کو بروئے کار لائینگے۔



تاريخ : Wed 4 Jun 2008 | 8 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

ڈاکٹر قدیر خان پندرہ برس یورپ میں رہنے کے دوران مغربی برلن کی ٹیکنیکل یونیورسٹی، ہالینڈ کی یونیورسٹی آف ڈیلفٹ اور بیلجیئم کی یونیورسٹی آف لیوؤن میں پڑھنے کے بعد 1976ء میں واپس پاکستان آگئےـ

ڈاکٹر خان ہالینڈ سے ماسٹرز آف سائنس جبکہ بیلجیئم سے ڈاکٹریٹ آف انجینئرنگ کی اسناد حاصل کرنے کے بعد 31 مئی 1976ء میں انہوں نے انجینئرنگ ریسرچ لیبارٹریز میں شمولیت اختیار کی ـ اس ادارے کا نام یکم مئی 1981ء کو جنرل ضیاءالحق نے تبدیل کرکے ’ڈاکٹر اے کیو خان ریسرچ لیبارٹریز‘ رکھ دیا۔ یہ ادارہ پاکستان میں یورینیم کی افزودگی میں نمایاں مقام رکھتا ہےـ

مئی 1998ء میں پاکستان نے بھارتی ایٹم بم کے تجربے کے بعد کامیاب تجربہ کیا۔ بلوچستان کے شہر چاغی کے پہاڑوں میں ہونے والے اس تجربے کی نگرانی ڈاکٹر قدیر خان نے ہی کی تھی ـ

 

کہوٹہ ریسرچ لیبارٹریز نے نہ صرف ایٹم بم بنایا بلکہ پاکستان کیلئے ایک ہزار کلومیٹر دور تک مار کرنے والے غوری میزائیل سمیت چھوٹی اور درمیانی رینج تک مارکرنے والے متعدد میزائیل تیار کرنے میں بھی اہم کردار ادا کیا۔

ادارے نے پچیس کلو میٹر تک مارکرنے والے ملٹی بیرل راکٹ لانچرز، لیزر رینج فائنڈر، لیزر تھریٹ سینسر، ڈیجیٹل گونیومیٹر، ریموٹ کنٹرول مائن ایکسپلوڈر، ٹینک شکن گن سمیت پاک فوج کے لئے جدید دفاعی آلات کے علاوہ ٹیکسٹائل اور دیگر صنعتوں کیلئے متعدد آلات بھی بنائےـ

انیس سو چھتیس میں ہندوستان کے شہر بھوپال میں پیدا ہونے والےڈاکٹر خان نے ایک کتابچے میں خود لکھا ہے کہ پاکستان کے ایٹمی پروگرام کا سنگ بنیاد ذوالفقار علی بھٹو نے رکھا اور بعد میں آنے والے حکمرانوں نے اسے پروان چڑھایا ـ

ڈاکٹر قدیر خان پر ہالینڈ کی حکومت نے اہم معلومات چرانے کے الزامات کے تحت مقدمہ بھی دائر کیا لیکن ہالینڈ، بیلجیئم، برطانیہ اور جرمنی کے پروفیسرز نے جب ان الزامات کا جائزہ لیا تو انہوں نے ڈاکٹر خان کو بری کرنے کی سفارش کرتے ہوئے کہا کہ جن معلومات کو چرانے کی بنا پر مقدمہ داخل کیا گیا ہے وہ عام اور کتابوں میں موجود ہیںـ جس کے بعد ہالینڈ کی عدالت عالیہ نے ان کو باعزت بری کردیا تھاـ

ڈاکٹر قدیر خان نے یہ بھی لکھا ہے کہ جب کہوٹہ میں ریسرچ لیبارٹری زیر تعمیر تھی تو وہ سہالہ میں پائلٹ پروجیکٹ چلارہے تھے اور اس وقت فرانسیسی فرسٹ سیکرٹری فوکو کہوٹہ کے ممنوعہ علاقے میں بغیر اجازت گھس آئے تھے جس پر ان کی مارکٹائی ہوئی اور پتہ چلا کہ وہ سی آئی اے کے لیے کام کرتے تھے۔ انہوں نے تہران میں اپنے سی آئی اے باس کو لکھا کہ ’ کہوٹہ میں کچھ عجیب و غریب ہورہا ہے۔‘

ڈاکٹر خان کو صدر جنرل پرویز مشرف نے بطور چیف ایگزیکٹیو اپنا مشیر نامزد کیا اور جب جمالی حکومت آئی تو بھی وہ اپنے نام کے ساتھ وزیراعظم کے مشیر کا عہدہ لکھتے ہیں لیکن 19 دسمبر 2004ء کو سینیٹ میں ڈاکٹر اسماعیل بلیدی کے سوال پر کابینہ ڈویژن کے انچارج وزیر نے جو تحریری جواب پیش کیا ہے اس میں وزیراعظم کے مشیروں کی فہرست میں ڈاکٹر قدیر خان کا نام شامل نہیں تھاـ

ڈاکٹر قدیر خان نے ہالینڈ میں قیام کے دوران ایک مقامی لڑکی ہنی خان سے شادی کی جو اب ہنی خان کہلاتی ہیں اور جن سے ان کی دو بیٹیاں ہوئیں۔ دونوں بیٹیاں شادی شدہ ہیں اور اب تو ڈاکٹر قدیر خان نانا بن گئے ہیں۔

ڈاکٹر قدیر خان کو وقت بوقت 13 طلائی تمغے ملے، انہوں نے ایک سو پچاس سے زائد سائنسی تحقیقاتی مضامین بھی لکھے ہیں ـ انیس سو ترانوے میں کراچی یونیورسٹی نے ڈاکٹر خان کو ڈاکٹر آف سائنس کی اعزازی سند دی تھی۔

چودہ اگست 1996ء میں صدر فاروق لغاری نے ان کو پاکستان کا سب سے بڑا سِول اعزاز نشانِ امتیاز دیا جبکہ 1989ء میں ہلال امتیاز کا تمغہ بھی انکو عطا کیا گیا تھا۔

ڈاکٹر قدیر خان نےسیچٹ sachet کے نام سے ایک این جی او بھی بنائی جو تعلیمی اور دیگر فلاحی کاموں میں سرگرم ہےـ


موضوعات مرتبط: آشنایی با پاکستان

تاريخ : Thu 6 Mar 2008 | 11 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

مطابق پاکستان میں بالغ رائے دہی کی بنیاد پر 1970ء میں پہلے عام انتخابات ہوئے 18 فروری 2008ء کو 9 ویں انتخابات تھے ۔ انتخابات کے بعد نئی جمہوری حکومتوں کے قیام میں سب سے زیادہ عرصہ 1970ء میں لگا جب 2سال 8ماہ 18 دن بعد مرکز میں حکومت قائم ہوئی اور ذوالفقار علی بھٹو مرحوم نے وزارت عظمیٰ کا حلف اٹھایا۔ 1990ء کے انتخابات میں نئی حکومت کے قیام میں سب سے کم عرصہ لگا اور صرف 11 دن بعد میاں محمد نواز شریف نے وزیراعظم کی حیثیت سے حلف اٹھا کر مرکز میں حکومت قائم کی ۔ 1970ء کے انتخابات کے بعد حکومت میں تاخیر کا بنیادی سبب مشرقی پاکستان کی علیحدگی تھی۔ 7/ دسمبر 1970ء کو قومی اسمبلی کے انتخابات ہوئے جبکہ 17 دسمبر 1970ء کوصوبائی اسمبلیوں کے انتخابات ہوئے۔ مشرقی پاکستان میں عوامی لیگ نے اکثریت حاصل کی تھی لیکن حکومت کے قیام پر اتفاق نہ ہونے سے اسمبلی کا اجلاس نہ بلایا جاسکا۔ 16/ دسمبر 1971ء کو سقوط ڈھاکا کا سانحہ رونما ہوا۔ 20 دسمبر 1971ء کو ذوالفقار علی بھٹو نے باقیماندہ پاکستان کے صدر اور سویلین مارشل لاء ایڈمنسٹریٹر کے عہدے سنبھالے۔ انتخابات کے ایک سال 3 ماہ 18 دن بعد بالآخر 14 اپریل 1972ء قومی اسمبلی کا پہلا اجلاس منعقد ہوا جس میں باقیماندہ پاکستان کے ارکان قومی اسمبلی نے حلف اٹھایا اور ذوالفقار علی بھٹو کو اسمبلی کا اسپیکر منتخب کیا گیا ۔ حلف اٹھانے والوں میں مغربی پاکستان کے 114 اور مشرقی پاکستان کے دو ارکان قومی اسمبلی نور الامین اور راجہ تری دیورائے شامل تھے۔ بعدازاں 30 اپریل 1972ء کو صوبائی اسمبلیوں کے بھی اجلاس منعقد کئے گئے اور یکم مئی 1972ء کو سندھ اور سرحد میں اور 2مئی 1972ء کو پنجاب اور بلوچستان میں صوبائی حکومتیں قائم کر دی گئیں۔پنجاب میں ملک معراج خالد، سندھ میں ممتاز علی بھٹو، سرحد میں مفتی محمود اور بلوچستان میں سردار عطاء اللہ مینگل وزیر اعلیٰ بنے۔ 17/ اپریل 1972ء کو عبوری آئین منظور کیا گیا جس کے تحت 14 اگست 1973ء سے پہلے اسمبلی کو نہیں توڑا جا سکتا تھا۔10/اگست 1973ء کو اسمبلی نے متفقہ آئین کی منظوری دی۔ 12/اگست کو اس کی توثیق کی اور 14/اگست 1973ء کو یہ متفقہ دستور نافذ ہوا۔ اُسی دن ذوالفقار علی بھٹو نے وزارت عظمٰی کا حلف اٹھایا۔ 15/اگست 1973ء کو صاحبزادہ فاروق علی قومی اسمبلی کے اسپیکر بنے۔ انتخابات کے بعد نئی حکومت کے قیام میں تاریخ پاکستان کے دولخت ہونے کا عظیم سانحہ تھا۔ 1988، 1990، 1993اور 1997کے عام انتخابات کے بعد نئی حکومتوں کے قیام میں کوئی زیادہ تاخیر نہیں ہوئی اور 1سے 16دنوں کے اندر مرکز میں حکومتیں بن گئیں البتہ کچھ صوبوں میں مزید ہفتہ ڈیڑھ ہفتہ کی تاخیر سے حکومتیں قائم ہوئیں کیونکہ ان چاروں انتخابات کے بعد کوئی زیادہ سیاسی جوڑ توڑ کی ضرورت نہیں پڑی۔ البتہ اس سے قبل 1985ء کے غیرجماعتی انتخابات کے بعد حکومتوں کے قیام میں خاصی تاخیر ہوگئی۔ 25/فروری 1985ء کو قومی اسمبلی کے انتخابات ہوئے اور 28/فروری 1985ء کو صوبائی اسمبلیوں کے انتخابات ہوئے۔ مرکز میں حکومت تقریباً 26 دن بعد 23/مارچ 1985ء کو قائم ہوئی اور محمد خان جونیجو نے وزیراعظم کی حیثیت سے حلف اُٹھایا۔ پنجاب میں ایک ماہ 8دن بعد یعنی 9/اپریل 1985ء کو میاں محمد نوازشریف نے وزارت اعلیٰ کا حلف لے کر حکومت تشکیل دی۔ سندھ میں سید غوث علی شاہ نے 6/اپریل1985ء کو، سرحد میں جہانگیر ترین نے 7/اپریل 1985ء کو اور بلوچستان میں جام میر غلام قادر نے 6/اپریل1985ء کو وزرائے اعلیٰ کی حیثیت سے حلف اُٹھاکر صوبائی حکومتیں قائم کیں۔ 1970ء کے انتخابات کے بعد حکومتیں قائم کرنے میں سب سے زیادہ تاخیر2002ء کے عام انتخابات کے بعد ہوئی کیونکہ مسلم لیگ (ق) کو مرکز میں حکومت بنانے کے لیے سادہ اکثریت حاصل نہیں تھی۔ حکومت سازی کے لیے پیپلز پارٹی اور دیگر آزاد ارکان کو توڑنے کے لیے خاصا وقت لگ گیا اور تقریباً ایک ماہ 13دن بعد 23/نومبر2002ء کو میر ظفر اللہ خان جمالی نے وزارت عظمٰی کا حلف اُٹھاکر وفاقی حکومت تشکیل دی۔ دو دن بعد 25/نومبر2002ء کو متحدہ مجلس عمل کے اکرم خان درانی نے سرحد میں اور 6 دن بعد 29/نومبر2002ء کو مسلم لیگ (ق) کے چوہدری پرویز الٰہی نے پنجاب میں صوبائی حکومتوں کے سربراہ کی حیثیت سے حلف اُٹھایا۔ سندھ میں اکثریتی جماعت پیپلز پارٹی کو حکومت نہیں بنانے دی گئی اور جوڑ توڑ کی وجہ سے یہاں حکومت بنانے میں اور زیادہ تاخیر ہوگئی۔ بالاخر 2ماہ 6دن کی تاخیر کے بعد 16/دسمبر 2002ء کو سردار علی محمد خان مہر نے وزیراعلیٰ کی حیثیت سے حلف اُٹھایا۔ 1988ء میں قومی اسمبلی کے انتخابات 16/نومبر جبکہ صوبائی اسمبلیوں کے انتخابات 19/نومبر کو منعقد ہوئے۔ صرف 16/دن بعد 2/دسمبر1988ء محترمہ بے نظیر بھٹو نے وزیراعظم کی حیثیت سے حلف اُٹھایا جبکہ 2/دسمبر1988ء کو ہی پنجاب میں میاں محمد نوازشریف نے، سندھ میں سید قائم علی شاہ نے اور آفتاب احمد شیرپاؤ نے سرحد کے وزرائے اعلیٰ کی حیثیت سے حلف اُٹھایا۔ البتہ بلوچستان میں حکومت بنانے میں تاخیر ہوگئی۔ انتخابات کے تقریباً 2/ماہ 16/دن بعد نواب اکبر بگٹی وزیراعلیٰ بنے۔ 1990ء میں قومی اسمبلی کے انتخابات 24/اکتوبر اور صوبائی اسمبلیوں کے انتخابات 27/اکتوبر کو منعقد ہوئے۔صرف 11دن کے بعد 6/نومبر1990ء میں میاں محمد نواز شریف نے وزیراعظم کا حلف اُٹھاکر مرکز میں حکومت قائم کی۔ اُسی دن سید مظفر حسین شاہ نے سندھ کے وزیراعلیٰ کا منصب سنبھالا۔ 8/نومبر کو غلام حیدر وائین نے پنجاب اور 7/نومبر کو میر افضل خان نے سرحد کے وزیراعلیٰ کی حیثیت سے حلف اُٹھایا۔ اس مرتبہ بھی بلوچستان حکومت کی تشکیل میں قدرے تاخیر ہوگئی اور تقریباً 20/دن بعد تاج محمد خان جمالی نے وزارت اعلیٰ کا حلف اُٹھاکر بلوچستان کی حکومت تشکیل دی۔ تاخیر کی وجہ مطلوبہ اکثریت کا نہ ہونا اور سیاسی جوڑ توڑ تھی۔ 1993ء میں قومی اسمبلی کے انتخابات 6/اکتوبر اور صوبائی اسمبلیوں کے انتخابات 9/اکتوبر کو منعقد ہوئے۔ اس مرتبہ محترمہ بے نظیر بھٹو نے صرف 13دن بعد 19/نومبر 1993ء کو وزارت عظمٰی کا حلف اُٹھایا اور 11سے 12دن میں چاروں صوبائی حکومتیں بھی قائم ہوگئیں۔ 20/نومبر1993ء کو میاں منظور وٹو نے پنجاب میں، اُسی دن سید صابر علی شاہ نے سرحد میں اور میر ذوالفقار علی مگسی نے بلوچستان میں وزرائے اعلیٰ کا منصب سنبھالا۔ 21/نومبر1993ء کو سید عبداللہ شاہ سندھ کے وزیراعلیٰ منتخب ہوئے۔1997ء میں قومی اور صوبائی اسمبلیوں کے انتخابات پہلی مرتبہ ایک ہی دن 3/فروری1997ء کو منعقد ہوئے۔ 17/فروری1997ء کو میاں نوازشریف نے دوبارہ وزیراعظم کی حیثیت سے حلف اُٹھایا۔ 20/فروری کو میاں شہباز شریف نے پنجاب میں، 22/فروری کو لیاقت علی خان جتوئی نے سندھ میں، 21/فروری کو سردار مہتاب احمد خان عباسی نے سرحد میں اور 22/فروری 1997ء کو سردار اختر خان مینگل نے بلوچستان میں وزرائے اعلیٰ کی حیثیت سے حلف اُٹھاکر حکومتیں تشکیل دیں۔ 18/فروری 2008ء کو منعقد ہونے والے 9/ویں عام انتخابات کے نتائج کا سرکاری اعلان جمعہ 22کو متوقع ہے لیکن انتخابات میں جس طرح تقسیم شدہ مینڈیٹ آیا ہے اس سے کسی بھی سیاسی جماعت کو مرکز میں حکومت تشکیل دینے کے لیے سادہ اکثریت بھی حاصل نہیں ہے۔ پیپلز پارٹی کو اگرچہ نشستوں کی تعداد کے حوالے سے برتری حاصل ہے لیکن مرکز میں حکومت کے قیام کے لیے اُسے بہت سی ایسی مشکلات کا سامنا ہے، جو شاید پہلے کسی بھی سیاسی جماعت کو نہیں کرنا پڑا۔ حالات سے یوں محسوس ہوتا ہے کہ نئی منتخب حکومتوں کے قیام میں غیرمعمولی تاخیر بھی ہوسکتی ہے۔



تاريخ : Thu 28 Feb 2008 | 11 AM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

روزنامہ جنگ کے معروف کالم نگار عظیم سرور اپنے کالم ‘یہ ڈنمارک والے کون ہیں؟‘ میں لکھتے ہیں کہ لندن میں 10دن قیام کے بعد شکاگو کے لئے روانہ ہوا تو ایک بار پھر کوپن ہیگن آنا ہوا۔ اس مرتبہ ایئرلائن نے ایک دن کے لئے ہوٹل میں ٹھہرایا یہ ہوٹل سچا فائیو اسٹار ہوٹل تھا۔ اس کے کمرے میں دنیا بھر کی آرام و خوبصورت کتابچہ ”ڈنمارک میں رہنے کے آداب“ رکھا تھا۔ یہ کتابچہ انگریزی، ڈینش، فرانسیسی اور جرمن زبانوں میں تھا جو ڈنمارک کے محکمہ سیاحت کی طرف سے شائع ہوا تھا۔
یہ کتابچہ بہت دلچسپ تھا اس میں ایک باب میں بہت سی ہدایات تھیں۔ کہا گیا تھا اگر آپ ڈنمارک کے قیام کے دوران میں کسی ڈینش کے گھر مہمان بن کر جائیں تو وہاں آپ کو ان باتوں کا خیال رکھنا ہوگا۔
(1) جب آپ کو کوئی ڈینش شخص اپنے گھر بلائے اور وہاں آپ دیکھیں کہ کوئی خاتون گھر داری کے کام میں مصروف ہے تو اپنے میزبان سے یہ مت پوچھیں کہ آپ کی شادی کو کتنا عرصہ ہوگیا؟ کیونکہ ہو سکتا ہے کہ وہ بغیر شادی کے رہ رہے ہوں۔ آپ کے اس سوال سے ان کے دل کو صدمہ پہنچے گا۔
(2) آپ اگر خاتون خانہ سے بات کریں تو ان کو مسز فلاں کہہ کر نہ مخاطب کریں امکان اس بات کا ہو سکتا ہے کہ وہ ان صاحب کیساتھ ویسے ہی رہ رہی ہوں۔ آپکی اس بات سے ان خاتون کو دکھ ہوگا اور آپ اس طرح بداخلاقی کے مرتکب ہوں گے۔
(3) اگر آپ اپنے میزبان کے گھر میں کسی بچے کو دیکھیں تو اس بچے کی ذہانت یا شکل و صورت کی تعریف کرتے ہوئے اپنے میزبان سے یہ نہ کہیں کہ آپ کا بچہ بہت خوبصورت ہے یا ذہین ہے کیونکہ ہو سکتا ہے کہ وہ بچہ اس میزبان کا بچہ نہ ہو بلکہ خاتون خانہ کا بچہ ہو۔ اس طرح ایک جانب آپ کے میزبان کو دلی دکھ پہنچے گا اور ہو سکتا ہے معصوم بچے کو بھی صدمہ ہو۔ اس لئے اس سلسلے میں حد درجہ احتیاط سے کام لیں۔
(4) آپ کسی دفتر میں کسی خاتون سے ملیں تو ان سے یہ مت پوچھئے کہ آپ کے شوہر کیا کام کرتے ہیں؟ یا آپ کے شوہر کا نام کیا ہے؟ ہو سکتا ہے وہ خاتون کسی کے بھی ساتھ ایسے ہی رہ رہی ہوں آپ کے سوال کی صورت میں ان کو دکھ پہنچ سکتا ہے۔
(5) اگر آپ کسی بزنس کے سلسلے میں کسی ڈینش سے ملیں اور وہ آپ کو کھانے وغیرہ پر مدعو کر لے تو گفتگو میں احتیاط سے کام لیں۔ کسی سے یہ مت پوچھیں کہ کیا آپ کے والد حیات ہیں؟ ہو سکتا ہے اس کو معلوم ہی نہ ہو کہ اس کا والد کون تھا اس صورت میں زندگی اور موت کی معلومات کیسے ہو سکتی ہیں؟ آپ یہ سوال کر کے اپنے میزبان کو ذہنی اور دلی صدمہ پہنچانے کے مرتکب ہو سکتے ہیں۔
(6) کسی بھی ڈینش خاتون کو خط لکھتے ہوئے ان کے نام کے ساتھ مسز تحریر نہ کریں کیونکہ اکثر خواتین مسز ہوئے بغیر مسز ہوتی ہیں آپ کے ان کو مسز لکھنے سے ان کو انتہائی صدمہ ہوگا اور وہ دکھی ہو جائیں گی۔
”ہدایت نامہ سیاح ڈنمارک“ پڑھ کر میرے اوسان خطا ہوگئے۔ الٰہی یہ کیسا ملک ہے؟ اس ملک کے بارے میں جب یہ سنتے تھے کہ یہ سیکس فری ملک ہے تو اس قسم کا کوئی خیال کبھی نہ آیا تھا کہ معاشرے میں اکثریت ہر اخلاقی بندھن سے آزاد ہوگی پھر یہ خیال آیا کہ یہ لوگ جو کسی سوشل معاہدے کے بغیر میاں بیوی کی حیثیت سے رہ رہے ہیں کیا انسان کہلانے کے مستحق ہیں؟ جانوروں کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ ایسی آزادی ان کے ہاں ہوتی ہے لیکن پھر جانور ایسے معاملات میں نہ حساس ہوتے ہیں اور نہ ہی ان کو کسی بات پر دلی صدمہ یا دکھ ہوتا ہے۔ ڈنمارک کے 17اخباروں نے جو خاکے شائع کئے ہیں تو ان کے بارے میں وہ اخبار دلیل یہ دیتے ہیں کہ یہ اظہار رائے کی آزادی ہے اس صورت میں انہیں اس بات کی پروا نہیں کہ اس سے دنیا کی ڈیڑھ ارب آبادی کو دلی اور روحانی صدمہ پہنچتا ہے ڈنمارک کی حکومت بھی اپنے اخبار والوں کو اظہار کا حق دیتے ہوئے اس بات کو کوئی اہمیت نہیں دیتی کہ اس سے دنیا کے مسلمانوں کے جذبات و احساسات کو ٹھیس پہنچے گی بس انہیں اپنے جانوروں جیسی زندگی گزارنے والے لوگوں کے جذبات کا اتنا خیال ہے کہ ہر سیاح کو ”آداب ڈنمارک“ سکھاتے ہیں۔
ہمارا خیال ہے ہمیں انفرادی طور پر ڈنمارک کے سفارت خانے اور حکومت کو خط لکھ کر یہ بتانا چاہئے کہ ہم ان اخبار کے مالکان، صحافیوں اور خاکے بنانے والوں پر مقدمے دائر کرنا چاہتے ہیں اور ان مقدموں کے لئے ہمیں ان تمام لوگوں کی ولدیت کی ضرورت ہوگی۔ برائے مہربانی ان لوگوں کی ولدیت فراہم کی جائے۔ دوسری صورت میں ہم ان کے نام کے ساتھ ”ولد نامعلوم“ لکھیں گے یا نام کے ساتھ انگریزی کا حرف "B" یا اردو کا حرف ”ح“ لکھ دیں گے۔ پھر ہم دیکھتے ہیں ڈنمارک کے سفارت خانے اور حکومت ان خطوں کے کیا جواب دیتے ہیں۔ ہمیں یقین ہے جن لوگوں نے یہ خاکے شائع کئے ہیں یہ سب لوگ اسی قبیل کے فرزند ہوں گے جن کے جذبات کے بارے میں ڈنمارک کا محکمہ سیاحت، ہدایت نامہ شائع کر کے ہوٹلوں اور دفتروں میں سیاحوں کے لئے رکھتا ہے۔
ایک سوال علمائے کرام سے کہ جب ڈنمارک میں اکثریت ایسے لوگوں کی ہے جو آزاد روی کی پیدائش ہیں تو کیا ایسے لوگوں کے ہاتھ کا بنایا ہوا مکھن کھانا حلال ہوگا یا حرام؟



تاريخ : Thu 28 Feb 2008 | 11 AM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

 انسانی معاشرے میں نقل مکانی، مختلف تہذیبوں کی جانب ہجرت اور آبادکاری ایک طرف تہذیبوں کے ملاپ کا باعث بنی تودوسری جانب اس ادغام سے رفتہ رفتہ کئی تہذیبوں کا خاتمہ بھی ہوا جس کا اثر وہاں بولی جانے والی زبانوں پر بھی پڑا۔ یہی وجہ ہے کہ دنیا میں بولی جانے والی 6912 زبانوں میں سے 516 ناپید ہوچکی ہیں۔ زمانے کی جدت اور سرکاری زبانوں کے بڑھتے ہوئے استعمال سے مادری زبانوں کی اہمیت ماند پڑ رہی ہے۔
عالمی سطح پر سب سے زیادہ استعمال ہونے والی زبان چینی جبکہ سرکاری سطح پر سب سے زیادہ استعمال ہونے والی زبان انگریزی ہے۔ عالمی دن کے حوالے سے ”جنگ“ ڈیولپمنٹ رپورٹنگ سیل نے مختلف ذرائع سے جو اعداد و شمار حاصل کئے ہیں ان کے مطابق دنیا میں سب سے زیادہ بولی جانے والی مادری زبان چینی ہے جسے 87 کروڑ 30 لاکھ افراد بولتے ہیں جبکہ 37 کروڑ ہندی، 35 کروڑ ہسپانوی، 34 کروڑ انگریزی اور 20 کروڑ افراد عربی بولتے ہیں۔ پنجابی گیارہویں اور اردو بولی جانے والی زبانوں میں 19 ویں نمبر پر ہے۔ اقوام متحدہ کے انفارمیشن سینٹر اسلام آباد کے اعداد و شمار کے مطابق عالمی سطح پر 7 سے 8 ہزار زبانیں بولی جاتی تھیں تاہم اب یہ زبانیں آہستہ آہستہ کم ہوتی جا رہی ہیں۔ کل بولی جانے والی زبانوں کا نصف ایسی زبانیں ہیں جنہیں 10 ہزار افراد سے زائد استعمال میں نہیں لاتے۔ سی آئی اے فیکٹ بک کے مطابق پاکستان میں سب سے زیادہ بولی جانے والی زبان پنجابی ہے جسے 48 فیصد افراد بولتے ہیں جبکہ 12 فیصد سندھی، 10 فیصد سرائیکی، انگریزی، اردو اور پشتو 8,8 فیصد، بلوچی 3 فیصد، ہندکو 2 فیصد اور ایک فیصد براہوی زبان کا استعمال کرتے ہیں۔ دنیا میں سب سے زیادہ زبانیں پاپوانیوگنی میں بولی جاتی ہیں جہاں کل زبانوں کا 12 فیصد یعنی 820 زبانیں بولی جاتی ہیں جبکہ 742 زبانوں کے ساتھ انڈونیشیاء دوسرے، 516 کے ساتھ نائیجیریا تیسرے، 425 کے ساتھ بھارت چوتھے اور 311 کے ساتھ امریکا پانچویں نمبر پر ہے۔ آسٹریلیا میں 275 اورچین میں 241 زبانیں بولی جاتی ہیں۔ انٹرنیٹ ورلڈ اسٹیٹ کے اعداد و شمار کے مطابق انٹرنیٹ پر سب سے زیادہ 38 کروڑ صارف انگریزی زبان کا استعمال کرتے ہیں جبکہ 18 کروڑ صارف چینی، 11 کروڑ 30 لاکھ اسپینش، 8 کروڑ 80 لاکھ جاپانی اور 6 کروڑ 40 لاکھ فرانسیسی زبان کا استعمال کرتے ہیں۔ دنیامیں سب سے پہلی زبان ایک لاکھ قبل مسیح میں شروع ہوئی جبکہ لکھی جانے والی زبانوں میں چینی اور یونانی قدیم زبانیں ہیں۔



تاريخ : Thu 28 Feb 2008 | 10 AM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

انتخابات ہوگئے ہیں۔ حسب توقع سرکاری لیگ کا جنازہ اٹھ گیا ہے۔ اس کا وہی حال ہوا ہے جو 2002 میں نواز لیگ کے ساتھ کیا گیا تھا۔ مجھے نہیں لگتا کہ یہ پچاس سیٹیں بھی لے سکیں قومی اسمبلی میں۔ اب آگے دیکھنا ہے۔ نئی حکومت بنے گی۔ لیکن یہ نئی حکومت کیسے بنے گی؟؟؟؟؟؟؟

اس پر ایک نہیں کئی سوالیہ نشان ہیں۔ جو ٹرینڈ اب تک نظر آرہا ہے اس کے مطابق پنجاب میں ن لیگ کو اکثریت حاصل ہے۔ سندھ میں پی پی پی کو۔ غالب امکان ہے کہ بلوچستان سے بھی پی پی پی کو اچھا حصہ مل جائے گا اور سرحد سے بھی حسب توفیق اچھی نشستیں کھینچ لینے میں کامیاب ہوجائے گی۔ پی پی پی اکثریت میں تو ہوگی لیکن جماعت سازی اس کے بس کا کام نہیں ہوگا۔ اس کو کم از کم نواز لیگ یا پھر ایم کیو ایم سے اتحاد کرنا پڑے گا۔ یا پھر ق لیگ سے اتحاد۔۔۔

مرحومہ نے بھی اپنی زندگی میں آئیں بائیں شائیں کی اور کسی منڈیر پر ٹک کر نہیں بیٹھی۔ یہی حال اب لیڈروں کا ہے۔ زرداری نے کسی بھی جماعت کے ساتھ مفاہمت کا اشارہ تک نہیں دیا۔ اگرچہ نوازلیگ کے ساتھ ان کی گاڑھی چھن رہی ہے لیکن اس کا مطلب یہ نہیں کہ پندرہ سال تک ایک دوسرے کے بدترین سیاسی مخالفین رہنے والے اتنی جلدی حکومت میں بیٹھ جائیں گے۔

نئی حکومت جو بھی بنی نواز لیگ اپنی بات منوانے کی پوزیشن میں بہت کم ہوگی۔ جس کے نتیجیے میں ججوں کی بحالی کا عمل متاثر ہوسکتا ہے۔ اس وقت مجھے بہت افسوس ہورہا ہے اگر تحریک انصاف وغیرہ بھی اس میں شامل ہوجاتیں تو آج ججوں کی بحالی کے لیے زیادہ امکانات ہوتے۔ پیپلز پارٹی ایسے کسی بھی فیصلے کی سختی سے مخالفت کرے گی۔ زرداری صاحب مفاہمتی آرڈیننس کے صدقے ہی جیل سے باہر ہیں ورنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اگلی حکومت پچھلی حکومت کی پالیسیوں کو جاری رکھے گی یا؟ پچھلے کئی ادوار سے تو ہم پچھلی حکومت کی ہر نشانی پر سرخ لکیر پھرتا دیکھتے آرہے ہیں۔ یہ مشرف ہی تھا جس نے فوجی صدر ہونے کی وجہ سے اپنی بات منوائی۔ مشرف کتنا ہی برا ہو لیکن اس نے اعلٰی تعلیم کو جتنا فنڈ فراہم کیا وہ پاکستان کی تاریخ میں اس سے پہلے ممکن ہی نہ تھا۔ بے تحاشا سکالرشپس دی گئیں جس کے بل پر ہزاروں طلبا ایم فل اور پی ایچ ڈی کی تعلیم حاصل کررہے ہیں۔ یونیورسٹیوں کے ڈھیر لگ گئے اور نئے نئے کورسز پڑھائے جانے لگے۔ اگرچہ اس میں بھی بہت سی خرابیاں ہیں جیسے تعلیم کا معیار وغیرہ۔ لیکن اس پالیسی میں پہلی بار ایک سائنسدان ڈاکٹر عطاء الرحمٰن کو اعلٰی تعلیم کے سیاہ و سفید کا مالک بنایا گیا۔ اعلٰی تعلیم کا بجٹ ایک بار کٹ بھی چکا ہے لیکن ایوان صدر نے اس کی کمی پوری کردی تھی۔ چونکہ اس وقت فوجی وردی موجود تھی۔ لیکن اب کیا ہوگا؟

ہمارے ہاں جو شعبہ سب سے متاثر ہوتا ہے وہ تعلیم ہے۔ نئی حکومت میں یہ لگ رہا ہے کہ اعلٰی تعلیم کا بجٹ بہت سکیڑ دیا جائے گا۔ شاید پچھلے آٹھ سالوں کی “کارکردگی” کی بنیاد پر ڈاکٹر عطاءالرحمٰن کو بھی احتساب عدالتوں کے چکر لگانے پڑیں۔ یہی ایک جمہوری حکومت میں اور آمریت میں فرق ہوتا ہے۔ آمر کے پاس جو وژن ہوتا ہے وہ اسے لاگو کردیتا ہے اور ہر حال میں لاگو کرتا ہے۔ جمہوریت ایسا ہجوم بن جاتا ہے جس میں جتنے منہ اتنی آوازیں۔ لیکن یہ آوازیں اپنے کھابوں کے لیے ہمیشہ یک آواز ہوتی ہیں۔ مجھے اعلٰی تعلیم کے لیے وقف شدہ فنڈز غرب مکاؤ یا ایسے ہی کسی دوسرے زمرے میں منتقل ہوتے نظر آرہے ہین۔

چلتے چلتے ایک اور بات ق لیگ والوں نے اپنے پیشرؤوں کے لیے بڑے مناسب قمسم کے ایشوز چھوڑے ہیں۔ جیسے کہ تیل کی قیمتیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔تیل کی قیمتیں ایک دو روپے لیٹر نہیں کم از کم دس روپے لیٹر بڑھ جائیں گی۔ عالمی مارکیٹ میں تو آپ کو ریٹس کا اندازہ ہی ہے۔ بھارت میں بھی کچھ دن پہلے تیل کی قیمتیں بڑھا دی گئی ہیں۔ اب لگتا ہے کہ پٹرول کم از کم 80 روہے لیٹر اور ڈیزل 50 روپے لیٹر ہوجائے گا۔ اس کے ساتھ ہی مہنگائی کی ایک اور شدید لہر اٹھے گی۔ ضروریات زندگی کی ہر چیز مہنگی ہوجائے گی۔ بشمول بجلی جس کے فی یونٹ اضافے کی درخواست فورًا کردی جائے گی۔ ایک پرآزمائش گرما ہمارا منتظر ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔



تاريخ : Thu 28 Feb 2008 | 10 AM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |
با کنار کشیدن هند از طرح خط لوله صلح که گاز ایران را از خاک پاکستان به هند انتقال می داد  همکنون دولت چین که در حال تعمیر شاهراه مهم قراقروم می باشد اعلام کرده است که تمایل دارد گاز ایران از طریق شاهراه قراقروم به چین انتقال یابد .

با توجه به نیاز شدید چین و از طرفی پاکستان امید می رود این قرارداد به سرنوشت قرارداد با هند منجر نشود

اما نکته مهم برای بلتستان این است که با انتقال گاز از طریق شاهراه قراقروم احتمال گاز دار شدن این منطقه بسیار زیاد است .



تاريخ : Wed 27 Feb 2008 | 11 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |
یوں تو پاکستان کے شمالی علاقہ جات میں چھوٹی بڑی ان گنت جھیلیں موجود ہیں لیکن اپنے ماحولیاتی نظام اور قدرتی حسن کے باعث چند ہی جھیلیں ایسی ہیں کہ جو مسافر کا دامن دل اپنی جانب کھینچتی ہیں۔

انہیں میں سے ایک سد پارہ جھیل بھی ہے۔ دشوار گزار راستوں سے گزر کر جب آپ سکردو پہنچیں تو اس جھیل تک رسائی کے لیے مزید آٹھ کلو میٹر کی مسافت آڑھے ترچھے اور تنگ پہاڑی گزرگاہوں پر جیپ کے ذریعے طے کرنا پڑتی ہے۔ اور ہوتا یوں ہے کہ اچانک سنگلاخ پہاڑوں پر سفر کرتے کرتے آپ کی نگاہوں کے سامنے نیلے پانی کی جھلمل کرتی چادر لہرانے لگتی ہے اور سیاح حیرت کے عالم میں اپنی گاڑی روکنے پر مجبور ہوجاتا ہے۔

بلندی سے نیچے جھانکتے ہوئے پہاڑوں کے دامن میں آباد جھیل پر نظر ڈالیں تو اس کے بیچوں بیچ ایک چھوٹا سا ہرا بھرا جزیرہ دکھائی دیتا ہے اور اس کے کناروں پر سرو قد درخت اس طرح ایستادہ نظر آتے ہیں کہ جیسے وہ اس خوبصورت جھیل کو نامحرم نگاہوں سے بچانے کے لیے بطور محافظ کھڑے ہیں۔

شمالی علاقہ جات کا خطہ دیو مالائی کہانیوں سے مالامال ہے اور سدپارہ جھیل بھی اس سے مثتثنیٰ نہیں۔ عارف حسین بلتستان کے رہنے والے ہیں اور یہاں کی دیومالائی کہانیوں میں دلچسپی رکھتے ہیں۔ وہ کہتے ہیں کہ ’جس جگہ یہ جھیل ہے وہاں صدیوں پہلے ایک گاؤں ہوا کرتا تھا۔ کہتے ہیں کہ ایک دن اس گاؤں میں کوئی بزرگ فقیر کے بھیس میں لوگوں کو آزمانے کے لیے آئے۔انہوں نے بستی والوں سے کھانے پینے کی چیزیں مانگی۔سوائے ایک بڑھیا کے کسی نے بھی ان کی مدد نہیں کی۔ اس بزرگ نے بستی والوں سے ناراض ہو کر انہیں بددعا دی لیکن ساتھ ساتھ یہ دعا بھی کی نیک بڑھیا جس نے ان کی مدد کی تھی، اسے کچھ نقصان نہ پہنچے۔ دعا قبول ہوئی اور راتوں رات گاؤں الٹ گیا اور اس کی جگہ پانی کا چشمہ پھوٹ پڑا اور دیکھتے ہی دیکھتے یہ پانی ایک بڑی جھیل میں تبدیل ہو گیا۔ البتہ حیرت کی بات یہ ہوئی کہ جس جگہ نیک دل بڑھیا کا گھر تھا وہاں پانی اس سے دور رہا۔ یوں یہ جزیرہ آج بھی سلامت ہے‘۔

جب میں ان سے پوچھا کہ سدپارہ کے معنی کیا ہیں تو عارف کا جواب تھا ’سات دروازے! اس کی وجہ یہ بیان کی جاتی ہے کہ جھیل تک پہنچنے والا پانی جن راستوں سے گزرتا تھا اس گزرگاہ میں سات راجاؤں کے ریاستوں کی حدود آتی تھیں، اسی لیے یہ جھیل سدپارہ جھیل کہلائی‘۔

 

دیومالائی کہانیاں اور علمی بحث اپنی جگہ تاہم ٹھوس یہ حقیقت ہے کہ سطح سمندر سے آٹھ ہزار پانچ سو فٹ کی بلندی پر واقع یہ خوبصورت جھیل میٹھے پانی سے لبریز ہے اور اس کے دو تین سمت سنگلاخ چٹانیں ہیں۔ موسم سرما میں ان پہاڑوں پر برف پڑتی ہے اور جب گرمیوں کے آغاز میں یہ برف پگھلنا شروع ہوتی ہے تو نہ صرف ان کا بلکہ چند گھنٹوں کی مسافت پر واقع دیوسائی نیشنل پارک سے نکلنے والے قدرتی ندی نالوں کا پانی بھی بہتا ہوا اس میں جا گرتا ہے اور یہ پانی پن بجلی کی تیاری اور اسکردو کے شہریوں کی ضرورت آب پوری کرنے کے علاوہ قریب واقع سدپارہ گاؤں سمیت قرب و جوار کی دوجنوں چھوٹی چھوٹی بستیوں کے مکینوں کی زرعی پانی کی ضرورت بھی پوری کرتا ہے۔

اسکردو کی زراعت بڑی حد تک بارش پر انحصار کرتی ہے، یوں یہ پانی بارانی علاقوں کی مقامی آباد گاروں کے لیے نعمت غیر مترقبہ سے کم نہیں۔ صرف یہی نہیں، جھیل متعدد مقامی اور ہجرت کر کے آنے والے موسمی پرندوں کا بھی ٹھکانا ہے جو اس کی کوکھ میں موجود آبی حیات سے خوراک کی ضرورت پوری کر لیتے ہیں۔ حسن فطرت آنکھوں کو تازگی بخشنے کے علاوہ اپنے اندر ایک مکمل ماحولیاتی نظام بھی رکھتا ہے اس طرح یہ جھیل بھی مختلف چرند و پرند کی آماجگاہ ہے۔

گزشتہ چند برسوں کے دوران پاکستان میں قلت آب کی صورتحال نے حکومت پاکستان کو اس بات کا احساس دلایا کہ ملک میں چھوتے بڑے ڈیم تعمیر کیے جائیں ۔ کالا باغ اور بھاشا ڈیم جیسے بڑے منصوبے تو شدید تنقید کی زد میں ہیں لیکن چھوٹے ڈیموں کی تعمیر کے لیے حکومت کو کسی رکاوٹ کا سامنا کرنے کی بجائے مقامی لوگوں کی حمایت حاصل ہوئی ہے۔

اسی لیے جب سدپارہ جھیل پر ڈیم کی تعمیر کا منصوبہ سامنے آیا تو جہاں ایک طرف ماہرین ماحولیات نے اس پر اپنے تحفظات کا اظہار کیا تو وہیں مقامی لوگوں نے زیادہ بجلی اور پانی ملنے کی نوید سن کر منصوبے کا خیر مقدم کیا۔

سدپارہ جھیل پر ڈیم کا منصوبہ 2003 میں شروع ہوا جو اب تیزی سے تکمیل پا رہا ہے۔ امید ہے کہ منصوبہ 2006 تک مکمل ہوجائے گا۔ تاہم 2005 سے ہی یہ ابتدائی سطح پر کام کا آغاز کر دے گا۔ ڈیم کی تعمیر کی ذمہ داری پاکستان میں پانی اور بجلی کے نگران ادارے واپڈا کو سونپی گئی ہے اور اس کی نگرانی میں ایک نجی تعمیراتی ادارہ منصوبے کو عملی شکل دے رہا ہے۔ حکومتی اعداد و شمار کے مطابق ڈیم کے مکمل ہونے پر جھیل کے پانی کی موجودہ سطح مزید 133 فٹ بلند ہو جائے گی۔ اسکردو کو لگ بھگ 13 میگا واٹ اضافی پن بجلی مہیا ہوگی جب کہ شہریوں کو یومیہ 30 لاکھ گیلن پینے کا پانی فراہم کرنے کے علاوہ 20 ہزار کینال زرعی رقبہ بھی زیر کاشت لایا جا سکے گا۔ منصوبے کے مطابق ڈیم کو بھرنے کے لیے موسم سرما کی برف پگھلنے سے حاصل ہونے والے پانی کے علاوہ دیوسائی نیشنل پارک میں بہنے والے قدرتی نالے جسے شتونگ کہا جاتا ہے ، کا رخ موڑ کر ایک نالہ ڈیم تک لایا جائے گا۔

دیوسائی کو بھورے ریچھوں، برفانی چیتوں اور دیگر نایاب جانوروں اور پرندوں کی موجودگی کے باعث 1993 میں نیشنل پارک کا درجہ دیا گیا تھا اور اس حیثیت میں اسے ان تمام ملکی اور غیر ملکی قوانین کے تحت تحفظ حاصل ہے جن کا اطلاق محفوظ قرار دیے گئے علاقوں پر ہوتا ہے اور حکومت پاکستان بھی جنہیں تسلیم کرتی ہے۔

ڈیم کی تعمیر کے وقتی فائدے اپنی جگہ لیکن اسکردو سے بہت دور کراچی میں بیٹھے ہوئے ماہر ماحول ڈاکٹر نجم خورشید اس سے متفق نہیں ہیں۔ ڈاکٹر نجم خورشید رامسر کنوینشن ہیڈکوارٹڑ سوئزرلینڈ میں کئی سالوں تک بطور کوآرڈینیٹر ایشیا بھی خدمات سر انجام دے چکے ہیں۔ وہ کہتے ہیں کہ ’کسی بھی جھیل کو ڈیم میں تبدیل کر دینے سے بے شک قلیل المدت فوائد حاصل ہوتے ہیں لیکن ایک بات طے ہے کہ طویل المدت تناظر میں وہ خود ہی ان زمینوں کے لیے خطرہ بن جاتے ہیں جنہیں آباد کرنے کے لیے یہ تعمیر کیے جاتے ہیں۔ دوسری طرف ہر آب گاہ کا اپنا ایک ماحولیاتی نظام ہوتا ہے اور جب اس طرح کے منصوبوں کو عملی شکل دی جاتی ہے تو نہ صرف یہ آبی حیات بلکہ جھیل کے پورے قدرتی ماحولیاتی نظام کو بھی تہہ وبالا کر دیتی ہے۔ افسوس کی بات ہے کہ نقصان کی کسی طرح بھی تلافی نہیں کی جاسکتی۔

 

موضوعات مرتبط: اخبار بلتستان

تاريخ : Wed 27 Feb 2008 | 11 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |



ناردرن ایریاز ٹرانسپورٹ کارپوریشن دوران سفر مسافروں کے آرام اور سہولیات کی خاطر شاہراہ قراقرم پر موجود ہوٹلوں کی بہتری کیلئے اقدامات کرے گا اس سلسلے میں گزشتہ روز منیجنگ ڈائریکٹر نیٹکو ظفر اقبال کی زیر صدارت ہونے والے ایک اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ قراقرم ہائی وے پر نیٹکو بسوں کے اسٹاپ والی جگہوں میں موجود ہوٹلوں کے معیار کو بہتر بنانے کے لئے خصوصی انتظامات اٹھائے جائینگے تاکہ مسافروں کو بہترین سہولیات مل سکیں اس موقع پر فیصلہ کیا گیا کہ چلاس کے مقام پر مسافروں کی سہولت کیلئے نیا ہوٹل تعمیر کیا جائے گا اور داسو میں موجود ہوٹل کے ہال کو کشادہ کرنے اور معیار کو بہتر بنانے کے حوالے سے بھی فوری اقدامات اٹھائینگے اس موقع پر فیصلہ کیا گیا کہ ان ہوٹلوں میں موجود عملے کی استعدا کار میں اضافے کے لئے خصوصی تربیت دی جائے گی اور چیک اینڈ بیلنس کے نظام کو مزید موثر بنانے کے لئے نگرانی کی جائے گی ایم ڈی نیٹکو نے کہا کہ عوام کو بہترین سفریسہولیات فراہم کرنے کے لئے ادارہ سرگرم عمل ہے انہوں نے کہا کہ نیٹکو کی ہمشہ سے ہی کوشش رہی ہے کہ اس ادارے کی بسوں میں سفر کرنے والے مسافروں کو دور جدید کے شعبے میں بہتری لانا بھی اس سلسلے کی ایک کڑی ہے۔



تاريخ : Wed 27 Feb 2008 | 11 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

چند هفته است که آخرین جنگ در پاراچنار پایان یافته ؛ ولی ابعاد گوناگون آن هر روز بیشتر روشن می‌شود و تاسف همگان را بر می‌انگیزد.

پنج روز پیش «جرگه» یا مجلسی که برای صلح تشکیل شده بود از طرفین درگیر - یعنی شیعیان و گروههای ناصبی- خواست گروگانهایی را که از یکدیگر در اختیار دارند، تحویل این مجلس دهند؛ در نتیجه شیعیان 8 تن از یزیدیانی را که - در مقابل 6نفر خدمه 3 دستگاه تانکر سوخت و 6 نفر سرباز سپاه مرزی ربوده شده توسط یزیدیان در روستای «چپری» واقع در ورودی شهرستان «کرم ایجنسی»- گروگان گرفته بودند و مانند مهمان از آنان پذیرایی کرده بودند، را تحویل این مجلس دادند اما در مقابل یزیدیان 6 جسد و 6 نفر مجروح را تحویل این مجلس داده اند.

براساس گزارش ها از پاراچنار، اجساد شهداء نشان از آن دارد که آنها قبل از شهادت به شدت هدف خشونت مخصوص یزیدیان ناصبی قرار گرفته اند و وضع 6 نفر دیگر نیز به شدت وخیم است.

این حادثه بار دیگر خشم و انزجار شیعیان را برانگیخت و آنان از دولت و مقامات محلی خواسته اند که عاملان این اقدام غیرانسانی و غیر اسلامی و حتی مغایر با فرهنگ قبائلی، را فورا دستگیر و مجازات نمایند.

براساس این گزارش، بعد از مرحله اول جنگ دوم – که از اواسط نوامبر سال گذشته آغاز شده بود و در اوائل ژانویه سال جاری میلادی پایان یافت – بیش از صد نفر از اعضاء اصلی القاعده با یونیفورم ارتش با شعار ایجاد امنیت در شهر وارد پاراچنار شدند و در مسجد ناصبیان مستقر گردیدند اما بعد از یکی دو روز آنها نیز شیطنت هایی را در شهر آغاز کردند که این امر باعث آغاز مرحله دوم جنگی شد که بیش از 50 روز ادامه یافت.

مبارزین شیعه در طول این جنگ هرگز وارد مسجد اصلی ناصبیان نشدند ولی بعد از پایان جنگ ارتش وارد این مسجد شد و دهها جنازه را با هلی کوپتر از منطقه دور کرد که گفته می شود متعلق به اعضاء معروف گروه تروریستی القاعده بوده اند. 85 جسد از این جنازه ها – که در میانشان 11 نفر از اتباع کشورهای فرانسه، سودان و برخی کشورهای عربی دیگر دیده می شدند – در یک گور جمعی به خاک سپرده شدند. این درحالی است که در این درگیریها 13 تن از افسران و سربازان ارتش نیز کشته شده بودند.

کسانی که به درون مسجد رفته بودند به خبرنگار ابنا گفتند که درحالی که شیعیان هرگز به مسجد متعرض نشده اند، آثار تیراندازیهای شدید بر دیوار های مسجد هویدا است. لذا چنین به نظر می رسد که ارتشیان به بهانه امدادرسانی و تحویل مواد غذائی و داروئی وارد مسجد شده اند و براثر درگیری فیمابین همه افراد القاعده کشته شده و بیش از 10 افسر و سرباز ارتش نیز در همین درگیری جان باخته اند زیرا شیعیان در هیچ موردی به نیروهای دولتی حمله نکرده اند.

این گزارش به نقل از منابع آگاه می افزاید که اعضاء القاعده طی تماسی با ارتش خواستار مواد غذائی و داروئی شده و خواسته بودند که مواد درخواستی توسط نیروهای سپاه مرزی - که عمدتا از مناطق مختلف وزیرستان شمالی و جنوبی می باشند – به مسجد محل استقرار القاعده انتقال داده شود. ارتش عده ای از کماندوهای خود را با یونیفورم مخصوص شبه نظامیان سپاه مرزی وارد مسجد کرد که به دنبال آن، درگیری مورد اشاره رخ داده است.

جنگهای اخیر در پاراچنار با سه هدف شعله ور شد:

1. تضعیف شیعه و متوقف کردن روند پیشرفت این منطقه شیعه نشین و سرسبز و زیبا، که هم از لحاظ طبیعی زیباترین و آبادترین است و هم از نظر سطح سواد و حضور در عرصه های گوناگون کشور در بین این مناطق بی نظیر است.

2. جمع آوری تروریست های خطرناک در یک نقطه. دولت و ارتش که در مناطق گوناگون قبائلی از جمله در «وزیرستان»، «خیبر»، «مهمند»، «باجور»، «سوات» و «اورکزئی» با مشکلات عدیده ای از جمله مقاومت شدید تروریستها روبرو است و از قرار معلوم با ایجاد جنگ در پاراچنار و اعلام جهاد از سوی تروریستها علیه شیعیان در سایر مناطق قبائلی، تعداد کثیری از آنها در پاراچنار حضور یافته بودند. دلیل این امر اجساد بیشماری بوده که به مناطق مختلف انتقال یافته است. تبلیغات برای جمع آوری تروریستها جهت مبارزه با شیعیان بقدری وسیع بوده که از همه مناطق قبائلی پاکستان هزاران نفر در مناطق جنوب غرب پاراچنار تجمع کرده بودند. ضمن این که آنها از ناحیه طالبان افغانستان نیز پشتیبانی می شده اند.
البته یکی از فرماندهان معروف طالبان افعانستان «ملافضل شاه» در جنگ ربیع الاول در این منطقه به هلاکت رسیده بود. گفته می شود که در بعضی موارد ارتش نیز با کاروانهای تروریستهای عازم پاراچنار در مناطق ورودی کرم ایجنسی – با مرکزیت پاراچنار - درگیر شده و دور از چشم شیعیان با استفاده از بالگردهای توپدار دهها تن از آنها را به هلاکت رسانده است و چنین به نظیر می رسد که ارتش و دولت خواهان رویارویی تروریستها با شیعیان در پاراچنار و گردآوری آنها در این منطقه بوده تا به آسانی بتوان آنها را – در خارج از مناطق محل سکونتشان – نابود کرد.

3. ایجاد اختلاف در بین شیعیان پاراچنار و قبائل دیگر. در نتیجه این اقدامات که هم اینک عبور شیعیان از مناطق قبائلی غیر شیعه غیر ممکن است و در صورتی که بخواهند از این مناطق عبور کنند و شناسائی شوند احتمال زنده ماندنشان به شدت ضعیف خواهد بود، ضمن این که راههای پاراچنار به سایر مناطق پاکستان هنوز ناامن است و مسافرانی هم که با اسکورت نیروهای دولتی حرکت می کنند – در مناطق غیر شیعه - با توهین و فحاشی روبرو می شوند.
با توجه به واقعیتهای موجود می توان گفت که هدف اول و سوم تا حدود زیادی حاصل شده و فاصله بین شیعیان و غیرشیعیان به شدت افزایش یافته است و حمله اول یزیدیان به شیعیان در روز 17 ربیع الاول سال گذشته هجری قمری – زمانی که کنفرانس وحدت اسلامی در حسینیه شیعیان با حضور علماء شیعه وسنی در حال برگزاری بود – خود گویای این بود که چه اهداف دیگری از این اقدامات دنبال می شود. البته ناگفته پیدا است که تلاش پاکستان برای تغییر وضعیت حقوقی خط دیورند به مرز بین المللی ناآرام کردن مناطق پشتون نشین برای نیل به این هدف را نیز نباید از نظر دور داشت به خصوص که منطقه پاراچنار با سه استان «پکتیا»، «خوست» و «ننگرهار» افغانستان مرز مشترک دارد و برای افغانستان از این ناحیه هیچ تهدیدی وجود ندارد در حالیکه دیگر مناطق قبائلی ناآرام می باشند.
آنچه مسلم است تحویل جنازه های شیعیان و افراد مجروح در مقابل افرادی که سالم از سوی شیعیان به جرگه تحویل داده شده اند، و شهادت بیش از 40 تن از شیعیان در اقدام تروریستی روز شنبه در شهر پاراچنار، اوضاع را یک بار دیگر در منطقه جنگزده پاراچنار با ابهامات متعددی روبرو ساخته است


موضوعات مرتبط: آشنایی با پاکستان

تاريخ : Mon 18 Feb 2008 | 2 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

بي‌نظير بوتو، نخست‌وزير سابق پاكستان و رهبر ترور شده‌ي حزب مردم اين كشور در كتاب خود به نام "آشتي: اسلام ، دموكراسي و غرب" كه امروز(سه‌شنبه) در سراسر جهان عرضه مي‌گردد، نوشته است كه مقام‌هاي پاكستاني به وي گفته بودند، چهار تيم بمب گذار انتحاري از سوي بيت‌الله محسود، سركرده‌ي طالبان در پاكستان، حمزه، پسر اسامه بن لادن و دو گروه شبه نظامي براي كشتن وي اعزام شده‌اند.

بي‌نظير بوتو كه در كتابش پرويز مشرف، رييس جمهور پاكستان را به عدم حمايت كافي و تحقيق در زمينه‌ي اين تهديدها متهم كرده، نوشت: در واقع من اسامي و شماره تلفن همراه تروريست‌هاي تعيين شده را از دولت‌هاي خارجي مسلمان دلسوز گرفته‌ام.

بوتو در كتابش اعلام كرده كه در ماه اكتبر(مهر) پيش از بازگشت به كشور نامه‌اي براي مشرف فرستاده كه در آن از افرادي در سرويس‌هاي اطلاعاتي پاكستان نام برده كه احتمالا اقدام به ترور وي خواهند كرد.

بوتو در صفحه‌ي 318 كتابش كه از سوي نهاد خبري‌ "هارپر كولينز" منتشر شده، نوشته است: من به او (مشرف) گفتم كه اگر توسط شبه نظاميان ترور شوم، براساس خواسته‌ي طرفداران شبه‌نظاميان در رژيم او خواهد بود كه به گمانم قصد حذف من يا كنار زدن تهديد من عليه اعمال قدرت‌ خود را داشته‌اند.

بوتو پس از بازگشت به پاكستان در ماه اكتبر(مهر) پس از هشت سال تبعيد خود خواسته از يك بمب گذاري كه يكي از مرگبارترين حملات در تاريخ پاكستان بود، جان سالم به در برد. اما در راهپيمايي 27 دسامبر(6 دي) بر اثر شليك گلوله و بمب گذاري انتحاري كشته شد.

وي در بخش ديگري از كتابش نوشته است: زماني كه بازگشتم نمي‌دانستم كه زنده خواهم ماند يا مي‌ميرم. از بچه‌هايم و نيز از همسر، مادر، خدمه، دوستان و خانواده‌ام خداحافظي كردم. نمي‌دانستم كه آيا دوباره صورت‌هاي آنها را خواهم ديد يا خير.

بوتو كه پدرش اولين نخست وزير مشهور پاكستان بود و در اواخر دهه‌ي 1970 از سوي نظاميان به دار آويخته شد، نوشته است: مي‌خواستم به آنها اطمينان خاطر بدهم و نيز به آنها گفتم "به ياد داشته باشيد خدا زندگي مي‌دهد و خدا آن را مي‌گيرد. من تا زمانيكه فرصتم تمام نشده باشد، سالم خواهم ماند".

دولت مشرف كه حامي وفادار آمريكا در رهبري عمليات نظامي عليه شبه نظاميان تروريست است، القاعده را عامل قتل بوتو مي‌داند، اما بسياري از مردم پاكستان به ديگر دشمنان بوتو احتمالا از درون سازمان‌هاي امنيتي پشت پرده، مظنون هستند.

بوتو پس از اولين سوء قصد به جانش، نوشته است: از همان لحظات اوليه‌ي حمله،‌ مخفي‌كاري‌ها آغاز شد تا حملات به صورت انتحاري و به سبك القاعده نمايان شود.

وي در ادامه آورده است: در پاكستان كارها تقريبا آن طور كه به نظر مي‌رسند نيستند. هميشه دايره‌هايي درون دايره‌ها وجود دارد و به ندرت خطوط صاف پديدار مي‌شود. عمليات بايد شبيه كارهاي القاعده و طالبان مي‌بود؛ من شك ندارم كه پاي آنها (دولت) نيز در ميان است.

بوتو در ادامه نوشته است: اما پيچيدگي نقشه، توطئه‌ي بزرگتري را نشان مي‌دهد. عناصر سرويس‌هاي اطلاعاتي پاكستان كه طالبان را در دهه‌ي 1980 به وجود آوردند و برخي از عناصر مشخص دوستدار ايدئولوژي و تئوري القاعده، در حال جذب نيروي جديد براي اجراي نقشه‌ي تازه‌اي هستند.

آصف علي زرداري، همسر بي نظير بوتو كه عملا رهبر حزب مردم پاكستان شده همراه با پسر و دخترش در مقدمه‌ي كتاب بوتو نوشته‌اند: اين كتاب درباره‌ي چيزي است كه كساني كه او را كشتند، هرگز آن را درك نخواهند كرد؛ دموكراسي، صبر، منطق، اميد و بالاتر از همه‌ي اينها پيام حقيقي اسلام. يا شايد آنها اين حقايق را درك كرده‌اند و از آن مي‌ترسند و بنابراين از او نيز ترسيدند. او بدترين كابوس ديوانه كننده‌ي آنها بود



تاريخ : Tue 12 Feb 2008 | 11 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

متحدہ مجلس عمل کے قائم مقام صدر واسلامی تحریک پاکستان کے سربراہ علامہ سید ساجد علی نقوی نے کہا ہے کہ شمالی علاقہ جات کو جو صدارتی پیکج ملا ہے یہ ہماری کوششوں کا نتیجہ ہے کیونکہ ہم نے اس خطے کو عوام کی آواز کو ہر سطح پر بلند کیاتھا صرف پیکج دینے سے اس خطے کے عوام کی مایوسی دور نہیں ہوسکتی ہے حکومت سے ہمارا مطالبہ ہے کہ وہ شمالی علاقہ جات کو پانچواں صوبہ بنانے کا اعلان کرے قانون ساز اسمبلی کو صوبائی اسمبلی کا نام دیا جائے اور اس خطے کے عوام کو پاکستان کی قومی اسمبلی اور سینٹ میں بھرپور نمائندگی دینے کیلئے ٹھوس اقدامات کئے جائیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے یہاں گلگت میں ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ہے انہوں نے کہا کہ صدارتی پیکج حقوق کی جانب اہم پیش رفت ہے یہاں کے منتخب نمائندوں کے پاس کوئی اختیارات نہیں ہیں ان کے اختیارات میں زیادہ سے زیادہ اضافہ ہونا چاہیے انہوں نے کہا کہ شمالی علاقہ جات میں کشمیر طرز کی حکومت یا صوبہ بنانے کی گنجایش بین الاقوامی صورتحال کے مطابق موجود ہے۔ اگر اس پر عملدرآمد کو ممکن بنایا گیا تو اس خطے کے عوام کی 60سالہ مایوسی اور بے چینی دور ہوجائیں گی انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ ایم ایم اے وحدت اتحاد کی علامت ہے اور اس کا دائرہ شمالی علاقوں تک بڑھانے کیلئے کردار اداکرینگے قانون کی عملداری میرٹ کی بنیاد پر ہونی چاہیے سیاسی عمل کے تحت قانون اور انصاف کی فراہمی وقت کی اہم ضرورت ہے ایٹمی اثاثوں کے حوالے سے پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ایٹمی اثاثوں سے متعلق عالمی پروپیگنڈہ گمراہ کن ہے اور بعض عالمی طاقتیں اس طرح کی سازشوں کے ذریعے سے پاکستان کے استحکام اور سالمیت کو نقصان پہنچانا چاہتے ہیں مگر ہم ان عالمی سازشوں کا ڈٹ کر مقابلہ کرینگے اور ایٹمی اثاثوں سے متعلق کسی قسم کا کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا انہوں نے کہا کہ ملک میں اس وقت ایک بحران کے بعد دوسرا بحران پیدا ہورہا ہے محترمہ بے نظیر بھٹو کی شہادت بہت بڑا قومی المیہ ہے اور اس دہشت گردی کے ذریعے سے ملک کی سالمیت پر سوالیہ نشان لگا دیا گیا ہے محترمہ کے قاتلوں کو کسی صورت معاف نہیں کردینا چاہیے اس حوالے سے پاکستان پیپلزپارٹی کے مطالبات حق بجانب ہیں جس کی ہم بھرپور حمایت کرتے ہیں ایک غیر جانبدار تحقیقات کے ذریعے اس دہشت گردی میں ملوث افراد کو بے نقاب کیا جائے انہوں نے ایک اور سوال کے جواب میں کہا کہ امن وامان کے حوالے سے شمالی علاقہ جات انتہائی اہمیت کا حامل خطہ ہے اور اس خطے پر بین الاقوامی طاقتوں کی نظریں لگی ہوئی ہیں جو یہاں کے حالات کو خراب کرنے پر تلے ہوئے ہیں مگر شمالی علاقہ جات میں بسنے والے تمام مکاتب فکر شیعہ، سنی، اسماعیلیہ ودیگر مکاتب فکر کے عوام آپس میں اتحاد واتفاق کا مظاہرہ کرکے عالمی طاقتوں کی سازشوں کو ناکام بناسکتے ہیں جس کیلئے تمام مکاتب فکر کے عوام کو مل کر کردار ادا کرنا چاہیے علامہ ساجد علی نقوی نے مزید کہا کہ متحدہ مجلس عمل ٹوٹی نہیں ہے ملکہ برقرار ہے 4مذہبی جماعتوں نے الیکشن لڑنے کا فیصلہ کیا جبکہ جماعت اسلامی نے الیکشن کا بائیکاٹ کیا ہے انتخابات کے بعد مل کر ایم ایم اے کو مزید فعال بنایا جائے گا اور شمالی علاقہ جات میں بھی بہت جلد متحدہ مجلس عمل کا قیام عمل میں لایا جائے گا اور آئندہ کے قانون ساز اسمبلی کے انتخابات میں مجلس عمل شمالی علاقہ جات بھر سے اپنے امیدوار سامنے لائے گی۔



تاريخ : Sun 13 Jan 2008 | 0 AM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

مشیر مالیات مرزا حسین نے کہا ہے کہ ایوان صدر نے وزارت امور کشمیر و شمالی علاقہ جات اور دیگر متعلقہ اداروں کو ہدایات جاری کردی ہےں کہ شمالی علاقوں کو اختیارات اورحیثیت کے لحاظ سے بتدریج صوبے کی سطح پر لایا جائے ۔ مرزا حسین نے کے پی این سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ایوان صدر کی طرف سے وزارت امور کشمیر کو موصول ہونے والی ہدایات میں سب سے اہم بات کارگل سکردو روڈ کو کھولنا ہے ۔ اس کے علاوہ اس میں آڈیٹر جنرل اور ایڈیشنل چیف سیکرٹری کی تقرری ¾ زرعی قرضوں کی معافی اور پبلک اکاﺅنٹس کے قیام سمیت اہم معاملات شامل ہیں ۔ایل ایف او میںترامیم کے نتیجے میں چیف ایگزیکٹو کو بہت سارے اختیارات مل گئے ہیں ۔ پہلے وہ صرف گریڈ 18کے افسروں کا تبادلہ کرسکتے تھے ۔ اب انہیں مالیاتی اختیارات بھی مل گئے ہیں اوراب وہ نئی تقرریاں بھی کرسکتے ہیں ۔ مرزا حسین نے کہا کہ قانون ساز اسمبلی کو ایل ایف او میں مزید ترامیم کابھی حق مل گیا ہے ۔ اوراب ہم اس میں وہ تمام ترامیم کرسکتے ہیں شرط صرف یہ ہے کہ کوئی ترمیم آئین پاکستان سے متصادم نہ ہو ۔ اس وقت تحریک عدم اعتماد کےلئے دوتہائی اکثریت کی شرط رکھی گئی ہے ۔ دوتہائی کو سادہ اکثریت میں تبدیل کرنے کےلئے دوبارہ سمری بھی جھی جارہی ہےں ۔ اس کے علاوہ قانون ساز اسمبلی خود بھی اس میں ترمیم کرسکتی ہے ۔ ہم چاہتے ہیں کہ قانون ساز اسمبلی کو عدم اعتماد کی تحریک لانے کا بھی حق ملنا چاہےے جو دیگر صوبوں اور قومی اسمبلی کے ارکان کو حاصل ہے ۔ انہوںنے کہا کہ ہم صدر جنرل پرویز مشرف کے شکر گزار ہیں کہ انہوںنے ہمارے مسائل حل کرنے میں دلچسپی لی ہمیں امید ہے کہ صدر جنرل پرویز مشرف کی ذاتی دلچسپی کے پیش نظر ہم بہت جلد شمالی علاقوں کو صوبہ کا درجہ دلانے میں کامیاب ہو جائیں گے



تاريخ : Sun 25 Nov 2007 | 6 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

یوٹیلٹی سٹورز شمالی علاقہ جات کے انچارج چنگیزخان سکردو کے مختلف یوٹیلٹی سٹورز کا تفصیلی دورہ کیااس موقع پر انہوں نے یہاں کے چند عوامی نمائندے اورعوام سے بھی ملاقات کی اورانہوں نے کہا کہ سردیاں شروع ہونے سے قبل بلتستان میںموجود یوٹیلٹی سٹوروں کے اندر سامان کی قلت کومکمل طورپر ختم کردیاجائے گا تاکہ گلگت سکردو روڈ بلاک ہونے کی صورت میں عوام کو مشکلات کا سامنا نہ آنا پڑے ہماری کوشش ہے کہ یوٹیلٹی سٹوروں میں معیاری اور اچھی کوالٹی کی اشیاءخوردنوش عوام الناس تک پہنچاسکےں عوام الناس سے بھی ہماری گزارش ہے کہ جہاں جہاں یوٹیلٹی سٹوروں کے حوالے سے کوئی مسئلہ ہویا کوئی کمی ہو براہ کرم ہمیں آگاہ کریں ہم خامیوںکودور کرنے کیلئے ہرممکن کوشش کرینگے ہمارا نعرہ ہے کہ عوام الناس کوگھر کی دیلیز پراچھی کوالٹی اور معیاری سامان کم ریٹ پرمل سکے اس کے علاوہ انہوں نے کہا ہماری کوشش ہے کہ شمالی علاقہ جات خصوصاً بلتستان کے مختلف اضلاع میں مزید یوٹیلٹی سٹورز کھولیں جائیں گے چنگیزخان کے ساتھ یوٹیلٹی سٹورز شمالی علاقہ جات کے اکاﺅنٹ آفیسر محبت امین نے بھی بلتستان کے مختلف یوٹیلٹی سٹوروں کا تفصیلی دورہ کیا اور چیکنگ وغیرہ کی چنگیز خان کے مزید یوٹیلٹی سٹورز کھولنے کے اعلان پر خوشی کا اظہار کیاگیا ہے اور ان کی کارکردگی کوسراہا گیا ہے



تاريخ : Thu 22 Nov 2007 | 3 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |



خپلو ہنجور روڈ آثار قدیمہ کا منظر پیش کرنے لگا جگہ جگہ کھڈے بن گئے بیرونی دیواریں گر گئیں اور ڈرائیور سٹرک پر گاڑی چلانے سے کترانے لگے کے پی این کوہنجور میں زمینداری کرنے والے کئی حلقوں نے بتایا کہ خپلو کی عوامی قیادت نے کبھی اس روڈ کی بحالی یا اس کو چوڑا کرنے کا نہیں سوچا انہوںنے کہا کہ ہنجور روڈ جب سے بنا ہے اس کی دیکھ بھال پر فنڈ خرچ نہیں کیاگیا انہوںنے کہا کہ ہنجور کو خپلو کی زمینداری میں شہ رگ کی حیثیت حاصل ہے یہاں سینکڑوں ایکڑ اراضی پر بلتستان کی سب سے قیمتی گھاس بوک سوک آباد ہے اورسالانہ سینکڑوں ٹن گھاس حاصل کی جاتی ہے انہوںنے کہا کہ بعض لوگ ہنجور میں سٹیڈیم تعمیر کرنے اورسرکاری کوارٹر بنانے کی بات کرتے ہیں انہیں چاہےے کہ و ہ پہلے یہاں برسوں پرانی سٹرک کو دوبارہ تعمیر کر کے دکھائے خپلو کے سنجیدہ حلقوں نے ہنجور کی ترقی پرتوجہ نہ دینے پر گہرے افسوس کا اظہار کیا انہوںنے کہا کہ چند کلومیٹر کے روڈ کےلئے عوام کوٹریکٹروں کا مہنگا کرایہ دینا پڑتا ہے کچی اور تنگ سٹرک پر کوئی ڈرائیور خوشی سے جانے پر تیارنہیں ۔



تاريخ : Sat 17 Nov 2007 | 10 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |



ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹر ہسپتال سکردو میں مریضوں کے لئے صرف تین قسم کی دوائیں دستیاب ہیں اور ڈاکٹر ہرقسم کے مریض کے لئے ان تین میں سے کسی بھی ایک دوائی کا نسخہ لکھ دیتے ہیں ان دوائیوں میںپیراسٹیامول بیروفن اوربچوں کے لئے بخارسے نجات کاایک شربت موجود ہیں جبکہ سارے مریض ڈاکٹر کی لکھی پرچیوں کولیکر میڈیکل سٹورز کا رخ کرتے ہیں جہاں تمام دوائیاں عام مریضوں کی قوت خریدسے باہر ہیں اس طرح بہت سارے مریض غربت کی وجہ سے مہنگی دوائیاں خریدنے سے قاصر ہیں اور چار وناچارموت کولبیک کہتے ہیں سننے میں آیا ہے کہ دوائیوں کی مد میں شہر کے سب سے بڑے ہسپتال کوسالانہ کروڑوں روپے کابجٹ منظور ہوتا ہے مگراتنی خطیررقم کہاں جاتی ہے اس کا علم بے چارے مریضوں کوکہاں مریضوں اورعوام نے مطالبہ کیا ہے کہ مریضوں کے لئے درکارتمام ضروری دوائیاں ہسپتال ہی سے ملنی چاہیں ورنہ اس ہسپتال کوبند کردیاجائے۔



تاريخ : Sat 17 Nov 2007 | 10 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |


ناردرن ایریاز ٹرانسپورٹ کا رپوریشن کے منیجنگ ڈائریکٹر ظفر اقبال نے کہا ہے کہ نیٹکو شمالی علاقوں کے عوام کو جدید اور آرام دہ سفری سہولیات فراہم کررہی ہے انہوں نے کے پی این سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ عنقریب ایک آرام دہ بس سروس شروع کررہے ہیں جس کے لیے بسیں بیرون ملک سے درآمد کی گئی ہیں انہوں نے کہا کہ نیٹکو نے شروع سے اس علاقے کے عوام کے لئے بہترین ٹرانسپورٹ سروس فراہم کی ہے جس سے یہاں کے عوام مستفید ہورہے ہیں انہوں نے کہا کہ نیٹکو واحد ادارہ ہے جس کی بسیں کراچی سے لے کر کاشغر تک چلتی ہیں اور ہزاروں افراد نیٹکو کی بسوں میں روزانہ سفر کرتے ہیں انہوں نے کہا کہ نیٹکو سے ہزاروں افراد کا روزگار وابستہ ہے یہی وجہ ہے کہ تمام افراد محنت اور تنذہی سے کام کررہے ہیں اور نیٹکو دن بدن ترقی کی راہ پر گامزن ہے اور اپنے مطلوبہ ہدف سے زیادہ کامیابی حاصل کررہی ہے۔



تاريخ : Sat 17 Nov 2007 | 10 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |
جرم اولین سرباز شیعه‌ای که به قتل رسید این بود که در بین وسائل شخصی او یک مهر نماز، یک کتاب درباره آموزش نماز به طریق مذهب جعفری و کتابی از شهید مطهری پیدا کردند!


به دنبال سر بریده شدن دومین سرباز شیعه در منطقه دوآبه پاکستان، عده‌ای از شیعیان منطقه برای جلوگیری از ادامه این وضعیت دست به اقدام تلافی جویانه زده و یک نفر از افراد مشکوک گروهک‌های تکفیری را در پاراچنار به هلاکت رساندند.

 به نقل از ابنا، به دنبال این اقدام شیعیان، گروه یزیدی، اهل سنت شهر پاراچنار را وادار به بستن مغازه هایشان کردند که این امر شیعیان منطقه را با احتمال یک جنگ دیگر روبرو و به شدت نگران کرد و دبیر انجمن حسینی از فرمانده گردان سپاه مرزی خواست که از جنگ ویرانگر دیگر جلوگیری کند.

پس از ورود فرمانده گردان به شهر – در حالی که انتظار می رفت از بروز جنگ جلوگیری شود – شیعیان در نزد مقر یزیدیان مورد حمله نارنجک قرار گرفتند و به دنبال آن نیروهای سپاه مرزی که عمدتا از ساکنان شهرستان های ناآرام وزیرستان شمالی و جنوبی هستند – به سوی شیعیان آتش گشودند که این حمله باعث به شهادت رسیدن بیش از 8 نفر و مجروح شدن 50 نفر دیگر شد.

بنا بر گزارش واصله از پاراچنار نیروهای دولتی به مدت یک ساعت با شیعیان به زد وخورد پرداختند که در نتیجه چند نفر از سربازان نیز کشته یا زخمی شدند.

نیروهای دولتی، مجروحان گروه یزیدی انجمن فاروقی را همراه با سربازان مجروح به بیمارستان نظامی انتقال دادند در حالی که مجروحان شیعه به بیمارستان دولتی منتقل شدند که از نظر امکانات و دارو و پزشک با بیمارستان نظامی قابل مقایسه نیست. لازم به ذکر است که نیروهای دولتی در جنگ ربیع الاول امسال نیز رفتار مشابهی داشته اند و جنگ را آنها آغاز کرده بودند.

گفته می شود که صدها تن از طالبان در مناطق مختلف شهر مستقر شده اند و از یک باب مسجد و یک هتل خمپاره به اطراف پرتاب می شود.

علاوه بر این منطقه «بوشهره» – که گفته می شود به مدت نسبتا قابل توجهی محل اقامت اسامه بن لادن نیز بوده است – نیز جنگ آغاز شده است و منطقه بالش خیل هم اکنون از سوی یزیدیان تهدید می شود.

قابل ذکر است که یک سرباز شیعه که در بین نیروهای دولتی در وزیرستان جنوبی به اسارت گرفته شده بود، دو ماه پیش توسط طالبان محلی آن منطقه به قتل رسیده و CD قتل وی با نام «انتقام» در اختیار رسانه ها قرار گرفته بود.

در آن لوح فشرده تروریستها وسائل شخصی سرباز شیعه به نام «لائق حسین» را باز می کنند و مهر نماز و یک کتاب درباره آموزش نماز به طریق مذهب جعفری و کتابی از شهید مطهری را از وی کشف می کنند و گوینده اظهار می دارد: «ببینید او مرتد و کافر است!» و آنگاه به طرز فجیعی سر او را از بدن جدا می‌کنند و در عین حال کلاه نظامی را بر سر بریده او می گذارند و در نزدیک شهر «وانا» مرکز وزیرستان جنوبی کنار جاده رها می کنند و سایر نیروهای اسیر را که غیر شیعه بودند، چند روز بعد آزاد می کنند.

در چند ماه گذشته همچنین در منطقه هنگو چند نفر از سربازان شیعه پاراچناری که در پلیس مشغول خدمت بوده اند توسط تروریستهای یزیدی تکفیری به قتل رسیدند و سه روز قبل یک سرباز دیگر به نام «سید امجد حسین حسینی» در نزدیکی یک پاسگاه پلیس (!) توسط تروریستها ربوده شد و جسدش دو روز قبل با سر و دستان بریده شده در نزدیک شهر هنگو کشف شد. در نزدیکی بدن وی رقعه ای نیز یافت شد که به گفته نیروهای پلیس بر روی آن نوشته شده بود که نیروهای دولتی نباید در محله ها به گشت و گذار بپردازند و سرنوشت جاسوسان همین است.

مهمترین سؤالی که اینجا مطرح است این است که این چگونه تناقضی است که از یک سو بظاهر نیروهای دولتی با تروریستها مشغول نبرد هستند و سربازان شیعه برای مهار تروریستها به کار گرفته می شوند و در این راه جان و سر می بازند و از سوی دیگر نیروهای دولتی نه فقط از همان تروریستها حمایت می کنند بلکه خود نقش دسته های پیشمرگ آنها را بازی می کنند؟

پاکستان هم اکنون در همه مناطق قبائلی، با شورش های وسیعی روبرو است و نیروهای ارتش در سوات و وزیرستان رسوایی بار آورده و بارها در برابر تروریستها تسلیم شده اند و در بسیاری موارد حتی حق تیراندازی هم ندارند و گفته می شود که همین امر باعث تسلیمشان در برابر تروریستها می شود.

اکنون صدها تن از نیروهای دولتی دیگر مایل نیستند سرکارشان باز گردند و بسیاری از سربازان به محض گرفتن مرخصی های معمول فرار می کنند و این مناطق، سراسر پاکستان را نیز ناامن کرده اند.

تنها منطقه ای که هم آرام است و هم شورش و طغیان علیه دولت مرکزی نمی کند و هم سربازانش در برابر شورش‌ها و نا آرامی ها قابل اعتماد ترین نیروها در سطح پاکستان می باشند، پاراچنار است که در اینجا همان نیروهای دولتی علنا در صف تروریستها قرار می گیرند و این منطقه را نا آرام می کنند.


موضوعات مرتبط: شيعيان پاكستان

تاريخ : Sat 17 Nov 2007 | 10 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

صدر مشرف کی گیارہ نومبر کی تقریر کے بعد سے ابتک بہت سارا پانی پل کے نیچے سے گزرچکا ہے بلکہ ابتک گزررہا ہے اور اس وقت تک اسی سرعت سے گزرتا رہے گا جب تک ایمرجنسی کا اونٹ کسی کروٹ بیٹھ نہیں جاتا۔

ویسے جناب صدر نے سنیٹ کے چیئرمین میاں محمد سومرو کو نگراں وزیراعظم مقرر کردیا ہے اور انکی قیادت میں ایک چوبیس رکنی کابینہ نے حلف بھی اٹھالیا ہے۔حزب اختلاف کے رہنماؤں نے اس حکومت کو تسلیم کرنے سے انکار کردیا ہے اور محترمہ بینظیر نے تو نگراں کابینہ کی پی سی او کے تحت حلف برداری کو غداری سے تعبیر کیا ہے۔

صدر کے اس اقدام سے اندازہ ہوتا ہے کہ وہ بھی مصالحت کے موڈ میں نہیں ہیں بلکہ حزب اختلاف کوللکار رہے ہیں کہ ہم تو اپنی سی کریں گے آپ جو کچھ کرسکتے ہیں کرلیں۔

میں سمجھتا ہوں یہ زمانے میں پنپنے والی باتیں نہیں ہیں۔ ممکن ہے صدر محترم کو وکلاء، صحافیوں اور سیاسی جماعتوں کے احتجاج میں کچھ دم خم محسوس نہ ہوتا ہو لیکن یہ تو انکو یقینی اندازہ ہوگا کہ وہ اب عوام میں اتنے مقبول نہیں ہیں جتنے کہ 12 اکتوبر 1999 کے روز تھے۔

میں سمجھتا ہوں کہ انہیں تصادم کے بجائے مصالحت کا راستہ اختیار کرنا چاہیے اس لئے کہ وہ اقتدار میں رہیں یا مستعفی ہونے کا فیصلہ کریں باعزت طریقہ مصالحت کا ہی ہے۔ادھر یہ اطلاع بھی ہے کہ جیو ٹی وی چینل کی عالمی نشریات بھی بند کردی گئی ہیں اور یہ پاکستان کی حکومت کے دباؤ کے تحت کیا گیا ہے۔



تاريخ : Sat 17 Nov 2007 | 10 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |

سکردو ہر شخص کی کسی سیاسی پارٹی سے وابستگی ہوتی ہے لیکن جنون کی حدتک اپنا سب کچھ داﺅ پر رکھ کر دین ایمان کو فراموش کر کے سیاسی پارٹیوں کے ساتھ وابستگی رکھنا دانشمندی نہیں مذہبی اقدار اور قومی تشخص کی پاسداری ہر موقع پر ضروری ہے جولوگ دین ایمان کو بھول کر کسی سیاسی جماعت کو ہی اپنا محور مرکز سمجھتے ہیں روز قیامت ایسے لوگوں کو انہی سیاسی قائدین کے ساتھ کھڑا کیا جائے گا اگر کسی کا قبلہ درست نہ ہو تو ان کی نجات پانا مشکل ہے ہمیں چائیے کہ دین ایمان کو اپنا محور مرکز اور محمد سے اپنی وابستگی مضبوط رکھیں ان خیالات کا ظہار نامور عالم دین شیخ محمد حسن جعفری نے جمعة المبارک کے عظیم الشان اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا موصوف نے مسلمانوں پر زور دیتے ہوئے کہا کہ وہ باہمی اتحاد اتفاق کے جذبے کو مزید تقویت دیں امامیہ جامع مسجد کی تعمیراتی منصوبے کے حوالے سے شیخ محمد حسن جعفری نے کہا کہ لوگوں نے جس عقیدت اور جذبے کے ساتھ عظیم منصوبے کی تکمیل کے لیے ہماری معاونت کی ہے وہ بے مثال ہے سکردو ٹاﺅن ایریا کے عوام ،اور بلتستان بھرکے عوام مردوزن ،نے اس سلسلے میں تن،من ،دھن کی قربانیاں دی ہیں اس اہم دینی مرکز کی تعمیر میں جن جن لوگوں نے اپنا حصہ ڈالا ہے پروردگار عالم انہیں اجر عظیم عطا کرے گا سیاچن سے لے کر کراچی تک کے بلتستانی بھائیوں اور دیگر علاقوں کے عوام نے اس عظیم منصوبے کے لیے اپنی بساط کے مطابق معاونت کی ہے جولوگ نیکی کے کاموں میں ایک دوسرے کے ساتھ تعاون کریں وہی فلاح پائےں گے گا ظاہری دولت کی نمود نمائش سے کچھ حاصل نہیں ہوگا اہل ایمان کو چائیے کہ وہ مزید نیک کاموں کے لیے آگے بڑھیں۔



تاريخ : Sat 17 Nov 2007 | 10 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |
پاکستان کے قیام کے ساٹھ برسوں میں تین صدور اور تین وزراء اعظم سمیت اہم سیاسی شخصیات پر قاتلانہ حملے ہوئے۔ ان قاتلانہ حملوں میں ایک صدر اور ایک وزیراعظم ہلاک ہوئے جبکہ دیگر بال بال بچ گئے۔
قیام پاکستان کے بعد چار برس بعد ہی ملک کے پہلے وزیر اعظم کو قتل کردیا گیا۔ لیاقت علی خان کو سولہ اکتوبر سنہ انیس سو اکیاون میں اس وقت گولی مار کرکے ہلا ک کیا گیا جب وہ راولپنڈی کے کمپنی باغ میں ایک جلسہ عام سے خطاب کررہے تھے۔

صدر جنرل ایوب خان ملک کے پہلے صدر تھے جن پر قاتلانہ حملہ ہوا۔ صدر جنرل ایوب پر آٹھ نومبر سنہ انیس سو اڑسٹھ میں پشاور یونیورسٹی میں خطاب کے دوران فائرنگ کرکے ان کو ہلاک کرنے کی کوشش کی گئی تاہم صدر ایوب اس قاتلانہ حملے میں محفوظ رہے۔

صدر جنرل ضیاء الحق پاکستان کے دوسرے صدر تھے جن پر قاتلانہ حملے ہوئے تاہم ان کی ہلاکت سترہ اگست سنہ انیس سو اٹھاسی میں فوجی طیارے کی تباہی سے ہوئی۔ اس حادثہ سے صدر جنرل ضیاء الحق کے علاوہ اعلیْ فوجی افسر اور پاکستان میں امریکہ کے سفیر بھی ہلاک ہوگئے۔

 

سابق وزیر اعظم بینظیر بھٹو کے بھائی میر مرتضی بھٹو بھی اپنی بہن کے دورے حکومت میں گولی لگنے سے ہلاک ہوئے۔ میر مرتضیٰ بھٹو بیس ستمبر انیس سو چھیانوے کو اپنے سات ساتھیوں سمیت پولیس فائرنگ سے اپنے آبائی اقامت گاہ سترہ کلفٹن کے باہر ہلاک ہوئے تھے۔

نواز شریف ملک کے دوسرے وزیر اعظم تھے جن پر اس وقت قاتلانہ حملہ ہوا جب وہ لاہور کے نواحی علاقے رائے ونڈ میں واقع اپنے فارم پر جارہے تھے اور ان کے راستے میں ایک پل کے نیچے رکھا گیا بم ان کی گاڑی گزرنے کے بعد پھٹا اور اس طرح نواز شریف محفوظ رہے۔

صدر جنرل پرویز مشرف پر دسمبر سنہ دوہزار تین میں یکے بعد دیگرے دو انتہائی خطرناک حملے ہوئے۔ تاہم صدر مشرف معجزانہ طور پر محفوظ رہے۔

صدر جنرل مشرف پر پہلا حملہ چودہ دسمبر سنہ دو ہزار تین کو راولپنڈی کے جھنڈا چیچی پل پر ریموٹ کنٹرول بم سے کیا گیا تھا لیکن صدر کے قافلے کی گاڑیوں میں نصب شدہ ’سگنل سینسرنگ‘ آلات کی وجہ یہ بم اس وقت نہیں پھٹ سکا تھا جب گاڑیاں پل سے گزر رہی تھیں۔

اس واقعہ کے دس دنوں بعد صدر مشرف پرپچیس دسمبر کو دوسرا حملہ کیا گیا اور ان کو خودکش حملہ کے ذریعےہلاک کرنے کی کوشش کی گئی۔ راولپنڈی میں صدر جنرل پرویز مشرف کے قافلے پر اس خطرناک خود کش حملے میں کم از کم چودہ افراد ہلاک اور چھیالیس زخمی ہوگئے ہیں۔ صدر مشرف کے قافلے پر دو مختلف اوقات پر دو گاڑیوں سے حملہ کیا گیا۔ یہ گاڑیاں دو پیٹرول سٹیشنوں سے باہر نکلی تھیں۔ اس حملے میں صدر مشرف بال بال بچ گئے۔

وزیر اعظم شوکت عزیز پر بھی تیس جولائی سنہ دو ہزار چار میں ان کی انتخابی مہم کے دوران ایک قاتلانہ حملہ ہوا جس میں وہ محفوظ رہے۔ تاہم اس حملے میں چھ افراد ہلاک ہوئے۔

 


شوکت عزیز اٹک میں اپنی انتخابی مہم کے دوران فتح جنگ کےقریب ایک انتخابی جلسہ سے خطاب کر کے باہر آ رہے تھےکہ جلسہ گاہ سے کچھ فاصلے پر ان کی گاڑی کے قریب ایک زور دار دھماکہ ہوا۔

چیف جسٹس پاکستان جسٹس افتخار محمد چودھری بھی اس سال سترہ جولائی کی شام اسلام آباد ڈسٹرکٹ بار میں ہونے والے وکلاء کنونشن کے پنڈال کے قریب ہونے والے دھماکے میں بال بال بچے۔ جسٹس افتخار محمد چودھری اپنی معطلی کے دوران ایک جلوس کی شکل میں وکلا کنونشن میں خطاب کے لیے آرہے تھے اور ان کا قافلہ جلسہ گاہ سے کچھ فاصلے پر تھا جب پنڈال میں بم دھماکا ہوا۔ اس دھماکے میں کم از کم پندرہ افراد ہلاک اور اسی کے قریب زخمی ہوگئے تھے۔ اس بم دھماکے میں ہلاک ہونے والوں میں پیپلز پارٹی کے کارکن بھی شامل تھے۔

سابق وزیر اعظم بینظیر بھٹو کی اٹھارہ اکتوبر کو آٹھ برسوں کی جلاوطنی کے بعد ملک میں واپسی پر ان کے استقبالیہ جلوس میں خودکش حملے میں ایک سوانتالیس افراد ہلاک اور سینکڑوں زخمی ہوئے۔ یہ دھماکہ بینظیر بھٹو کے ٹرک سے کچھ فاصلے پر ہوئے۔ تاہم بینظیر بھٹو اس انتہائی خطرناک حملے میں محفوظ رہیں۔

 

موضوعات مرتبط: آشنایی با پاکستان

تاريخ : Fri 26 Oct 2007 | 10 PM | نویسنده : محمد نظیر عرفانی |
.: Weblog Themes By VatanSkin :.